1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

کیا تیل کی قیمت میں کمی سود مند ہے؟

تیل برآمد کرنے والے ملکوں کی تنظیم اوپیک کی طرف سے تیل کی پیداوار میں کمی کرنے کے فیصلے کے بعد ایشیائی منڈیوں میں خام تیل کی فی بیرل قیمت مزید کم ہوکر39,91 ڈالرہو گئی ہے۔

default

گذشتہ ساڑھے چارسال میں یہ تیل کی سب سے کم فی بیرل قیمت ہے۔ الجزائیر منعقدہ اجلاس میں اوپیک نے اپنی یومیہ پیداوارمیں 2,2 ملین بیرل کی کمی کرنے کا فیصلہ کیا۔ اسی حوالے سے Rolf Winkel کا لکھا تبصرہ:

عجیب بات ہے کہ اوپیک کی جانب سے تیل کی پیداوار میں کمی کا فیصلہ بھی قیمتوں میں اضافے کا سبب نہ بن سکا اوریہ قیمتیں مزید گرگئیں۔ یہ خبر موٹر گاڑیوں کے مالکان، فضائی کمپنیوں، سردیوں میں تیل سے ہیٹرچلانے والوں اور صنعتی اداروں، سب ہی کے لئے اچھی ہے۔ اگر یہ کہا جائے کہ تیل کی قیمتوں میں کمی پوری عالمی معیشت کے لئے ایک اچھی خبر ہے تویہ بھی غلط نہ ہو گا۔

Symbolbild Preis für Öl steigt auf neue Rekordhöhe

ماہرین کے مطابق تیل کی قیمتوں میں کمی کا براہ راست تعلق تیل کی طلب سے ہے

قیمتوں میں کمی کا براہ راست تعلق تیل کی طلب سے ہے۔ اور ساتھ ہی اس کا تعلق عالمی مالیاتی بحران سے بھی بنتا ہے۔ تیل کی گرتی ہوئی قیمت جہاں معیشی استحکام کا باعث بنتی ہے، وہیں یہ مالی بحران کی شدت کم کرنے میں مدد بھی دے گی۔ آجکل، جب دنیا بھرمیں لوگ اقتصادی بحران کی وجہ سے اخراجات میں کمی کررہے ہیں، ایسے میں تیل کی قیمتوں میں کمی ایک ڈھارس سے کم نہیں۔ ساتھ ہی یہی گرتی ہوئی قیمتیں افراط زر کو کم کرنے میں بھی مدد دیتی ہیں۔ یہی کم تر قیمتیں مرکزی بینکوں کے لئے، کرنسی کی قدر وقیمت کو کم رکھنے کا ہدف ترک کئے بغیر، سود کی شرح کو کم کرتے ہوئے مالی بحران کا مقابلہ کرنے کو ممکن بناتی ہیں۔ اس حوالے سے بھی تیل کی قیمتوں میں کمی ایک اچھی خبر ہے۔

دوسری جانب تیل کی قیمت میں کمی کے صرف فوائد ہی نہیں نقصانات بھی ہیں۔ اوپیک نے ایسا یونہی نہیں کہا کہ فی بیرل تیل کی قیمت 70 سے 80 امریکی ڈالرکے درمیان ہونی چاہیے۔ موجودہ صورتحال میں تقریبا فی بیرل 40 ڈالر قیمت تیل کی منڈی کو اس مجوزہ ہدف سے کافی دور رکھے ہوئے ہے۔ یہی وجہ ہے کہ تیل پیدا کرنے والے ملکوں کو زبردست نقصان کا سامنا ہے جس سے ان کی ترقی بھی متاثر ہو رہی ہے۔ ترقی میں پیش رفت نہ ہونے کا نتیجہ یہ ہو گا کہ تیل کی قیمتیں ایک بار پھر آسمان سے باتیں کرنے لگیں گی۔

Ölförderung in China

ہر سال دنیا بھر میں تیل کے تقریبا چھ فیصد کنوئیں تیل ختم ہوجانے کی بناء پر بند کر دیئے جاتے ہیں۔ نئے کنوؤں کی تلاش اورایسے ہی دیگر منصوبوں کے لئے اربوں ڈالر کی رقوم درکار ہوتی ہیں۔ تیل کمپنیوں کو خسارے کی وجہ سے آجکل اس شعبے میں سرمایہ کاری رکی ہوئی ہے کیونکہ تیل سے حاصل ہونے والی آمدنی ان ترقیاتی کاموں کے لئے کافی نہیں ہے۔ سستے تیل کو میٹھے زہرسے بھی تعبیر کیا جا سکتا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ موجودہ صورتحال میں اس شعبے میں ہونے والی تحقیق اور ترقی میں سرمایہ کاری کم ہوگئی ہے اور قابل تجدید توانائی کے حوالے سے اصلاحاتی پروگرام بھی متاثرہو رہے ہیں۔

یہ بات بھی قابل غور ہے کہ معیشی صورتحال کے ایک مرتبہ پھر مستحکم ہوتے ہی تیل کی مانگ میں اضافہ ہو گا اور صورتحال یکسربدل جائے گی۔ یہ قیاس آرائیاں بھی کی جا رہی ہیں کہ تیل کی قمیت ایک مرتبہ پھر رواں سال کے موسم گرما کی طرح 147 ڈالر فی بیرل تک پہنچ جائے گی۔

ان سب حقائق کو دیکھا جائے تو اوپیک کا یہ کہنا کہ تییل کی قیمت 70 سے 80 ڈالر کے درمیان ہونی چاہیے، غلط نہیں ہے۔ اس سے یہ ہو گا کہ تیل پیدا کرنے والے ممالک اور صارفین، کسی کے ساتھ زیادتی نہیں ہو گی۔ تقریبا ایک برس قبل انہی دنوں میں تیل کی قیمت نے100 ڈالرفی بیرل کی ریکارڈ سطح کوچھوا تھا۔ اب بھی، فکرمند ہونے کی کوئی ضرورت نہیں ہے، یہ وقت جلد ہی دوبارہ آئے گا!