1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

کیا یورپ میں مہاجرت کا بحران کبھی ختم ہو گا؟

یورپی یونین کو مہاجرت کے بحران کے حل میں کئی رکاوٹوں کا سامنا ہے۔ ایک طرف تو بعض رکن ممالک مہاجرکوٹہ سسٹم کے شدید مخالف ہیں تو دوسری جانب ترکی کے ساتھ مہاجرین کے حوالے سے معاہدہ بھی خطرے میں پڑتا نظر آتا ہے۔

Mittelmeer Flüchtlinge Rettungsaktion (Reuters/Marina Militare)

 سمندر میں تارکینِ وطن کی کشتیوں کے ڈوبنے کے کئی واقعات کے مناظر دل دھلا دینے والے تھے

بحیرہء روم میں مہاجرین کے سمندر میں ڈوبنے کے ڈرامائی مناظر سامنے آنے کے بعد ایک بار پھر یورپ کے کبھی ختم نہ ہونے والے بحران کی سنگین نوعیت زیرِ بحث ہے۔ اس کاا ندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ  صرف گزشتہ دو روز میں ہی دس ہزار چھ سو سے زائد تارکینِ وطن کو لیبیا کے ساحل سے کچھ فاصلے پر ڈوبنے سے بچایا گیا۔

 یورپ کو دوسری جنگِ عظیم کے بعد مہاجرین کے بد ترین بحران کا سامنا ہے۔ بین الاقوامی ادارہ برائے مہاجرت کے اعداد و شمار کے مطابق رواں برس تین لاکھ تارکینِ وطن بحیرہء روم کے راستے یورپ پہنچے۔ یہ تعداد سن دو ہزار پندرہ میں سمندر کے ذریعے یورپ پہنچنے والے پناہ گزینوں کی تعداد سے کم ہے لیکن سن دو ہزار چودہ میں بحیرہء روم پار کرنے والے دو لاکھ انیس ہزار مہاجرین کے مقابلے میں مجموعی طور پر زیادہ ہے۔

 اقوامِ متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کا کہنا ہے کہ جنوری سن دو ہزار پندرہ سے لے کر اب تک یورپ پہنچنے والے مہاجرین کی نصف تعداد شامی مہاجرین پر مشتمل ہے۔ بین الاقوامی ادارہء مہاجرت اور یو این ایچ سی آر کے اعداد و شمار کے مطابق سن دو ہزار چودہ سے اب تک دس ہزار سے زائد مہاجرین بحیرہء روم پار کرتے ہوئے ہلاک ہوئے۔

 سمندر میں تارکینِ وطن کی کشتیوں کے ڈوبنے کے کئی واقعات کے مناظر اس قدر دل دھلا دینے والے تھے کہ بین الاقوامی سطح پر ہر طرف سے اس بحران کے خاتمے کا مطالبہ کیا جانے لگا ہے۔ ستمبر سن دو ہزار پندرہ میں ترکی کے ایک ساحل پر ملنے والی ایک شامی بچے ایلان کردی کی لاش کی سوشل میڈیا پر شائع ہونے والی تصاویر سے حکومتوں کی نا اہلی کے خلاف غم و غصے کی لہر دوڑ گئی تھی۔

Italien Hafen von Palermo Anlandung Flüchtlinge Opfer Särge (Reuters/G. Mangiapane)

اٹلی کے ایک جزیرے پر تابوتوں کی قطاروں کی تصاویر نے دنیا بھر کی توجہ سانحے کی سنگینی کی جانب مبذول کروائی تھی

اکتوبر سن دو ہزار تیرہ میں بھی ایسا ہی کچھ معاملہ ہوا تھا جب ایک اطالوی جزیرے پر تین سو چھیاسٹھ مہاجرین کی لاشیں سمندر سے برآمد کی گئی تھیں اور تابوتوں کی قطاروں کی تصاویر نے دنیا بھر کی توجہ سانحے کی سنگینی کی جانب مبذول کروائی تھی۔ ان اموات کے بعد ہی اٹلی کی حکومت نے مہاجرین کوسمندر میں ڈوبنے سے بچانے کے لیے وسیع پیمانے پر امدادی آپریشنز کا آغاز کیا تھا۔

بد قسمتی سے یورپ اس بحران کے حل کی تلاش پر اختلافِ رائے کا شکار ہو گیا ہے۔ گزشتہ برس یورپی یونین کے بیشتر رکن ممالک نے مہاجرین کی منصفانہ تقسیم کے لازمی کوٹہ سسٹم کے حوالے سے ایک متنازعہ منصوبے کی منظوری دی تھی۔ اس کوٹے کے تحت اب تک محض اٹلی اور یونان سے ہی صرف چھ ہزار مہاجرین کو منتقل کیا گیا ہے جبکہ مشرقی اور وسطی یورپ کے ممالک نے اس منصوبے کی سختی سے مخالفت کی ہے۔

گزشتہ ہفتے ہنگری کے عوام نے ایک ریفرنڈم کے ذریعے کوٹا سسٹم کو بری طرح مسترد کر دیا تھا لیکن ووٹ کی شرح کم ہونے کے باعث اس ریفرنڈم کو باطل قرار دے دیا گیا ہے۔ اسی دوران یورپی یونین نے یونان اور اٹلی میں پناہ گزینوں کی رجسٹریشن کے لیے ’ہاٹ اسپاٹ‘ مراکز قائم کرنے کا منصوبہ بھی شروع کیا ہے تاکہ اقتصادی وجوہات کی بنا پر آنے والے اور جنگ زدہ علاقوں سے ہجرت کر کے آنے والے مہاجرین کے درمیان تمیز کی جا سکے۔

اُدھر ترک صدر رجب طیّب ایردوان نے رواں ہفتے یورپی یونین پر معاہدے کے تحت امداد کی مد میں دیے جانے والے تین بلین یورو کی فراہمی میں تاخیر کا الزام عائد کیا ہے۔ اور اس حوالے سے اب ترک یورپی یونین معاہدے کا استحکام کو بھی خطرات لاحق ہیں۔