1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کِم یونگ اِل کے بیٹے کو اہم عہدے سونپ دیے گئے

شمالی کوریا کے رہنما کِم یونگ اِل کے چھوٹے بیٹے کِم یونگ اُن کو حکمران جماعت ورکرز پارٹی کے دو اہم عہدے سونپ دیے گئے ہیں۔ پارٹی کے اجلاس کے موقع پر کِم یونگ اِل کو دوبارہ رہنما منتخب کر لیا گیا ہے۔

default

کِم یونگ اُن اپنے والد کے ساتھ

یہ فیصلے منگل کو پیونگ یانگ میں ورکرز پارٹی کے تاریخی اجلاس کے موقع پر سامنے آئے۔ ورکرز پارٹی نے 1980ء کے بعد پہلی مرتبہ کسی اجلاس کا اہتمام کیا ہے۔ کِم یونگ اُن کو سینٹرل ملٹری کمیشن کا نائب صدر بنانے کے ساتھ پارٹی کی سینٹرل کمیٹی میں بھی شامل کیا گیا ہے۔

شمالی کوریا کے سرکاری خبررساں ادارے کے سی این اے کے مطابق منگل کو اجلاس کے موقع پر کِم یونگ اِل کی بہن کو پولیٹیکل بیورو کی رکن مقرر کیا گیا جبکہ ان کے شوہر کو متبادل رکن بنا دیا گیا ہے۔ کمِ یونگ اِل کی بہن اور بہنوئی ہی ان کے بیٹے کِم یونگ اُن کے سب سے بڑے حمایتی قرار دیے جاتے ہیں۔

Nordkorea Kim Jong Il in Pyongyang

کِم یونگ اِل کو علیل قرار دیا جاتا ہے

پیر کو کِم یونگ اُن اور ان کی بہن کیونگ ہوئی کو جنرل مقرر کیا گیا تھا۔

پارٹی عہدوں پر کِم یونگ اُن کے تقرر کو کِم یونگ اِل کی جانب سے اقتدار پر اپنے خاندان کا اثر مضبوط کرنے کی کوشش کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔ یہ قیاس آرائیاں پہلے سے ہی جاری ہے کہ کِم یونگ اِل اپنے تیسرے بیٹے کِم یونگ اُن کو اپنا جانشین منتخب کر چکے ہیں۔

کِم یونگ اُن کے بارے میں زیادہ معلومات دستیاب نہیں۔ تاہم ان کی عمر تقریباﹰ 27 سال بتائی جاتی ہے جبکہ وہ سوئٹزرلینڈ سے تعلیم حاصل کر چکے ہیں۔

بتایا جاتا ہے کہ شمالی کوریا میں نیشنل ڈیفنس کمیشن کے ذریعے سیاسی عمل فوج چلاتی ہے۔ اس کمیشن کی قیادت کِم یونگ اِل کے پاس ہے۔ 68 سالہ اس رہنما کی صحت کی خرابی کے حوالے سے بھی چہ میگوئیاں جاری ہیں تاہم سرکاری طور پر اس کی تصدیق یا تردید نہیں کی جاتی۔

شمالی کوریا میں اقتدار کی باگ ڈور 1948ء سے کمِ یونگ اِل کے خاندان کی ہاتھ ہے۔ اس وقت اس کی بنیاد ان کے والد کِم ال سنگ نے رکھی تھی۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: عاطف بلوچ

DW.COM

ویب لنکس