1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

کشمیر میں مرحلہ وار انتخابات کا اعلان

بھارتی الیکشن کمیشن نے بھارت کے زیرِ انتظام جموں و کشمیر میں سات مرحلوں میں ریاستی انتخابات کروانے کا اعلان کردیا ہے۔

default

بھارتی الیکشن کمشنر این گوپالا سوامی نے ایک پریس کانفرنس میں اعلان کیا کہ بھارت کے زیرِ انتظام کشمیر میں انتخابات سترہ نومبر سے چوبیس دسمبر تک سات مرحلوں میں ہوں گے اور اٹھائیس دسمبر کو ووٹوں کی گنتی کے بعد اکتیس دسمبر تک انتخابات کا عمل مکمل ہوجائے گا۔ بھارتی الیکشن کمشنر کے مطابق مختلف حلقوں میں مختلف دنوں میں پولنگ کی جائے گی۔ سب سے آخری مرحلے میں ووٹنگ سری نگر اور جموں میں ہوگی۔

Indien Kashmir Proteste August 2008

کشمیر میں اس برس اب تک کم از کم چالیس افراد پر تشدّد واقعات میں ہلاک ہو چکے ہیں

بھارت نواز کشمیری سیاسی جماعتوں نے انتخابات کے اعلان کا خیر مقدم کیا ہے جب کہ علیحدگی پسند جماعتوں کا دیرینہ موقف ہے کہ انتخابات کشمیر کے مسئلے کا حل نہیں ہیں۔ علیحدگی پسند رہنما یاسین ملک نے انتخابات کے بائکاٹ کا اعلان کردیا ہے۔

گزشتہ ہفتے بھارتی الیکشن کمیشن نے بھارت کی پانچ ریاستوں کے لیے انتخابی شیڈیول کا اعلان کیا تھا تاہم جموں و کشمیر میں کشیدگی کے باعث اس شیڈیول سے اس کو باہر رکھا گیا تھا۔ امسال بھارت کے زیرِ انتظام کشمیر میں مختلف واقعات میں کم از کم چالیس افراد ہلاک اور ایک ہزار کے لگ بھگ زخمی ہوئے ہیں اور اسی بنا پر کشمیر میں یہ مطالبہ کیا جا رہا تھا کہ یہاں انتخابات موخر کردیے جائیں۔

Eröffnung der Kashmir Buslinie zwischen dem indischen Srinagar und Muzaffarabad

پاکستان اور بھارت کے درمیان حالیہ برسوں میں تعلقات کی بہتری کے باوجود کشمیر کا مسئلہ پیچیدہ اور حل طلب ہے

بھارتی تجزیہ نگار میجر جنرل اشوک مہتا نے خبر رساں ادارے رائٹرز کو بتایا ہے کہ علیحدگی پسندوں کی جانب سے کشمیریوں کو انتخابات میں شمولیت سے روکا جائے گا۔ ان کا کہنا ہے کہ انتخبات کروانے کا حکومتی فیصلہ بہر حال دانش مندانہ ہے اور انتخابات میں تاخیر مسائل میں اضافے کا سبب بن سکتی ہے۔

کشمیری علیحدگی پسند رہنما میر واعظ عمر فاروق نے انتخابات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ انتخابات کبھی بھی کشمیریوں کے حقِ خودارادیت کا متبادل نہیں ہوسکتے۔

مبصرین کا یہ بھی کہنا ہے کہ نومبر اور دسمبر کے مہینوں میں وادی میں سخت سردی کے باعث ویسے ہی انتخابات میں ووٹنگ کا عمل سست رہنے کا امکان ہے۔