1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

گاندھی کی’ ہم جنس پرستی‘ سے متعلق تنازعہ

امریکی مصنف جوزف لیلیویلڈ نے کہا ہے کہ بھارت کے معروف رہنما گاندھی سے متعلق ان کی کتاب کے اقتباسات کو غلط رنگ دیا جا رہا ہے۔

default

گاندھی کو بھارت میں مہاتما کا رتبہ دیا جاتا ہے اور ان کی شہرت عالمگیر سطح کی ہے

امریکی مصنف جوزف لیلیویلڈ کی کتاب ’گریٹ سول، مہاتما گاندھی اینڈ ہز اسٹرگل‘ پر چھپے امریکی اور برطانوی اخباروں میں تبصروں پر بھارت میں زبردست احتجاج کیا گیا ہے۔

برطانوی اخبار ’ڈیلی میل‘ نے کتاب پر اپنے تبصرے کو عنوان کچھ یوں دیا: ’گاندھی نے ایک مرد عاشق کے لیے اپنی بیوی کو چھوڑ دیا تھا، کتاب کا دعویٰ‘۔ تاہم کتاب کے مصنف کا کہنا ہے کہ انہوں نے اپنی کتاب میں گاندھی کو ہر گز نسل پرست یا ہم جنس پرست نہیں کہا۔

Großbritannien Indien Mahatma Gandhi in London

گاندھی نے کچھ عرصہ جنوبی افریقہ میں بھی گذارا تھا

یہ کتاب بہرحال گاندھی کی زندگی کے اس حصے کا احاطہ کرتی ہے، جب وہ ہندوستان جانے سے قبل جوہانسبرگ میں دو برس کے لیے مقیم تھے اور اس کتاب کے مطابق وہ وہاں ایک جرمن ماہر تعمیرات اور باڈی بلڈر ہیرمن کالن باخ کے ساتھ رہ رہے تھے۔

مثلاً کتاب میں گاندھی کے کالن باخ کے نام ایک خط کا اقتباس شائع کیا گیا ہے جس میں وہ کہتے ہیں: ’تم نے میرے جسم پر مکمل طور پر قابو پا لیا ہے۔ یہ ایک انتقامی غلامی کی طرح ہے‘۔

تاہم جوزف لیلیویلڈ کا کہنا ہے کہ اخبارات میں ان کی کتاب کے اقتباسات کو توڑ مروڑ کر پیش کیا گیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ انہوں نے کتاب میں کہیں بھی لفظ ’ہم جنس پرست‘ استعمال نہیں کیا۔

بھارت میں اس کتاب پر سخت تنقید کی گئی ہے۔ گاندھی کے پوتے تشار گاندھی نے کتاب پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ مغربی مصنفین کو گاندھی کی جنسی زندگی سے کچھ زیادہ ہی دلچسپی ہے۔

گاندھی پر تحقیق کرنے والے بہت سے بھارتی اور مغربی محققین نے کہا ہے کہ گاندھی کی ’ہم جنس پرستی‘ سے متعلق کوئی شواہد نہیں ہیں اور اگر ایسا ہوتا تو اس بارے میں کافی مواد موجود ہوتا۔

رپورٹ: شامل شمس ⁄  خبر رساں ادارے

ادارت: مقبول ملک

DW.COM