1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کم جونگ ال کی آخری رسومات، شمالی کوریا اشک بار

کِم جونگ اِل کی آخری رسومات کے دوران نشر ہونے والی تصاویر کو دیکھ کر کوئی بھی یہ اندازہ نہیں لگا سکتا کہ شمالی کوریا پسماندہ اور بھوک کا شکار ملک ہے۔ اِل کے تابوت والی گاڑی کے ساتھ ان کے جانشین کم جونگ اُن بھی تھے۔

default

کِم جونگ اِل نے سترہ سال اس ملک پر حکومت کی اور اپنے جوہری پروگرام کی وجہ سے خطے کے دیگر ممالک کو پریشان کیے رکھا۔ ان کی آخری رسومات میں شمالی کوریا کی اشرافیہ اور عوام کی ایک بڑی تعداد نے بھی شرکت کی۔ کِم جونگ اِل کا تابوت جس وقت پیانگ یانگ کی سڑکوں سے گزارا جا رہا تھا تو ہزاروں کی تعداد میں شہری اطراف میں کھڑے تھے۔ یہ افراد اپنے رہنما کا آخری دیدار کرتے ہوئے زار و قطار رو رہے تھے۔

Nordkorea Trauerfeier Beisetzung Kim Jong Il

کم جونگ ال کی آخری رسومات بالکل ان کے والد کی طرز پر ادا کی گئیں

کم جونگ ال کی آخری رسومات بالکل ان کے والد کم ال سُنگ کی طرز پر ادا کی گئیں۔ ایک پرتعیش گاڑی میں تابوت، اس کے پیچھے آنے والی گاڑی کی چھت پر مرحوم صدر کی بڑی سی تصویر اور کاروں کا ایک بڑا سا قافلہ۔ اس موقع پر موجود افراد کی اشک باری سے یہ اندازہ لگایا جا سکتا تھا کہ وہ اپنے مرحوم صدر سے بہت لگاؤ رکھتے تھے۔ متعدد مرتبہ ایسے مناظر بھی ٹی وی پر دکھائے دیئے، جب عوام شدت غم سے نڈھال ہو کر بے قابو ہو رہے تھے۔ یہ تقریب براہ راست شمالی کوریا کا سرکاری ٹیلی وژن نشر کر رہا تھا۔ اس موقع پر ایک میزبان کا کہنا تھا ’’ یہ صورتحال غیر فطری ہے، یہ ظاہر کرتی ہے کہ ہمارے محبوب قائد ایک عظیم شخصیت تھے۔ انہیں کبھی بھی نہیں بھلایا جا سکے گا۔ وہ ہمیشہ ہمارے دلوں میں زندہ رہیں گے‘‘۔

کم جونگ ال کی آخری رسومات میں کسی بھی غیر ملکی وفد کو دعوت نہیں دی گئی تھی۔ پیانگ یانگ حکومت کا مؤقف ہے کہ یہ ان کا نجی معاملہ ہے۔ لیکن اس موقع پر بیرون ملک مقیم شمالی کوریا کے بہت سے افراد اپنے لیڈر کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے پہنچے تھے۔ ایک خاتون کا کہنا تھا کہ شدت غم کی وجہ سے وہ خود کو بیمار محسوس کر رہی ہے۔ کم جونگ اُن اب شمالی کوریا کے نئے سربراہ ہیں اور اسی وجہ سے وہ جلد واپس اپنے وطن لوٹ جانا چاہتی ہے۔

Nordkorea Trauerfeier Beisetzung Kim Jong Il

مرحوم لیڈر کو21 فائر کرتے ہوئے الوداعی سلامی بھی دی گئی

کم جونگ ال کی آخری رسومات کی تقریب تین گھنٹوں تک جاری رہی۔ تقریب کے ختم ہونے کا باقاعدہ اعلان ایک حکومتی ترجمان نے کیا۔ اس موقع پر مرحوم لیڈر کو21 فائر کرتے ہوئے الوداعی سلامی بھی دی گئی اور شمالی کوریا کا قومی ترانہ بھی بجایا گیا۔ کِم جونگ اِل کا تابوت ایک مرتبہ پھر دارالحکومت کے کم سوسان پیلس میں رکھ دیا گیا ہے۔

کم جونگ ال سترہ دسمبر کو حرکت قلب بند ہوجانے کے باعث انتقال کر گئے تھے۔ انہوں نے 1994ء میں اقتدار سنبھالنے کے بعد ملک کے جوہری پروگرام کو ترقی دی۔ آخری رسومات کے موقع پر ہونے والی برف باری پر ایک فوجی اہلکار کا کہنا تھا کہ کم جونگ ال کی موت پر آسمان بھی اشک بار ہے۔

رپورٹ: عدنان اسحاق

ادارت: حماد کیانی