1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ڈھاکا حملہ: بنگلہ دیشی کینیڈین سرغنہ ساتھیوں سمیت مارا گیا

ڈھاکا میں گزشتہ ماہ کے خون ریز دہشت گردانہ حملے کا بنگلہ دیشی کینیڈین ماسٹر مائنڈ تمیم چوہدری اپنے تین ساتھیوں سمیت مارا گیا ہے۔ تمیم چوہدری کو ’اسلامک اسٹیٹ‘ نے اپریل میں بنگلہ دیش میں اپنا ’نیشنل کمانڈر‘ قرار دیا تھا۔

Bangladesch Polizei Islamisten Dhaka

نارائن گنج میں پولیس کے ساتھ مقابلے میں تمیم چوہدری اپنے تین ساتھیوں سمیت مارا گیا

بنگلہ دیشی دارالحکومت سے ہفتہ ستائیس اگست کو ملنے والی نیوز ایجنسی روئٹرز کی رپورٹوں کے مطابق پولیس کے ایڈیشنل کمشنر منیر الاسلام نے آج بتایا کہ یہ چاروں عسکریت پسند ڈھاکا کے مضافاتی علاقے نارائن گنج میں ایک آپریشن کے دوران مارے گئے۔

منیر الاسلام نے بتایا کہ پولیس نے آج صبح ان عسکریت پسندوں کی ایک پناہ گاہ کو گھیرے میں لے لیا تھا، جس کے بعد ان سے ہتھیار پھینک دینے کے لیے کہا گیا۔ تاہم ملزمان نے انکار کر دیا اور ان کا پولیس کے ساتھ فائرنگ کا تبادلہ شروع ہو گیا، جس میں یہ چاروں شدت پسند ہلاک ہو گئے۔

پولیس حکام نے کہا ہے کہ مارے جانے والے شدت پسندوں میں تمیم احمد چوہدری نامی وہ بنگلہ دیشی نژاد کینیڈین شہری بھی شامل ہے، جو ڈھاکا میں گزشتہ ماہ کیے جانے والے ایک بڑےدہشت گردانہ حملے کا مبینہ طور پر مرکزی منصوبہ ساز تھا۔

بنگلہ دیش میں دہشت گرد گروپوں کی سرگرمیوں پر نظر رکھنے والے ماہرین اور تجزیہ کاروں کے مطابق تمیم احمد چوہدری کو، جو کافی عرصہ پہلے کینیڈا سے واپسی کے بعد بنگلہ دیش میں جہادی سرگرمیوں میں ملوث ہو گیا تھا، اسی سال اپریل میں شام اور عراق میں فعال دہشت گرد گروہ ’اسلامک اسٹیٹ‘ نے بنگلہ دیش میں اپنے ’قومی کمانڈر‘ کے طور پر شناخت کیا تھا۔

ڈھاکا میں یکم جولائی کی شام غیر ملکیوں میں مقبول شہر کے ایک معروف ریستوراں پر کیے جانے والے حملے میں 22 افراد مارے گئے تھے، جن میں اکثریت غیر ملکی باشندوں کی تھی۔ اس حملے کے دوران دہشت گردوں نے بہت سے افراد کو یرغمال بنا لیا تھا اور پھر ان میں سے مسلمانوں اور غیر مسلموں کو الگ الگ کر دیا تھا۔

Bangladesch Anschlag auf Cafe in Dhaka

ڈھاکا کا وہ ریستوراں جہاں دہشت گردوں کے حملے میں بائیس افراد مارے گئے تھے

اس کارروائی کے دوران حملہ آوروں نے بہت سے افراد کو قریب 12 گھنٹے تک یرغمال بنائے رکھا تھا، جس کے بعد پولیس نے کارروائی کر کے ان عسکریت پسندوں کو ہلاک کر دیا تھا اور زیادہ تر یرغمالی رہا کرا لیے گئے تھے۔ حملے میں مارے جانے والے بہت سے غیر ملکیوں میں اٹلی اور جاپان کے کئی شہریوں کے علاوہ امریکا اور بھارت کا ایک ایک شہری بھی شامل تھا۔

ڈھاکا میں ریستوراں پر اس حملے کی ذمے داری ’اسلامک اسٹیٹ‘ نے قبول کر لی تھی لیکن حکومت نے یہ دعویٰ مسترد کرتے ہوئے کہا تھا یہ حملہ جمیعت المجاہدین بنگلہ دیش کے مقامی شدت پسندوں نے کیا تھا۔

اس کے برعکس کئی سکیورٹی ماہرین کا کہنا تھا کہ جس بڑے پیمانے پر اور نپی تلی تیاری کے ساتھ دہشت گردوں نے یہ کارروائی کی تھی، وہ ظاہر کرتی تھی کہ حملہ آوروں کے بین الاقوامی سطح پر سرگرم دہشت گرد گروپوں کے ساتھ رابطے تھے۔

بنگلہ دیشی حکومت کے مطابق ملکی سکیورٹی فورسز نے 26 جولائی کو اپنے ایک بڑے آپریشن میں نو ایسے عسکریت پسند بھی ہلاک کر دیے تھے، جو یکم جولائی کے واقعے کی طرح کے ایک اور بڑے مسلح حملے کی تیاریاں کر رہے تھے۔

DW.COM