1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کوپن ہیگن کانفرنس: کیوٹو پروٹوکول کا متبادل ڈھونڈنے کی ایک کوشش

موسمیاتی تبدیلی کے موضوع پر اقوام متحدہ کے زیر اہتمام ڈنمارک کے دارالحکومت میں بین الاقوامی کانفرنس پیر کے روز شروع ہوئی۔ بارہ روزہ اس کانفرنس میں دنیا کے 192 ملکوں‍ کے تقریباً پندرہ ہزار مندوبین اور صحافی شریک ہیں۔

default

اس سمٹ میں عالمگیر ماحولیاتی تبدیلی اور زمینی درجہء حرارت پر قابو پانے سے متعلق کسی ایسے سمجھوتے پر راضی ہونے کی کوشش کی جائے گی، جو کیوٹو پروٹوکول کا متبادل بن سکے۔

اقوام متحدہ کے ایک اعلیٰ عہدے دار نے بتایا کہ اس سمٹ سے بہت ساری توقعات وابستہ ہیں۔ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون نے امید ظاہر کی ہے کہ عالمی رہنما اس سمٹ میں کسی نئے معاہدے پر راضی ہوسکتے ہیں۔ اس سمٹ کو گرین ہاوٴس گیسوں کے اخراج میں واضح حد تک کمی لانے اور مخصوص اہداف مقرر کرنے کے حوالے سے انتہائی اہمیت کا حامل سمجھا جا رہا ہے۔

Dänemark Klimakonferenz Kopenhagen Lars Lökke Rasmussen

ڈنمارک کے وزیر اعظم کوپن ہیگن کانفرنس میں

دوسری جانب سابق امریکی صدر بل کلنٹن نے کہا ہے کہ ماحولیاتی تبدیلی پر نئے معاہدے کے لئے یہ ضروری ہے کہ اسے ایک ’’معاشی موقع‘‘ کے طور پر بیچا جائے۔ کلنٹن نے کہا کہ اگر کوپن ہیگن کانفرنس کیوٹو پروٹوکول کا متبادل فراہم کرنے میں ناکام ہوتی ہے تو یہ انتہائی افسوس ناک بات ہوگی۔’’میں کوپین ہیگن کانفرنس کے حوالے سے تھوڑا بہت گھبرایا ہوا بھی ہوں تاہم ہم وہیں کریں گے جو حالات کا تقاضا ہے اور جو ہمیں کرنا چاہیے۔‘‘ بل کلنٹن نے مزید کہا کہ ضرر رساں گیسوں کے اخراج میں کمی سے متعلق جو اہداف سن 2012ء تک پورے کرنے تھے، اُن میں صرف چار ممالک کی کامیابی کی توقع ہے۔’’چوالیس امیر ممالک میں سے صرف برطانیہ، سویڈن، جرمنی اور ڈنمارک ہی ایسے ہیں، جو اپنے اہداف پورے کرتے نظر آرہے ہیں۔‘‘

کوپن ہیگن سمٹ میں 103 حکومتوں کے سربراہان کی شرکت متوقع ہے، جن میں امریکی صدر باراک اوباما اور جرمن چانسلرانگیلا میرکل بھی شامل ہیں۔

Dänemark Klimakonferenz Kopenhagen Demonstration

کانفرنس کے حوالے سےکوپن ہیگن شہر میں لگا ایک بینر

اُدھر امریکی حکومت کی طرف سے یہ اعلان سامنے آگیا ہے کہ گرین ہاوٴس گیس انسانی صحت کے لئے مضر ہے۔ بیشتر ماہر ماحولیات کوپن ہیگن کانفرنس کے موقع پر اس امریکی اعلان کو اہمیت کا حامل قرار دے رہے ہیں۔ لیکن بعض ماہرین کا خیال ہے کہ دانستہ طور پر یہ اعلان ایک ایسے موقع پر سامنے آیا ہے جب کوپن ہیگن کانفرنس شروع ہوگئی۔ ان ماہرین کے مطابق اس اعلان کی ٹائمنگ سے صاف پتہ چلتا ہے کہ امریکہ دنیا کو یہ بتا دینا چاہتا ہے کہ وہ ماحولیاتی تبدیلی کے حوالے سے سنجیدہ ہے۔

کیوٹو پروٹوکول سن 1997ء میں عمل میں آیا تھا لیکن اُس وقت کے امریکی صدر جارج بش نے اس معاہدے پر دستخط نہیں کئے تھے۔

بارہ روزہ عالمی ماحولیات کی کوپین ہیگن کانفرنس اٹھارہ دسمبر کو اختتام پذیر ہو گی۔

رپورٹ : گوہر نذیر گیلانی

ادارت: عابد حسین