1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کولکتہ کے ہسپتال میں آگ، نواسی افراد ہلاک

بھارت کے مشرقی شہر کولکتہ کے ایک ہسپتال میں آج جمعے کو لگنے والے آگ کے نتیجے میں حکام نے 61 افراد کے ہلاک ہو جانے کی تصدیق کی ہے۔

default

ریاست مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ ممتا بینر جی نے نواسی ہلاکتوں کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ مرنے والوں میں ممکنہ طور پر بہت سے مریض بھی شامل ہیں جو اس ہسپتال میں زیر علاج تھے اور دھوئیں کے باعث دم گھٹنے کے نتیجے میں ہلاک ہوئے۔

کولکتہ سے ملنے والی رپورٹوں کے مطابق وزیر اعلیٰ ممتا بینرجی نے بتایا کہ اب تک کم از کم 61 لاشیں نکالی جا چکی ہیں۔ انہوں نے کہا، 'مجھے مرنے والوں کی تازہ ترین اور اصل تعداد کا علم نہیں لیکن یہ تعداد کافی زیادہ ہے۔'

Indien Kalkutta Brand in Pflegeheim

سرکاری ذرائع کے مطابق AMRI نامی اس پرائیویٹ ہسپتال میں یہ آگ اب تک نامعلوم وجوہات کی بنا پر جمعرات اور جمعے کی درمیانی رات کو لگی۔ خبر ایجنسی اے ایف پی نے امدادی کارکنوں کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا ہے کہ علی الصبح تین بجے یہ آگ اس ہسپتال کی بیسمنٹ سے شروع ہوئی، جس کے بعد فائر بریگیڈ کی بہت سی گاڑیاں اور امدادی کارکن موقع پر پہنچ گئے۔ مقامی وقت کے مطابق صبح نو بجے تک اس آگ پر زیادہ تر قابو پایا جا چکا تھا۔ گہرے دھوئیں کے باعث ریسکیو آپریشن میں مشکلات پیش آئیں۔ عمارت کے اندر سے لاشیں ڈھونڈنے کا عمل ابھی جاری ہے۔

ہسپتال انتظامیہ کے مطابق آتشز دگی کے وقت ہسپتال میں 160 مریض موجود تھے۔ ایک سرکاری عہدیدار نے بتایا کہ اِس کئی منزلہ عمارت میں زیادہ تر عمر رسیدہ افراد زیر علاج تھے۔ فائر بریگیڈ کے عملے نے اِس عمارت کی کھڑکیوں کے شیشے توڑ کر رسوں اور کرینوں کی مدد سے پہلی اور دوسری منزل سے لوگوں کو بچایا۔ کئی گھنٹوں کی کوشش کے بعد آگ پر قابو پا لیا گیا ہے۔

Indien Kalkutta Brand in Pflegeheim

آگ عمارت کے تہہ خانے میں لگی اور دھوئیں نے دیکھتے ہی دیکھتے پوری عمارت کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ ممتا بینر جی کے مطابق زیادہ ہلاکتیں دم گھٹنے سے ہوئیں ہیں۔ وزیر اعلیٰ نے ذمہ دار افراد کے خلاف سخت ایکشن لینے کا بھی عندیہ دیا ہے۔ آگ لگنے کی وجہ معلوم نہیں ہو سکی ہے۔

حکام کا خیال ہے کہ ہسپتال میں یہ آگ بیسمنٹ میں پڑے آکسیجن سلنڈرز اور دیگر ایسے سامان کے باعث لگی۔

رپورٹ: عصمت جبیں

ادارت: ندیم گِل

DW.COM