1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کولمبیا صدارتی انتخابات کا دوسرا مرحلہ، سانتوس کی غیر معمولی جیت

کولمبیا کے سابقہ وزیردفاع اورحکمران پارٹی کے امیدوارخوان مانوئیل سانتوس نے صدارتی انتخابات کے دوسرے مرحلے میں بھاری اکثریت سے کامیابی حاصل کر لی ہے۔

default

حکمران پارٹی کے امیدوارخوان مانوئیل سانتوس

حکمران پارٹی کے امیدوارخوان مانوئیل سانتوس لاطینی امریکی ممالک میں واشنگٹن کے اہم اتحادی اور کولمبیا کے سابقہ صدر الورو اُوریبی کی جگہ صدارت کا عہدہ سنبھالیں گے۔

Kolumbien Wahlen Präsident Alvaro Uribe

الورو اُوریبی دو مرتبہ صدر کے عہدے پر فائز ہوئے

قدامت پسند اُوریبی کی حمایت کے باعث سانتوس 69 فیصد ووٹ حاصل کرنے میں کامیاب ہوئے جبکہ ان کے حریف آنتانس موکوس صرف 27.6 فیصد ووٹ حاصل کر سکے۔ گرین پارٹی سے تعلق رکھنے والے سیاستدان موکوس نے اپنی شکست تسلیم کرلی ہے۔

اس کامیابی کے بعد سانتوس نے عہد کیا ہے کہ وہ سابقہ صدراُوریبی کی پالیسیوں کا تسلسل جاری رکھیں گے۔ الورو اُوریبی دو مرتبہ صدارت کے عہدے پر فائز ہوئے اور اب بھی وہ کولمبیا کے عوام میں نہایت مقبول سمجھے جاتے ہیں۔ اُوریبی کی خواہش تھی کہ وہ تیسری مرتبہ بھی صدر کے عہدے پر براجمان ہوں اور اس لئے انہوں نے ملکی آئین میں تبدیلی تجویز کی تھی تاہم ملکی آئینی عدالت نے ایسی کسی بھی تبدیلی کو غیر آئینی قرار دے دیا تھا۔

سوشل نیشنل یونٹی پارٹی کے رکن سانتوس نے ان انتخابات میں 8.8 ملین ریکارڈ ووٹ حاصل کئے۔ اس سے قبل کسی بھی صدر نے اتنے زیادہ ووٹ حاصل نہیں کئے ہیں۔ تیس نومبر کے صدارتی انتخابات میں سانتوس نہایت معمولی فرق کی وجہ سے پچاس فیصد مطلوبہ اکثریت حاصل کرنے میں ناکام ہو گئے تھے، لیکن اس بار انہوں نے گزشتہ تمام ریکارڈ توڑ دئے۔

Kolumbien Wahlen 2010 Die Grünen Antanas Mockus

آنتانس موکوس نے شکست تسلیم کر لی ہے

سانتوس متوقع طورپراگست سے صدارت کا عہدہ سنبھال لیں گے۔ اس غیر معمولی کامیابی کے بعد اٹھاون سالہ سانتوس نے فیس بک پر اپنے حامیوں کو پیغام دیتے ہوئے لکھا: ’’ میں صرف یہ کہنا چاہتا ہوں کہ شکریہ ، شکریہ اور ہزار مرتبہ شکریہ۔‘‘

سانتوس کو بطور صدراس وقت کئی مسائل کا سامنا ہو گا، جن میں سیکیورٹی کے علاوہ اقتصادی ترقی جیسے معاملات شامل ہیں جو ان کی بنیادی ترجیحات بھی ہیں۔ انہوں نے وزیر خزانہ کے طور پر بھی کام کیا ہوا ہے، اس لئے ناقدین کا کہنا ہے کہ وہ ملکی معیشت کو مستحکم بنانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

رپورٹ : عاطف بلوچ

ادارت : شادی خان سیف

DW.COM