1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کرم ایجنسی میں آپریشن، ایک لاکھ افراد بے گھر

پاکستانی حکام کے مطابق افغانستان کے ساتھ سرحد سے ملحقہ پاکستانی قبائلی علاقے کرم ایجنسی میں عسکریت پسندوں کے خلاف شروع کردہ فوجی آپریشن کے نتیجے میں وہاں سے کم ازکم ایک لاکھ افراد ہجرت پر مجبور ہو چکے ہیں۔

default

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے پاکستانی حکام کا حوالہ دیتے ہوئے بدھ کے روز بتایا کہ رواں ماہ کے آغاز سے کرم ایجنسی میں شروع ہوئے فوجی آپریشن کے باعث ہزاروں خاندان وہاں سے محفوظ مقامات کی طرف نقل مکانی کر چکے ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ اس علاقے میں پاکستانی جنگجو اور طالبان باغیوں کے مختلف گروہ پناہ لیے ہوئے ہیں، جو سرحد پار افغانستان میں بھی مسلح کارروائیاں کرتے رہتے ہیں۔

پاکستان میں مہاجرین کی امداد کے نگران اور اعلیٰ حکومتی اہلکار صاحبزادہ انیس نے اے ایف پی کو بتایا، ’اب تک ہم کم ازکم 9944 گھرانوں کی رجسٹریشن کر چکے ہیں، جو ایک لاکھ سے زائد افراد پر مشتمل ہیں‘۔ انہوں نے بتایا کہ قریب 1800 گھرانے عارضی پناہ گاہوں میں رہائش پذیر ہیں جبکہ باقی یا تو اپنے رشتہ داروں کے گھروں میں چلے گئے ہیں یا پھر اب تک اپنے لیے کرائے کے مکانات حاصل کر چکے ہیں۔

NO FLASH Pakistan Flüchtlinge Binnenflüchtlinge Timargara

9944 گھرانوں کی رجسٹریشن کی جا چکی ہے

صاحبزادہ انیس نے مزید کہا کہ یہ عارضی پناہ گاہیں اسکولوں اور کالجوں میں بنائی گئی ہیں۔ ان کے بقول موسم گرما کی چھٹیوں کے باعث یہ عمارات خالی تھیں، اس لیے وہاں کیمپ لگا دیے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر کرم ایجنسی میں عسکریت پسندوں کے خلاف عسکری کارروائی طول پکڑتی ہے تو گرمیوں کی چھٹیوں میں توسیع بھی کی جا سکتی ہے۔

جب پاکستانی حکام نے افغانستان سے ملحقہ اس قبائلی علاقے میں عسکری کارروائی شروع کی تھی تو یہ عزم ظاہر کیا گیا تھا کہ اس علاقے کو جنگجوؤں سے پاک کر دیا جائے گا۔ حکومتی ذرائع کے مطابق اس علاقے میں پناہ لیے ہوئے جنگجو پاکستان میں پر تشدد کارروائیوں اور خود کش حملوں میں بھی ملوث ہیں۔

امریکی حکام کے بقول پاکستان کے قبائلی علاقوں میں طالبان باغیوں کے علاوہ القاعدہ کے حامیوں نے بھی پناہ لے رکھی ہے۔ ابھی حال ہی میں کہا گیا تھا کہ انہی علاقوں میں کہیں القاعدہ کا نیا سربراہ ایمن الظواہری بھی موجود ہے۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس