1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کشمیر میں پاکستانی فوج کی چوکیوں پر حملہ کیا، بھارت

منگل کے روز بھارتی فوج کی جانب سے کہا گیا ہے کہ اس نے متنازعہ علاقے کشمیر کو دو حصوں میں تقسیم کرنے والی لائن آف کنٹرول پر واقع متعدد پاکستانی چوکیوں کو نشانا بنایا ہے۔ پاکستان نے اس دعویٰ کی تردید کی ہے۔

بھارتی فوجی بیان میں کہا گیا ہے کہ پاکستانی فوج لائن آف کنٹرول پر دراندازی کی مدد میں مصروف تھی، جس کے جواب میں ان چوکیوں کو نشانہ بنایا گیا۔ فی الحال ان بھارتی دعووں کی آزاد ذرائع سے تصدیق نہیں ہو سکی ہے۔

بھارتی فوج کی جانب سے بیان میں صرف یہ کہا گیا ہے کہ یہ حملے نوشہرہ سیکٹر میں کیے گئے، تاہم یہ نہیں بتایا گیا ہے کہ بھارت فوج نے کب اور کیسے پاکستانی فوجی چوکیوں کو نشانہ بنایا۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق اس حوالے سے بھارتی میڈیا پر دکھائی جانے والی فوٹیج میں ایک پہاڑی علاقے میں دھماکے ہوتے دکھائی دے رہے ہیں، تاہم اس حوالے سے بھارتی دعووں کی آزاد ذرائع سے تصدیق نہیں ہو پا رہی ہے۔

Pakistan Kaschmir Grenze zu Indien (picture-alliance/AP Photo/A. Naveed)

پاکستانی فوج نے اس بھارتی دعوے کی تردید کی ہے

بھارتی فوج کے میجر جنرل اشوک نارولا نے صحافیوں سے بات چیت میں کہا، ’’یہ انتہائی ضروری ہے کہ لائن آف کنٹرول سے دراندازی کو روکا جائے۔‘‘

انہوں نے پاکستان پر الزام عائد کیا کہ وہ بھارت کے زیرانتظام کشمیر میں مختلف دیہات کو فائرنگ کا نشانہ بنا رہا ہے: ’’ہمارے فوجیوں کی جانب سے حالیہ کارروائی نوشہرہ سیکٹر میں کی گئی، جس میں پاکستانی فوج کا کچھ نقصان ہوا، جو دراندازوں کی معاونت میں مصروف تھی۔‘‘

پاکستانی فوج نے ان بھارتی دعووں کی تردید کی ہے۔ پاکستان فوج کے ترجمان میجر جنرل آصف غفور نے کہا ہے کہ یہ بھارتی دعوے سراسر جھوٹ پر مبنی ہیں۔

یہ بات اہم ہے کہ لائن آف کنڑول پر جوہری صلاحیت کے حامل دونوں پڑوسی ممالک کی فوج کی بھاری نفری تعینات ہے اور ان دونوں فوجوں کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ وقفے وقفے سے دیکھنے میں آتا رہتا ہے جب کہ فریقین ایک دوسرے پر فائربندی معاہدے کی خلاف ورزی کے الزامات عائد کرتے رہتے ہیں۔