1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

کيا انسانوں کے اسمگلر کسی نئے راستے کی تلاش ميں ہيں؟

بحيرہ روم کے ذريعے انسانی اسمگلنگ ميں ملوث گروہ لوگوں کو غير قانونی طريقوں سے يورپ پہنچانے کے ليے اِن دنوں مصر کے راستے کسی نئے روٹ کی تلاش ميں ہيں۔ يورپی يونين کو خدشہ ہے کہ اِس راستے سے شدت پسند بھی يورپ پہنچ سکتے ہيں۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کی برسلز سے موصولہ رپورٹوں کے مطابق انسانوں کی اسمگلنگ کے انسداد کے ليے ليبيا اور ترکی ميں جاری حاليہ کوششوں کے تناظر ميں بحيرہ روم کے خطے ميں سرگرم گروہ اِن دنوں مصر کے راستے کسی نئے روٹ کی تلاش ميں ہيں۔ مصر کے دوسرے سب سے بڑے شہر اسکندريہ ميں انسانوں کی اسمگلنگ ميں ملوث گروہ پچھلے دنوں سے کچھ زيادہ فعال ہو گئے ہيں۔ يورپی يونين کے ايک اہل کار نے اِسے ايک ’’بگڑتا ہوا مسئلہ‘‘ قرار ديتے ہوئے اِن خدشات کا اظہار کيا کہ مصر کے سينائی خطے ميں سرگرم اسلام پسند اِس روٹ کے ذريعے يورپ ميں اٹلی يا يونان پہنچ سکتے ہيں۔

واضح رہے کہ گزشتہ برس ايک ملين سے زائد تارکين وطن سياسی پناہ کی غرض سے يورپی بر اعظم پہنچے، جن ميں سے تقريباً اسی فيصد ترکی کے راستے يونان پہنچے جب کہ بقيہ ليبيا سے اٹلی تک پہنچے۔ مصر سے يورپ پہنچنے والوں کے بارے ميں اعداد و شمار دستياب نہيں۔ يورپی حکام کا کہنا ہے کہ ليبيا کی صورت حال ميں ابتری کے نتيجے ميں اسمگلروں کی کوشش ہے کہ افريقی اور مشرق وسطٰی سے تعلق رکھنے والے پناہ گزينوں کو مصری ساحلوں تک پہنچايا جائے۔ اگرچہ مصر سے يورپ تک پہنچنے کا راستہ مقابلتاً طويل ہے تاہم اسمگلر اِس بھروسے تارکين وطن کو مصر سے لے جاتے ہيں کہ بين الاقوامی سمندری حدود ميں پہنچتے ہی اُنہيں بچا ليا جائے گا۔

گزشتہ برس ايک ملين سے زائد تارکين وطن سياسی پناہ کی غرض سے يورپی بر اعظم پہنچے، جن ميں سے تقريباً اسی فيصد ترکی کے راستے يونان پہنچے

گزشتہ برس ايک ملين سے زائد تارکين وطن سياسی پناہ کی غرض سے يورپی بر اعظم پہنچے، جن ميں سے تقريباً اسی فيصد ترکی کے راستے يونان پہنچے

برسلز میں حکام اِن دنوں ترک حکومت کے ساتھ يہ بحث جاری رکھے ہوئے ہيں کہ ترکی سے مہاجرين کی غير قانونی طريقوں سے يورپ ہجرت کو کس طرح روکا يا محدود کيا جائے۔ ايسے ميں يورپی حکام اِس بارے ميں تشويش کا شکار ہيں کہ مصری حکومت انسانی اسمگلروں کے خلاف مناسب کارروائی نہيں کر رہی۔ چوں کہ مصر ايک شورش زدہ خطے ميں ايک اہم اتحادی ملک ہے، يورپی حکام امدادی اور تجارتی روابط کو بروئے کار لاتے ہوئے مصر پر دباؤ نہيں ڈالنا چاہتے۔

ايک اور يورپی اہل کار نے کہا، ’’ہميں اِس بات کی فکر ہے کہ اسمگلروں اور مہاجرين کے درميان سينائی ميں القاعدہ يا پھر داعش سے تعلق رکھنے والے جنگ جو بھی يورپ کا رخ کر سکتے ہيں۔‘‘ اُن کے بقول اگرچہ مصر ميں عموماً کنٹرول زيادہ سخت ہوتا ہے تاہم بعض اوقات حکام پناہ گزينوں کی کسی اور ملک منتقلی ممکن بنانے کے ليے اپنی آنکھيں بنی بھی کر ليتے ہيں۔ ايک مصری سکيورٹی اہل کار نے روئٹرز کو بتايا کہ حکومت آج کل ديگر مسائل ميں گھری ہوئی ہے۔

ملتے جلتے مندرجات