1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

گرین لینڈ شارک، ریڑھ کی ہڈی والے جانوروں میں طویل ترین عمر کی حامل

ایک حالیہ تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ ریڑھ کی ہڈی کے حامل جانوروں میں سب سے طویل عمر پانے والا جانور شمالی بحرِ اوقیانوس میں پائی جانے والی گرین لینڈ شارک ہے۔

Grönlandhai

سرمئی شارک شمالی بحرِ اوقیانوس کے سرد پانیوں میں تیرتے ہوئے ایک گھنٹے میں صرف دو اعشاریہ چھ کلو میٹر کا ہی فاصلہ طے کر پاتی ہے

دنیائے حیوانیات میں غیر معمولی لمبی عمر پانے والے اس آبی جانور کے بارے میں کچھ باتیں اب بھی حیران کن ہیں۔ مثلاً یہ کہ کیا واقعی گرین لینڈ خطے کی شارک 150 سال کی عمر میں جنسی بالیدگی کو پہنچتی ہے؟

گرین لینڈ شارک جسے سرمئی شارک بھی کہا جاتا ہے، عجیب و غریب جانور ہے۔ دو اعشاریہ پانچ ٹن وزن، اوسطاﹰ پانچ میٹر سے زیادہ طویل اور تارپیڈو کی شکل کی اس مچھلی کا ڈھانچہ کرکری ہڈی کا ہوتا ہے۔

یہ امر بھی دلچسپی کا باعث ہے کہ سرمئی شارک شمالی بحرِ اوقیانوس کے سرد پانیوں میں ناقابل یقین حد تک سست رفتاری سے تیرتے ہوئے ایک گھنٹے میں صرف دو اعشاریہ چھ کلو میٹر کا ہی فاصلہ طے کر پاتی ہے۔ شاید آہستہ روی سے تیرنے کی یہی کفایت شعارانہ حکمت عملی شارک کی غیر معمولی طویل عمر کی وجہ بھی ہے۔

یونیورسٹی آف کوپن ہیگن میں بین الاقوامی محققین کی ایک تازہ تحقیق کے مطابق گرین لینڈ شارک مچھلیاں ریڑھ کی ہڈی رکھنے والے کسی بھی جانور سے زیادہ عمر پاتی ہیں۔ اس تحقیق کے نتائج کو طبی جریدے سائنس کے تازہ شمارے میں شائع کیا گیا ہے۔

محققین نے کئی بار کی مہم جوئی کے بعد پکڑی گئی اٹھائیس مادہ شارک مچھلیوں کا معائنہ کیا تو معلوم ہوا کہ ان کی اوسط عمر دو سو بہتر سال تھی۔ تاہم ان میں سب سے بڑی اچھی خاصی عمر کی تھی۔ تقریباﹰ تین سو بانوے سال عمر کی۔

Global Ideas Bild der Woche KW 32 Grönland Hai SPERRFRIST BEACHTEN

’انٹرنیشنل یونین فار کنزرویشن آف نیچر‘ نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ گرین لینڈ شارک کی بقا کو خطرات لاحق ہیں

اس مطالعاتی جائزے کے مطابق سرمئی شارک اس وقت تک افزائش نسل کے قابل نہیں ہوتی جب تک کہ یہ چار میٹر کی لمبائی کو نہ پہنچ جائے اور ایسا ہونے میں کم و بیش ایک سو پچاس برس لگتے ہیں۔ ویسے بھی ان میں نمو بہت آہستہ روی سے ہوتی ہے۔

’انٹرنیشنل یونین فار کنزرویشن آف نیچر‘ نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ گرین لینڈ شارک کی بقا کو خطرات لاحق ہیں۔ اس تناظر میں سب سے بڑا مسئلہ یہ ہے کہ اکثر اوقات یہ ماہی گیروں کے جال میں پھنس جاتی ہیں۔ اگر یہ زیادہ تعداد میں پکڑ لی جائیں اور اس تناسب سے مناسب وقت کے اندر نئی گرین لینڈ شارک پیدا نہ ہو سکیں تو ان کی نسل معدوم ہونے کے خدشات جنم لے سکتے ہیں۔

DW.COM