1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کشمیر میں ماورائے عدالت گرفتاریاں: ایمنسٹی کی بھارت پر تنقید

انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل نے اس متنازعہ بھارتی قانون پر سخت تنقید کی ہے، جسے جموں کشمیر میں اب تک 20 ہزار سے زائد افراد کو بغیر کوئی مقدمہ چلائے قید میں رکھنے کے لیے استعمال میں لایا جا چکا ہے۔

default

سری نگر میں بھارتی حکومت کے خلاف نعرے لگاتے نوجوان کشمیری مظاہرین، فائل فوٹو

ایمنسٹی کے ایشیا بحرالکاہل کے خطے کے لیے ڈائریکٹر سیم ظریفی نے پیر کے روز نئی دہلی میں کہا کہ بھارت میں پبلک سیفٹی ایکٹ PSA کے تحت پولیس کو یہ اختیارات حاصل ہیں کہ وہ کسی بھی شخص کو ریاست کے لیے خطرہ قرار دے کر بغیر کوئی مقدمہ چلائے دو سال تک حراست میں رکھ سکتی ہے۔

Kaschmir Kashmir Indien Polizei Protest Demonstration Muslime Steine

جموں کشمیر میں بھارتی سکیورٹی دستوں پر انسانی حقوق کی شدید خلاف ورزیوں کے الزام لگائے جاتے ہیں

سیم ظریفی کے بقول بھارت کے زیر انتظام بد امنی کی شکار ریاست جموں کشمیر میں حکام ایسے تمام افراد کو قید میں رکھنے کے لیے یہ قانون استعمال کر رہے ہیں، جو ان کے لیے سیاسی طور پر نقصان دہ ہوتے ہیں اور جنہیں راستے سے ہٹانے یا کسی مروجہ قانون کے مطابق سزا دلوانے کا کوئی دوسرا راستہ یا امکان نہیں ہوتا۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق سن 1989 سے یہ قانون 20 ہزار سے زائد افراد کو طویل عرصے کے لیے حراست میں رکھنے کے لیے استعمال ہو چکا ہے۔ منقسم ریاست جموں کشمیر کے بھارت کے زیر انتظام علاقے میں نئی دہلی کی حکمرانی کے خلاف مسلم آبادی کی طرف سے مزاحمت اور انتہا پسندی کی ایک بڑی لہر 1989ء میں شروع ہوئی تھی۔

ایمنسٹی کے مطابق اسی کے عشرے کے آخر سے لے کر اب تک بھارتی حکام نے ہر سال سینکڑوں کشمیریوں کو گرفتار کر کے اس طرح مختلف جیلوں میں قید رکھا کہ ان افراد پر نہ تو کوئی فرد جرم عائد کی گئی اور نہ ہی انہیں کسی عدالت میں پیش کیا گیا۔

Jammu Kashmir Chief Minister Omar Abdullah

ریاستی وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ

بھارت میں نافذ العمل پبلک سیفٹی ایکٹ نامی اسی قانون کے حوالے سے اس سال جنوری میں انسانی حقوق کے احترام سے متعلق اقوام متحدہ کی خصوصی اہلکار مارگریٹ سیکاگیا نے بھی یہ کہا تھا کہ یہ قانون غلط ہے، جس کا فوری طور پر خاتمہ ہونا چاہیے۔

سرکاری اعداد و شمار کے مطابق کشمیر میں بھارتی حکمرانی کے خلاف دو عشروں سے بھی زائد عرصے سے جاری مسلمان علیحدگی پسندی کی مسلح تحریک کے دوران اب تک قریب 47 ہزار افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ خود کشمیری انتہا پسند تنظیموں اور غیر ملکی مبصرین کی رائے یہ ہے کہ سن 1989 سے اب تک بھارتی کشمیر میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد سرکاری اعداد و شمار سے کہیں زیادہ بنتی ہے۔

رپورٹ: مقبول ملک

ادارت: افسر اعوان

DW.COM

ویب لنکس