1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کویتی شہزادے سمیت سات افراد کو قتل کے جرم میں پھانسی

کویت میں شاہی خاندان کے ایک رکن سمیت سات مجرموں کو قتل کے جرم میں پھانسی دے دی گئی ہے۔ اس کویتی شہزادے نے اپنے ایک بھتیجے کو قتل کر دیا تھا۔ سزائے موت پانے والوں میں تین خواتین بھی شامل ہیں، جن میں سے دو غیر ملکی تھیں۔

Deutschland Galgen im Neanderthal Museum Mettmann (picture-alliance/dpa/R. Weihrauch)

قریب چار سال بعد یہ پہلا موقع ہے کہ کویت میں کسی مجرم کو سنائی گئی سزائے موت پر عمل درآمد کیا گیا ہے

خلیجی عرب ریاست کویت کے دارالحکومت کویت سٹی سے بدھ پچیس جنوری کو موصولہ نیوز ایجنسی ڈی پی اے کی رپورٹوں کے مطابق قریب چار سال بعد یہ پہلا موقع ہے کہ کویت میں کسی مجرم کو سنائی گئی سزائے موت پر عمل درآمد کیا گیا ہے۔

اس ریاست کے سرکاری خبر رساں ادارے کُونا نے بتایا کہ جن سات مجرموں کو آج پھانسی دے دی گئی، ان میں تین خواتین بھی شامل تھیں۔ ان خواتین میں سے ایک کویتی شہری تھی اور باقی دو میں سے ایک ایتھوپیا کی اور دوسری فلپائن کی ایک 42 سالہ شہری۔ ان تمام ساتوں افراد کو موت کی سزائیں ان کے خلاف مختلف مقامات پر مختلف واقعات میں قتل کا جرم ثابت ہو جانے پر سنائی گئی تھیں۔

کویت نیوز ایجنسی کے مطابق اس عرب ریاست میں حکمران شاہی خاندان کے جس رکن کو پھانسی دی گئی، اس کا نام شیخ فیصل الصباح تھا، جس نے اپنے ہی ایک بھیتجے کو قتل کر دیا تھا۔ سزائے موت پانے والے باقی تین مردوں میں سے دو مصری تھے اور ایک بنگلہ دیش کا ایک شہری۔

ان میں سے کویتی شہزادے اور دونوں مصری باشندوں کو قتل کے جرم میں تختہء دار پر لٹکا دیا گیا جبکہ سزائے موت پانے والا بنگلہ دیشی شہری قتل کے علاوہ چوری، اغوا اور ریپ جیسے جرائم کا مرتکب بھی ہوا تھا۔

ڈی پی اے نے لکھا ہے کہ خلیجی عرب ریاستوں میں ایسے واقعات بہت کم دیکھنے میں آتے ہیں کہ حکمران شاہی خاندانوں کے اراکین میں سے کسی نے بہت بڑے جرم کا ارتکاب کیا ہو اور پھر اسے سر قلم کر دیے جانے یا پھانسی کی صورت میں سزائے موت بھی دی گئی ہو۔

Kuwait City Skykine Wirtschaft Business Finanzsektor Architektur Wolkenkratzer (picture alliance/Robert Harding)

تمام ساتوں مجرموں کو پھانسی کویت سٹی کی ایک جیل میں دی گئی

شہزادہ شیخ فیصل الصباح کے بارے میں کُونا نے لکھا ہے کہ وہ اپنے بھتیجے شہزادہ باسیل الصباح کے گھر پر موجود تھا کہ دونوں کے مابین بظاہر کسی بات پر جھگڑا ہو گیا تھا اور اس دوران چیخنے چلانے کی آوازیں گھر کے ایک دوسرے کمرے میں موجود مہمانوں نے بھی سنی تھیں۔ اس جھگڑے کے دوران طیش میں آ کر پرنس فیصل نے پرنس باسیل کو بہت قریب سے فائرنگ کر کے قتل کر دیا تھا۔

قانونی ریکارڈ کے مطابق قاتل اور مقتول دونوں شہزادوں کے مابین جھگڑا گاڑیوں کی وجہ سے شروع ہوا تھا۔ مقتول باسیل الصباح اپنی عمر میں قاتل فیصل الصباح سے 20 سال بڑا تھا اور کویت موٹر ریسنگ کلب کا صدر تھا۔

کویت میں ان سات مجرموں کو بدھ کے روز دی جانے والی پھانسی مارچ 2013ء کے بعد اس ملک میں کسی مجرم کو سزائے موت دیے جانے کا پہلا واقعہ ہے۔ قریب چار سال قبل جن تین مجرموں کو پھانسی کے ذریعے سزائے موت دی گئی تھی، وہ بھی قتل کرنے کے مرتکب ہوئے تھے اور ان میں سے ایک کویتی تھا، دوسرا ایک سعودی باشندہ اور تیسرا ایک پاکستانی شہری۔

DW.COM