1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کراچی: ٹارگٹ ’کلنگ‘ معیشت

پاکستان کی اقتصادی شہ رگ کہلانے والا شہر کراچی گزشتہ دو ماہ سے بدامنی،دہشت گردی ، بم حملوں اور ہدف بنا کر قتل کرنے کے واقعات کی وجہ سے معاشی عدم استحکام سے دو چار ہو رہا ہے۔

default

کراچی ایک مرتبہ پھر پر تشدد کارراوئیوں کی لپیٹ میں آگیا ہے

کراچی چیمبر آف کامرس، بڑے تاجروں اور صنعت کاروں کا کہناہے کہ ایسے حالات میں نہ سرمایہ کاری ہوسکتی ہے اور نہ ہی بیرونی سرمایہ کار یہاں آ سکتے ہیں۔ کراچی چیمبرآف کامرس کے سابق صدر ممتاز صنعتکار مجید عزیز نے ڈوئچے ویلے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سیاسی عدم استحکام ، بد امنی ، احتجاج اور ہڑتالوں کی وجہ سے دو ارب روپے فی گھنٹہ کا اس صنعتی شہر کو نقصان پہنچتا ہے ۔

مجید عزیز کا کہنا ہے کہ افسوسناک بات یہ ہے کہ یورپ ، امریکا سے تاجر مال کی خریداری کے لئے پاکستان آتے ہیں مگر افسوس کہ سرمایہ کاروں نے خراب حالات کی وجہ سے اپنی آمد ملتوی کر دی اور اب تو بھارت سے آنے والے تاجر بھی پاکستان کا سفر نہیں کر رہے ۔

معاشی تجزیہ کار محمد سہیل کی رائے بھی مجید عزیز سے مختلف نہیں ہے کراچی کے حالات کا اثر مجموعی طور پر درآمدات اور برآمدات کے علاوہ بیرونی سرمایہ کاروں پر بھی ہوتا ہے اگر یہ صورتحال برقرار رہی تو معاشی حالات مزید ابتری کا شکار ہو سکتے ہیں ۔

صنعت کاروں اور تاجروں کی کراچی کے حالات کے حوالے سے پریشانی اپنہ جگہ لیکن تجزیہ کار عاشورہ محرم کے بعد سے کراچی میں ہدف بنا کر قتل کرنے کے واقعات کی ذمہ داری حکومت میں شامل ایم کیو ایم ، اے این پی اور پیپلز پارٹی پر عائد کرتے ہیں جبکہ صنعت کاروں کے تاوان کے لئے اغواءکی وارداتیں بھی سرمایہ کاروں کے لئے پریشانی کا سبب بن رہی ہیں ۔

Dow Jones-Index erstmals wieder über 10.000 Punkten

کراچی میں پر تشدد کارروائیوں کے نتیجے میں ملکی معیشت ابتری کا شکار ہو سکتی ہے

فروری کے پہلے ہفتے میں لسانی اور سیاسی بنیادوں پر 50 افراد کے قتل نے حکومت کی کارکردگی پر سوالیہ نشان چھوڑا ہے ۔

رپورٹ: رفعت سعید، کراچی

ادارت: عاطف بلوچ

DW.COM

Audios and videos on the topic