1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

'کیمیکل علی' کوچوتھی مرتبہ سزائے موت

عراق میں صدام حسین کے دور حکومت میں اعلیٰ اہلکار علی حسین الماجد المعروف کیمیکل علی کو ایک عراقی عدالت نے کردوں کے خلاف زہریلی گیس کے استعمال کے احکامات جاری کرنے پر سزائے موت سنا دی ہے۔

default

یہ چوتھا موقع ہے کہ کہ انہیں کوئی جرم ثابت ہو جانے پر سزائے موت سنائی گئی ہے۔ اس سے قبل انہیں سن 1991ء سے سن 1999ء تک شیعہ مسلمانوں کے قتل عام اور 80 ءکی دہائی میں کردوں کی نسل کشی کے جرائم پر سزائے موت سنائی جا چکی ہے۔

Chemie-Ali, Ali Hassan al-Madschid

کیمیکل علی کے احکامات پر کرد علاقے میں زہریلی گیس سپرے کی گئی تھی

یہ تازہ ترین سزا انہیں سن 1988ء میں کرد علاقے ہلابجہ میں زہریلی گیس سے حملے کے احکامات جاری کرنے پر دی گئی۔ اس حملے میں پانچ ہزار افراد ہلاک ہوئے تھے، جن میں سے اکثریت عورتوں اور بچوں کی تھی۔ اس واقعے میں عراقی طیاروں نے ہلابجہ کے علاقے میں پانچ گھنٹے تک انسانی اعصاب پر حملہ کرنے والی زہریلی گیس کا مسلسل سپرے کیا تھا۔

الماجد سابق عراقی ڈکٹیٹر صدام حسین کے کزن ہیں اور اس واقعے کے بعد انہیں کیمیکل علی کے نام سے پکارا جانے لگا تھا۔ ایک عراقی ٹی وی چینل العراقیہ کے مطابق علی حسین الماجد کو پھانسی دی جائے گی۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق اس مقدمے کی سماعت کے دوران اعلیٰ عدالت نے سابق وزیردفاع سلطان ہاشم کو پندرہ برس کی سزا کے احکامات سنائے۔ صدام حسین کے دورحکومت میں کردوں کے خلاف اٹھائے جانے والے اقدامات میں زہریلی گیس کے ذریعے شہریوں کو ہلاک کرنے کا یہ ایک ایسا واقعہ ہے، جس میں سب سے زیادہ افراد کی ہلاکت ہوئی تھی اور کرد شہری ایک عرصے سے اس واقعہ کے پیچھے کارفرما افراد کے لئے سخت ترین سزا کا مطالبہ کر رہے تھے۔

Prozess in Bagdad, Irak 11.03.2009 Ali Hassan el Madschid

الماجد کو اس سے قبل بھی تین مرتبہ سزائے موت کے احکامات سنائے جا چکے ہیں

عدالت نے الماجد کے خلاف فیصلہ سنایا تو عدالت کے باہر کردوں نے خوشی کا بھرپور اظہار کیا۔ سزا میں الماجد کو اپیل کا حق نہیں دیا گیا ہے تاہم چہ میگوئیاں کی جارہی ہیں کہ انتظامیہ اس سزا کی تکمیل میں تاخیر سے کام لے سکتی ہے۔

الماجد کو عراق پر حملے کے پانچ ماہ بعد امریکی فوجیوں نے گرفتار کیا تھا۔ انہیں پہلی مرتبہ سن 2007ء میں کردوں کے خلاف فوجی اقدامات اٹھانے پر سزائے موت سنائی گئی تھی۔ دوسری بار سن 2008ء میں عراق میں شیعہ مسلمانوں کو کچلنے اور ان کا قتل عام کرنے کا جرم ثابت ہوجانے پر اُن کے لئے سزائے موت کے احکامات جاری کئے گئے۔ گزشتہ برس مارچ میں اُنہیں ایک اور مقدمے میں بغداد کے علاقے صدر میں شیعہ اقلیت کے قتل عام کے ایک واقعے کے جرم میں سزا سنائی گئی تھی۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : امجد علی

ملتے جلتے مندرجات