1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ڈونلڈ ٹرمپ، شی جن پنگ ملاقات: کيا کھويا کيا پايا

امريکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور چينی صدر شی جن پنگ کی پہلی ملاقات سے بہت سی توقعات وابستہ تھيں۔ تاہم ملاقات کے فوری بعد ٹرمپ کا کہنا تھا کہ تاحال انہيں اس ملاقات سے کچھ حاصل نہيں ہوا ہے۔

امريکی صدر نے اپنے چينی ہم منصب سے ملاقات کے بعد دونوں ممالک کے وفود سے مخاطب ہو کر کہا کہ انہوں نے شی جن پنگ کے ساتھ متعدد اُمور پر تفصيلی گفتگو تو کر لی ہے تاہم فی الحال وہ نہیں سمجھتے کہ اُنہيں کچھ حاصل  ہوا ہے۔ ٹرمپ نے مزيد کہا، ’’البتہ ميرے خيال ميں طويل المدتی بنيادوں پر ہمارے باہمی تعلقات بہت ہی اچھے ہوں گے۔‘‘ دنيا کی دو بڑی اقتصادی قوتوں کے صُدور کی يہ ملاقات پام بيچ، فلوريڈا کے ما آ لاگو ريزورٹ پر جمعرات کے روز ہوئی۔ شی جن پنگ امريکا کے دو روزہ دورے پر ہيں۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے شی جن پنگ کے اس دورے سے قبل پيش گوئی کی تھی کہ يہ ملاقات زبردست ثابت ہو گی۔ ٹرمپ اور شی جن پنگ کی يہ پہلی ملاقات تھی۔ قبل ازيں امريکی صدر چين پر کافی تنقيد کرتے آئے ہيں کيونکہ ان کا ماننا ہے کہ چينی اقدامات کی وجہ سے امريکی اقتصاديات کو کافی نقصان پہنچا ہے۔ تاہم ملاقات کے دوران اختلافات ذرا کم اور ٹرمپ کی جانب سے شاندار ميزبانی زيادہ واضح رہی۔ چينی صدر کے اس دورے کا ايجنڈا کھلا رکھا گيا ہے تاکہ دونوں صدور اچھے ذاتی تعلقات کو فروغ دے سکيں۔

دريں اثناء چين کی سرکاری نيوز ايجنسی کی طرف سے بتايا گيا ہے کہ چينی صدر نے اپنے امريکی ہم منصب کو اسی سال چين آنے کی دعوت دی، جسے ٹرمپ نے خوشی سے  قبول کر لیا ہے۔

دونوں سربراہان آج جمعے کے روز اہم سياسی، علاقائی اور بين الاقوامی امور پر تبادلہ خيال کريں گے۔