1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کلنٹن عوامی رائے کا رُخ غیر حقیقی مسائل کی طرف موڑ رہی ہیں، ایران

امریکی سیکرٹری خارجہ نے خلیجی ممالک کے مختصر دورے کا دوسرا اور آخری دن سعودی عرب میں گزارا۔ وہ پیر کی شب قطر سے سعودی عرب پہنچیں، جہاں انہوں نے سعودی حکمران شاہ عبداللہ اور وزیر خارجہ شہزادہ سعود الفیصل سے ملاقات کی۔

default

سعودی حکومت نے ایرانی ایٹمی پروگرام کے حوالے سے جاری بحران کے حوالے سے کہا ہے کہ وہ ایران پر پابندیاں لگانے کی بجائے اس معاملے کا فوری حل تلاش کرنے کے حق میں ہے۔ سعودی وزیر خارجہ شہزادہ سعود الفیصل نے اپنی امریکی ہم منصب سے ملاقات کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سعودی عرب اس خطرے کے قریب ترین ہے لہٰذا وہ اس کا فوری حل چاہتا ہے۔ تاہم انہوں نے زور دے کر کہا، اس کا یہ مطلب نہیں کہ ریاض حکومت کسی فوجی کارروائی کی حمایت کر رہی ہے بلکہ ان کا مقصد یہ ہے کہ مشرق وُسطیٰ میں امن عمل کو تیز تر کیا جائے تاکہ اس علاقے میں موجود تناؤ ختم ہو سکے۔

Hillary Clinton Saudi-Arabien

ہلیری کلنٹن نے پیر کی شب سعودی عرب پہنچنے پر سعودی فرمانروا شاہ عبداللہ سے بھی ملاقات کی۔

امریکی سیکرٹری خارجہ ہلیری کلنٹن نے آج جدہ میں طالبات سے خطاب کرتے ایران کے ایٹمی پروگرام سے مغربی ممالک کو درپیش تحفظات کا ذکر کرتے ہوئے کہا، "ایران نے اب بین الاقوامی ایٹمی ایجنسی IAEA کو بتایا ہے کہ اس نے یورینیئم کی زیادہ حد تک افزودگی شروع کردی ہے۔ یہ اعلان نہ صرف اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل کی قراردادوں کے خلاف ہے بلکہ اشتعال انگیز بھی ہے۔ ایرانی حکومت اس بات سے آگاہ ہے کہ یہ اقدام علاقائی عدم استحکام کو جنم دے گا اور اس کو دنیا میں مزید الگ تھلگ کر دے گا۔"

Iran Außenminister Manouchehr Mottaki

ایرانی وزیر خارجہ منوچہر متقی نے کہا ہے کہ مشرق وُسطیٰ کو درپیش مسائل کے بارے میں امریکی رویہ نہ صرف غلط ہے بلکہ یہ اس کی غلط پالیسیوں کا تواتر ہے۔

سعودی عرب روانگی سے قبل قطر میں مقامی طلبہ سے خطاب کرتے ہوئے امریکی سیکرٹری خارجہ ہلیری کلنٹن نے کہا کہ ایران میں محافظین انقلاب کہلانے والے فوجی دستے بتدریج زیادہ سے زیادہ طاقتور ہوتے جا رہے ہیں اور نتیجتاﹰ ایران ایک فوجی آمریت کی طرف بڑھتا دکھائی دیتا ہے، "ہم دیکھ رہے ہیں کہ ایرانی حکومت، سپریم لیڈر، ریاستی صدر اور ملکی پارلیمان بتدریج بے اثر کیے جا رہے ہیں اور ایران ایک فوجی آمریت کی طرف بڑھتا دکھائی دیے رہا ہے۔ یہ ہمارا نقطہء نظر ہے۔"

ایرانی حکومت کی جانب سے امریکی وزیر خارجہ کے اس بیان پر سخت ردعمل سامنے آیا ہے۔ ایران نے الزام لگایا ہے کہ واشنگٹن مشرق وسطیٰ میں غلط پالیسیوں کو فروغ دے رہا ہے۔ ایرانی خبررساں ادارے ISNA کے مطابق وزیر خارجہ منوچہر متقی نے کہا ہے کہ امریکی حکومت بذات خود ایک طرح کی فوجی آمریت کو فروغ دینے میں ملوث ہے اور وہ اس علاقے سے متعلق حقائق اور سچائیوں کو نظرانداز کر رہی ہے۔ منوچہر متقی نے مزید کہا کہ مشرق وُسطیٰ کو درپیش مسائل کے بارے میں امریکی رویہ نہ صرف غلط ہے بلکہ یہ اس کی غلط پالیسیوں کا تواتر ہے۔ ایرانی وزیر خارجہ نے ہلیری کلنٹن کے بیان کے حوالے سے کہا کہ وہ علاقے کے بارے میں عوامی رائے کا رُخ غیر حقیقی اور غلط مسائل کی طرف موڑنے کی کوشش کر رہی ہیں۔

رپورٹ : افسر اعوان

ادارت : امجد علی

Audios and videos on the topic