1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

ڈاکیے چاہے جرمن ہوں، کتے تو کاٹیں گے: سالانہ ڈیڑھ ہزار زخمی

جرمنی میں ہر سال قریب ڈیڑھ ہزار ڈاکیوں کو ان کے روزانہ فرائض کی انجام دہی کے دوران کتے کاٹ لیتے ہیں۔ یہ بات جرمنی کی سب سے بڑی پوسٹل کمپنی ڈوئچے پوسٹ کے سربراہ نے بتائی۔ ڈوئچے پوسٹ کے ملازم ڈاکیوں کی تعداد ایک لاکھ ہے۔

جرمنی کے مالیاتی اور کاروباری مرکز فرینکفرٹ سے اتوار ستائیس نومبر کو ملنے والی نیوز ایجنسی ڈی پی اے کی رپورٹوں کے مطابق ڈوئچے پوسٹ کے سربراہ فرانک آپَیل نے اخبار ’بِلڈ اَم زَونٹاگ‘ میں آج شائع ہونے والے اپنے ایک انٹرویو میں کہا کہ جرمن پوسٹ، جو ماضی میں ایک سرکاری ادارہ تھی اور برسوں پہلے نج کاری کے بعد سے ملک کی سب سے بڑی پوسٹل کمپنی ہے، کے لیے کام کرنے والے ڈاکیوں کی تعداد ایک لاکھ کے قریب ہے۔

ڈوئچے پوسٹ کے سربراہ نے کہا، ’’ہمارے ادارے کے ڈاک تقسیم کرنے والے خواتین و حضرات کو خاص طور پر یہ تربیت بھی دی جاتی ہے کہ اچانک کسی خطرناک کتے کا سامنا ہو جانے پر انہیں کیا کرنا چاہیے۔‘‘

اس کے باوجود ان مردوں اور خواتین میں سے ہر سال قریب 1500 کو کتے کاٹ لیتے ہیں۔ ’’کسی کتے کی طرف سے کاٹے جانے کے نتیجے میں زخمی ہونے پر ایسے ملازمین کو اپنا علاج بھی کرانا ہوتا ہے اور علاج کے عرصے کے دوران وہ کام پر بھی نہیں آ سکتے۔‘‘

اپنے اس انٹرویو میں ڈوئچے پوسٹ کے سربراہ آپَیل نے جرمن صارفین سے یہ درخواست بھی کی کہ اگر کسی کے گھر میں کوئی خطرناک کتا ہو اور دروازے پر یا گلی میں ڈاکیا کھڑا ہو، تو اپنی ڈاک وصول کرنے والے شہری کو اس دوران اپنے کتے کو گھر کے اندر ہی رکھنا چاہیے۔

Hundetraining für Postboten (picture-alliance/dpa)

کتے کا رویہ دوستانہ ہو تو کسی بھی عام شہری کی طرح ڈاکیے اسے پیار کرنے سے بالکل نہیں ہچکچاتے

DHL-Paketkopter (picture-alliance/dpa/I. Wagner)

ڈوئچے پوسٹ کی طرف سے استعمال کیا جانے والا ایک ’پیکٹ کاپٹر‘

ڈاکیوں کے بجائے ڈرونز

ایک سوال کے جواب میں فرانک آپَیل نے بتایا کہ ان کا ادارہ عام خطوط اور پیکٹوں کی شہریوں کو ترسیل کے لیے بہت چھوٹے کارگو ڈرونز کے ممکنہ  استعمال پر اپنی ریسرچ جاری رکھے ہوئے ہے تاہم پوسٹل ڈرونز کے استعمال سے پہلے اس بارے میں حکومت کی طرف سے واضح قانون سازی لازمی ہو گی۔

پوسٹل ڈرونز کے ممکنہ استعمال کے حوالے سے یہ بات بھی اہم ہے کہ انہیں استعمال کرنے والے پوسٹل ملازمین کو اس حوالے سے باقاعدہ لائسنس بھی لینا پڑیں گے۔

جرمنی میں ایسے پوسٹل ڈرونز کا تجرباتی استعمال جاری ہے اور فی الحال انہیں صرف بہت دور افتادہ مقامات پر ڈاک کے ذریعے ادویات وغیرہ کی ترسیل کے لیے ہی استعمال کیا جاتا ہے۔

DW.COM

Audios and videos on the topic