ڈا ونچی پکاسو سے آگے نکل گئے | فن و ثقافت | DW | 16.11.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

ڈا ونچی پکاسو سے آگے نکل گئے

معروف اطالوی مصور لیوناروڈ ڈا ونچی کے شاہکار ’سلواتور مُنڈی‘ نے فروخت کے اب تک کے تمام ریکارڈ توڑ دیے ہیں۔ نیو یارک کے کرسٹیز نامی نیلام گھر کے اندازوں کے برخلاف اس کی دو گنا قیمت ادا کی گئی۔

نیو یارک کے مشہور زمانہ کرسٹیز نیلام گھر کے مطابق سلواتور مُنڈی یعنی دنیا کا نجات دہندہ نامی اس تصویر کو ایک نامعلوم شخص نے 450.3 ملین ڈالر میں خریدا ہے۔ نیلامی بیس منٹ تک جاری رہی اور اس نامعلوم خریدار نے ٹیلیفون کے ذریعے اس عمل میں حصہ لیا۔

کہا جاتا ہے کہ لیوناروڈ ڈا ونچی کی یہ آخری تصویر تھی، جو فن کے کسی دلدادہ کے نجی استعمال میں تھی۔ اس سے قبل ان کے تمام شاہکار کسی نہ کسی عجائب گھر کی زینت ہیں۔

 اس شاہکار کو ابھی کچھ عرصہ قبل ہی حاصل کیا گیا ہے۔ اس وقت کرسٹیز نے اندازے لگائے تھے کہ یہ تصویر سو ملین ڈالر تک میں نیلام ہو گی۔ دنیا کا نجات دہندہ نامی فن پارہ حضرت مسیح کی تصویر ہے۔

 ’سلواتور مُنڈی‘ سے قبل ممتاز مصور پبلو پکاسو کی ایک پینٹنگ کو دنیا کے مہنگے ترین فن پارے کا اعزاز حاصل تھا۔ ہسپانوی مصور پکاسو کی ’الجزائر کی خواتین‘ نامی پینٹنگ مئی 2015ء میں 179.4 ملین ڈالر میں کرسٹیز میں ہی فروخت ہوئی تھی۔

پکاسو کی تخلیق، دنیا کا مہنگا ترین فن پارہ

پبلو پکاسو کی اسکیچ بک چوری

شامی مہاجرین اور ہسپانوی مصور کے فن پارے

پکاسو سے قبل دنیا کا مہنگا ترین فن پارہ آئر لینڈ کے مصور فرانسس بیکن کی تین حصوں پر مشتمل پینٹنگ ’تھری اسٹڈیز آف لُوسین فرائیڈ‘ تھی، جو نومبر 2013ء میں 142.4 ملین ڈالر میں فروخت ہوئی تھی۔ پانچ سو سال قبل تخلیق کی جانے والی’سلواتور مُنڈی‘ کو اس عرصے کے دوران کچھ نقصان پہنچا تھا۔ تاہم چھ سال کی کوششوں کے بعد اب یہ فن پارہ اپنی اصل حالت میں واپس آ چکا ہے۔

کرسٹیز نے اس شاہکار کے نئے مالک کا نام نہیں بتایا ہے۔ تاہم مقامی ذرائع بتا رہے ہیں کہ یہ کسی روسی شہری نے خریدی ہے۔ لیونارڈو ڈا ونچی مشہور تصویر مونا لیزا کے بھی خالق ہیں۔

ویڈیو دیکھیے 03:55

رات کی تاریکی میں فن پاروں کی تخلیق

 

DW.COM

Audios and videos on the topic