1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

کابل حکومت کے ساتھ بات چیت افواہ ہے: طالبان

طالبان کے اعلیٰ ترین لیڈر ملا عمر سے وابستہ ایک ای میل بیان میں کابل حکومت کے ساتھ مبینہ امن مذاکرات کو ’گمراہ کن افواہ‘ قرار دیا گیا ہے۔ طالبان کی اعلیٰ کمان نے بات چیت کو خارج از امکان قرار دیا ہے۔

default

شدت پسندوں کی ویب سائٹس پر نظر رکھنے والے مانیٹرنگ گروپ SITE کی ویب سائٹ پر افغانستان میں سرگرم انتہاپسند تنظیم طالبان کے اہم ترین لیڈر کا بیان جاری کیا گیا۔ ملا عمر کا یہ بیان ذرائع ابلاغ کو بذریعہ ای میل بھیجا گیا ہے۔ ملا عمر نے مبینہ طور پر کہا ہے کہ طالبان اس وقت تک چین سے نہیں بیٹھیں گے جب تک غیر ملکی فوج کا مکمل انخلاء عمل میں نہیں آجاتا۔

Richard Holbrooke Shah Mahmood Qureshi

پاکستانی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی امریکی مندوب رچرڈ ہالبروک سے ملتے ہوئے

عید الضحیٰ کے موقع پر جاری ہونے والے اس مبینہ ای میل میں طالبان کے لیڈر نے دعویٰ کیا ہے کہ دشمن کو میدان جنگ میں شکست کا سامنا ہے اور اب وہ میڈیا کے ذریعے اپنی جیت کا ڈھنڈورا پیٹ رہا ہے۔

ملا عمر کے اس بیان کے انگریزی متن میں کہا گیا ہے کہ غیر ملکی افواج کی بڑھتی ہلاکتوں کی وجہ سے امن مذاکرات کی گمراہ کن افواہیں پھیلائی جارہی ہیں۔ ان کے بقول اتحادی افواج اپنی ناکامیوں کو چھپانے کے لئے ’اسلامی امارات افغانستان‘ کے مؤقف میں لچک کی باتیں پھیلا رہے ہیں۔ بیان کے مطابق ’دشمن‘ کو ایسے ہی تھکا دیا جائے گا جیسے سابق سوویت یونین کی فوجوں کو افغانستان کے طول و عرض میں تھکا دیا گیا تھا۔ طالبان کے لیڈر نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ جنوبی افغانستان میں امریکی افواج کی تعداد میں حالیہ اضافہ بھی ان کے عزم کو کمزور نہیں کر سکا ہے۔

حال ہی میں کابل حکومت کی جانب سے ایسے اشارے سامنے آسے تھے کہ کرزئی حکومت کے مخالفین کو پرتشدد کارروائیاں ترک کرنے پر راضی کرنے کے عمل میں پیش رفت ہورہی ہے۔ حکومت کی سرپرستی میں سرگرم عمل امن جرگے کے مطابق طالبان نے معاملے کے سیاسی حل کے لئے رضامندی ظاہر کی ہے۔ نیٹو کے ایک اعلیٰ کمانڈر نے بھی انکشاف کیا ہے کہ کم از کم ایک طالبان کمانڈر کو حکام کے ساتھ مذاکرات کرنے کے لئے کابل تک پہنچنے میں معاونت اور محفوظ راستہ دیا گیا تھا۔

Afghanistan Kabul Soldaten Patrouille Kandahar

لزبن کانفرنس میں 2014ء تک سلامتی کی ذمہ داری افغان سکیورٹی فوسز کو سونپنے پر غور ہوگا

افغانستان میں برسرپیکار مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کے رکن ممالک کے لیڈران جمعہ کو یورپی ملک پرتگال کے دارالحکومت لزبن میں اکٹھے ہورہے ہیں۔ غالب امکان یہی ہے کہ اس دو روزہ سربراہ اجلاس میں میں افغانستان کے حوالے سے حکمت عملی میں تبدیلی کو فوقیت حاصل رہے گی اور اس میں امکاناً فوجی انخلاء کا ٹائم ٹیبل بھی شامل ہوسکتا ہے۔

پاکستان اور افغانستان کے لئے خصوصی امریکی مندوب رچرڈ ہالبروک کے مطابق لزبن سمٹ میں اتحادی افواج کے جنگی مشن کے خاتمے کا تعین ہو سکتا ہے۔ ہالبروک کے مطابق لزبن سے افغانستان میں ایک نئی عبوری حکمت عملی کی شروعات کا جائزہ لیا جا سکتا ہے اور جس کا ہدف 2014ء تک امن وسلامتی کی ذمہ داریاں افغانستان کو سونپنا ہوگا۔

رپورٹ: شادی خان سیف

ادارت: عابد حسین

DW.COM

ویب لنکس