1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کشمیر انتخابات: نیشنل کانفرنس کو سب سے زیادہ سیٹیں

بھارت کے زیر انتظام جموں کشمیر میں سات مرحلوں میں 24 دسمبر کو مکمل ہونے والے ریاستی اسمبلی کے لئے انتخابات کے نتیجے میں نیشنل کانفرنس ریاستی اسمبلی میں سب سے بڑی جماعت بن کر سامنے آئی ہے۔

default

تین مرتبہ وزیر اعلیٰ کے عہدے پر فائز رہنے والے فاروق عبداللہ سری نگر میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے

ریاستی اسمبلی کے لئے الیکشن کے 28 دسمبر اتوار کے روز سری نگر میں ووٹوں کی گنتی کے بعد جاری کئے گئے نتائج کی رو سے نئی اسمبلی میں سب سے بڑی پارٹی نیشنل کانفرنس ہو گی جس کے بعد پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی PDP کا نام دوسرے نمبر پر آتا ہے جو اب تک بھارت کے زیر انتظام جموں کشمیر میں اقتدار میں تھی۔

بھارت میں مرکزی سطح پر حکومت کر نے والی وزیر اعظم من موہن سنگھ کی جماعت کانگریس پارٹی جموں کشمیر میں نئی اسمبلی میں اپنے ارکان کی تعداد کے حوالے سے تیسری بڑی پارٹی ہو گی۔

Wahlen Kashmir Indien

حالیہ الیکشن کے دوران سری نگر میں ایک پولنگ سٹیشن کے باہر اپنی باری کی منتظر خواتین

کافی زیادہ امکان ہے کہ ریاست میں نئی حکومت نیشنل کانفرنس بنائے گی جواب تک برسر اقتدار ریاستی انتظامیہ ہی کی طرح ایک مخلوط حکومت ہو گی۔

نیشنل کانفرنس کے رہنما اور ماضی میں ایک سے زائد مرتبہ ریاستی وزیر اعلٰیٰ کے عہدے پر فائز رہ چکنے والے ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے سری نگر میں انتخابی نتائج کے اعلان کے بعد ڈوئچے ویلے کی ہندی سروس کے خاص طور پر ان انتخابات کے سلسلے میں کشمیر میں موجود رکن انور جمال کے ساتھ ایک انٹرویو فاروق عبداللہ نے کہا کہ الیکشن کے مکمل نتائج آنے کے بعد نیشنل کانفرنس کی قیادت یہ فیصلہ کرگی کہ مخلوط حکومتی مذاکرات کس پارٹی سے کئے جانا چاہیئں۔

فاروق عبداللہ کے بقول ریاست کا اگلا وزیر اعلیٰ بننے کی صورت میں اُن کی اولین ترجیح یہ ہو گی حکومتی کارکردگی بہت صاف اور شفاف ہو، لوگوں کے مسائل حل کئے جائیں اورخاص طور پر بہت زیادہ بے روزگاری جیسے شدید نوعیت کے مسائل کا حل تلاش کرنے میں کوئی تاخیر نہ ہو۔

Audios and videos on the topic