1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کراچی سے چار طالبان شدت پسند گرفتار

پاکستانی حکام نے کہا ہے کہ کراچی میں دہشت گردی کا منصوبہ بنانے والے چار طالبان شدت پسندوں کو گرفتارکر لیا گیا ہے۔ یہ گرفتاریاں منگل کو عمل میں آئیں۔

default

صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی کے ایک اعلیٰ پولیس اہلکار عمر شاہد نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا ہے کہ ان مشتبہ افراد کا تعلق کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان سے ہے اور انہیں کراچی کے علاقے سہراب گوٹھ میں کارروائی کے دوران حراست میں لیا گیا۔ انہوں نے کہا، ’ان افراد سے پوچھ گچھ کر رہی ہے۔‘

عمر شاہد نے بتایا ہے کہ گرفتار کئے گئے امان الدین منو، احسان اللہ ،برکت اللہ اور عمر سہراب ، حال ہی میں شمالی وزیرستان سے کراچی پہنچے تھے۔ انہوں نے کہا، ’ گرفتار شدگان نے پولیس کو بتایا ہے کہ پاکستان میں طالبان کے سربراہ حکیم اللہ محسود نے انہیں حملہ کرنے کے لئے کراچی بھیجا۔‘

بتایا گیا ہے کہ ان افراد کا مقصد کراچی پولیس پر حملوں کے علاوہ مقدس مقامات اور مقبروں کو نشانہ بنانا بھی تھا۔ عمر شاہد کے بقول یہ مشتبہ ایسی سیاسی اور مذہبی شخصیات کو بھی نشانہ بنانے کا ارادہ رکھتے تھے، جو اِن کے انتہا پسندانہ نظریات کے خلاف ہیں۔

کراچی پولیس کے مطابق چھاپے کے دوران خود کش جیکٹیں، رائفلز، پستول اور دھماکہ خیز مواد بھی برآمد کیا گیا ہے۔ کراچی کے ایک اور اعلیٰ پولیس اہلکار محمد اسلم خان نے اے ایف پی کو بتایا کہ اس گروپ کا مقصد خود کش حملہ آوروں کو شمالی وزیرستان سے کراچی بلوانا تھا تاکہ وہ وہاں دہشت گردانہ کارروائی کر سکیں، تاہم ان گرفتاریوں کے بعد ان کا منصونہ ناکام ہو گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ان افراد سے کراچی میں ہونے والی حالیہ دہشت گردانہ کارروائیوں کے بارے میں بھی تفتیش کی جا رہی ہے۔

Löscharbeiten beim Flugzeugabsturz in Pakistan

گزشتہ دِنوں کراچی میں خود کش دھماکے کے نتیجے میں متعدد افراد ہلاک ہوئے

گیارہ نومبر کو مسلح شدت پسندوں نے کراچی میں ایک ایسے حراستی سینٹر کو دھماکہ خیز مواد سے اڑا دیا تھا، جہاں گرفتار کئے جانے والے مشتبہ دہشت گردوں سے پوچھ گچھ کی جاتی تھی۔ اس واقعہ میں اٹھارہ افراد ہلاک جبکہ 130 زخمی ہو گئے تھے۔ اسی طرح سات اکتوبر کومعروف صوفی عبداللہ شاہ غازی کے مزار پر حملے کے نتیجے میں دو بچوں سمیت کل نو افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

ایک محتاط اندازے کےمطابق پاکستان بھرمیں جولائی سن 2007ء سے اب تک کم ازکم تین ہزار شہری دہشت گردی کے نتیجے میں ہلاک ہو چکے ہیں۔ اس دوران حکومت پاکستان نے سلامتی کی صورتحال کو یقینی بنائے کے لئے کئی اہم اقدامات اٹھائے ہیں، تاہم تشدد کی یہ کارراوئیاں گاہے بگاہے ہوتی رہتی ہیں۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت:ندیم گِل

DW.COM