1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کيا شام ميں قيامِ امن قريب ہے؟

شام کے ليے اقوام متحدہ کے خصوصی مندوب اسٹيفان ڈے مستورا نے کہا ہے کہ اس شورش زدہ ملک ميں دہشت گرد تنظيم اسلامک اسٹيٹ کو مکمل شکست اکتوبر تک اور پھر وہاں ايک سال ميں انتخابات کا انعقاد ممکن ہيں۔

اسٹيفان ڈے مستورا کے بقول شام ميں اسلامک اسٹيٹ کی بقيہ تمام پناہ گاہوں کی تباہی رواں برس اکتوبر تک ممکن ہے۔ انہوں نے يہ بيان جمعہ يکم ستمبر کے روز جنيوا ميں ديا۔ ان کا مزيد کہنا ہے کہ اس ممکنہ پيش رفت کے نتيجے ميں بين الاقوامی برادری کو يہ کوشش کرنی چاہيے کہ وہاں آئندہ ايک سال ميں شفاف اور آزاد انتخابات کا انعقاد ہو سکے۔ ايک برطانوی نشرياتی ادارے کو انٹرويو ديتے ہوئے شام کے ليے اقوام متحدہ کے خصوصی مندوب نے مزيد کہا، ’’ميرے نظريے ميں ہم اس جنگ کے اختتام کی ابتداء ديکھ رہے ہيں۔‘‘ اسٹيفان ڈے مستورا کے بقول اہم بات يہ ہے کہ يہ پيش رفت وہاں قيام امن کی شروعات بھی ثابت ہو اور يہی اصل چيلنج ہے۔   

اقوام متحدہ کے اس سينئیر عہديدار نے تازہ صورتحال بتاتے ہوئے کہا، ’’اب تک الرقہ، دير الروز اور ادلب ميں عدم استحکام کی صورت حال برپا ہے۔‘‘ ان کے بقول بين الاقوامی برادری اگر شامی حکومت اور اپوزيشن کو بامعنی مذاکرات اور کسی ڈيل کے ليے آمادہ کرنے ميں مدد فراہم کرے، تو ايک سال ميں وہاں قابل اعتماد اليکشن ممکن ہيں۔‘‘

شامی شہر دير الزور کئی عرصے سے اسلامک اسٹيٹ کے جنگجوؤں کے قبضے ميں ہے۔ مستورا نے بتايا کہ شامی اور روسی افواج اس ماہ سے اکتوبر کے اواخر تک اس شہر کو آزاد کرا سکتی ہيں۔ اسی طرح امکان ہے کہ امريکا اور اس کی حمايت يافتہ سيريئن ڈيموکريٹک فورسز الرقہ کو اکتوبر تک آزاد کرا ديں گی۔