1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کمبوڈیا کا تھاکسن کو تھائی لینڈ کے حوالے کرنے سے انکار

کمبوڈیا نے بینکاک حکومت کی جانب سے تھائی لینڈ کے سابق وزیر اعظم تھاکسن شناواترا کی ملک بدری کی درخواست مسترد کر دی ہے۔ تھاکسن کو متصادم مفاد کے ایک مقدمے میں دو سال کی قید سنائی جا چکی ہے۔

default

سابق تھائی وزیر اعظم کمبوڈیا کے وزیر اعظم ہُن سین کے ساتھ

اسی سزا کا سامنا کرنے کے لئے تھائی حکومت ان کی ملک میں واپسی چاہتی ہے۔ تھائی لینڈ کے وزیر اعظم ابھیشیت ویجاجیوا نے فنوم پین حکومت کی جانب سے تھاکسن کی ملک بدری کی درخواست مسترد کئے جانے کی مذمت کی ہے۔

Thailand König Bhumibol Adulyadej

تھائی لینڈ کے بادشاہ بھوبیبول

انہوں نے اپنے ہمسایہ ملک کے لئے مزید امدادی پروگرام روکنے کا اعلان بھی کیا ہے جبکہ تھاکسن کے دَور میں کمبوڈیا کے ساتھ طے پانے والا تیل و گیس کی تلاش کا معاہدہ بھی ختم کر دیا گیا ہے۔

تھاکسن کو فنوم پن حکومت کی جانب سے اقتصادی امُور کے مشیر کی حیثیت سے کام کرنے کی پیش کش ہوئی، جس کے بعد وہ منگل کو کمبوڈیا پہنچے۔ بینکاک حکومت نے بدھ کو ہی تھاکسن کی ملک بدری کی درخواست اپنے ہمسایہ ملک کی وزارت خارجہ کے حوالے کر دی۔ کمبوڈیا نے جواب دینے میں دیر نہیں کی اور اسی روز کہہ دیا کہ درخواست پر غور نہیں کیا جا سکتا۔

کمبوڈیا کے وزیر اعظم ہُن سین نے ایک نیوزکانفرنس سے خطاب میں کہا کہ تھائی وزارت خارجہ کے نام جوابی خط یہ بتانے کے لئے کافی ہے کہ تھاکسن کو ملک بدر نہیں کیا جائے گا۔

اس موقع پر تھاکسن بھی موجود تھے، جنہوں نے کہا کہ وہ اپنے لوگوں کی مدد کرنا چاہتے ہیں اور اپنے ہمسایے کی مدد کرکے بالواسطہ اپنے ہی لوگوں کی مدد کریں گے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ تھائی حکومت 'سرد جنگ کی ذہنی کیفیت' کا شکار ہے۔

تھاکسن 2001ء سے 2006ء تک تھائی لینڈ کے وزیر اعظم رہے۔ تاہم فوج نے بدعنوانی اور تھائی بادشاہ بھومیبول کے لئے عدم احترام کے اظہار پر انہیں اقتدار سے ہٹا دیا تھا۔ اس وقت سے وہ خودساختہ جلاوطنی اختیار کئے ہوئے ہیں اور زیادہ وقت دبئی میں گزارتے رہے ہیں جبکہ متصادم مفاد کے ایک مقدمے میں تھائی لینڈ میں ان کی غیرحاضری میں انہیں دو سال قید کی سزا سنائی جا چکی ہے۔

تھاکسن کمبوڈیا کے وزیر اعظم ہُن سین کے قریبی ساتھی ہیں۔ ہُن سین کا کہنا ہے کہ تھائی رہنما کو سیاسی بنیادوں پر قائم کئے گئے مقدمے کے تحت سزا سنائی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بعض رہنماؤں کو اشتعال انگیزی کے دَور میں اقتدار سے ہٹایا گیا، لیکن تھاکس کو اس وقت ہٹایا گیا، جب وہ اپنی قوم کے لئے ایک مشن پر تھے۔

ہُن سین کا یہ بھی کہنا ہے کہ سنگاپور میں آئندہ اتوار کو علاقائی رہنماؤں کے اجلاس کے دوران تھائی وزیر اعظم سے ان کی ملاقات ہوئی، تو وہ تھاکسن کے فنوم پین حکومت میں اقتصادی مشیر کی حیثیت سے کردار پر کوئی بات نہیں کریں گے۔ اس اجلاس میں امریکی صدر باراک اوباما بھی شرکت کریں گے۔

Abhisit Vejjajiva

تھائی وزیر اعظم ابھیشیت ویجاجیوا

بتایا جاتا ہے کہ تھاکسن جمعرات کو کمبوڈیا کے تین سو اقتصادی ماہرین سے خطاب کریں گے۔ وہ ملک کے معروف آنگکور واٹ مندر کا دورہ بھی کریں گے جبکہ ہُن سین کے ساتھ گولف بھی کھیل سکتے ہیں۔

واضح رہے کہ دونوں ممالک کے درمیان سفارتی تعلقات پہلے ہی کشیدہ ہیں۔ تھائی لینڈ اور کمبوڈیا نے دونوں جانب سے گزشتہ ہفتے اپنے اپنے سفیروں کو واپس بلا لیا تھا۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: عابد حسین

DW.COM