1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

کن فلم میلہ، محمد رسولوف کے لیے بہترین ڈائریکٹر کا ایوارڈ

ایران میں حکومت کے ناقد سمجھے جانے والے محمد رسولوف کو کن فلم فیسٹیول میں بہترین ڈائریکٹر کا ایوارڈ دے دیا گیا ہے۔ وہ ضمانت پر رہائی کی وجہ سے بیرون ملک نہیں جا سکتے، اسی باعث یہ ایوارڈ ان کی اہلیہ نے وصول کیا۔

default

رسولوف کو یہ ایوارڈ ان کی فلم ’بے امید دیدار‘ پر دیا گیا۔ ان کی اہلیہ نے یہ ایوارڈ ایک ایسے وقت میں وصول کیا ہے، جب یہ افواہیں بھی گردش کر رہی ہیں کہ طویل قید کی سزا کاٹنے والے فلمساز جلد ہی ملک سے باہر جانے کی اجازت حاصل کر لیں گے۔ رسولوف نے اپنی سزا کے خلاف اپیل دائر کر رکھی ہے۔

مسز رسولوف نے انعام وصول کرتے ہوئے، اپنے شوہر اور فلم ساز ٹیم کی جانب سے فیسٹیول منتظمین اور جیوری کا شکریہ ادا کیا۔ اس موقع پر مسز رسولوف نے خاکی رنگ کا ریشمی کوٹ جبکہ سر پر ڈھیلا ڈھالا سا سکارف پہن رکھا تھا۔

Lars Von Trier Regisseur Dänemark

ہٹلر اور نازیوں سے متعلق Lars von Trier کے بیان کے بعد فلم فیسٹول کی فضا میں تناؤ پیدا ہو گیا

سربیا سے تعلق رکھنے والے جیوری کے سربراہ Emir Kusturica نے یہ انعام مسز رسولوف کے حوالے کیا۔ بے امید دیدار فلم کی کہانی تہران کے ایک نوجوان وکیل پر مبنی ہے، جو ایران سے نکلنے کے لیے ویزے کے حصول کی کوششوں میں مصروف ہے۔ گزشتہ برس دسمبر میں رسولوف کو ایک اور فلم ڈائریکٹر جعفر پناہی کے ہمراہ حکومت مخالف فلمیں بنانے پر طویل سزا سنا دی گئی تھی، بعد میں انہیں ضمانت پر رہا کر دیا گیا تاہم ان کے ملک سے باہر جانے پر تاحال پابندی عائد ہے۔

ان دونوں فلم ڈائریکٹروں پر الزام عائد ہے کہ سن 2009ء میں ایران میں ہونے والے صدارتی انتخابات کے بعد یہ دونوں افراد صدر محمود احمدی نژاد اور ’نظام کے خلاف پروپیگینڈے‘ میں ملوث رہے ہیں۔

اس سے قبل ڈینش فلم ڈائریکٹر Lars von Trier کی طرف سے ایک پریس کانفرنس کے دوران ہٹلر اور نازیوں سے متعلق ایک متازعہ بیان کے بعد اس فلم میلے میں تناؤ کی سی کیفیت پیدا ہو گئی جبکہ von Trier پر دنیا کے اس مشہور فلم فیسٹیول میں شرکت پر پابندی بھی عائد کر دی گئی۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : عاطف بلوچ

DW.COM

ویب لنکس