1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ڈالر کے ساتھ ساتھ پاؤنڈ بھی دباؤ کا شکار

عالمی مالیاتی بحران کے اثرات ڈالر کے ساتھ ساتھ اب پاؤنڈ پر بھی دیکھے جا سکتے ہیں۔ آج بدھ کے روز یورو کے مقابلے میں پاؤنڈ کی قیمت میں واضح کمی ریکارڈ کی گئی۔ کمی کا یہ رجحان گزشتہ کئی روز سے جاری ہے۔

default

عالمی مالیاتی بحران کے اثرات اب واضح طور پر دنیا کی بڑی معیشتوں پر دیکھے جا سکتے ہیں۔

پاؤنڈ کی قیمت میں اس تیزی سے گزشتہ 25 سالوں میں دیکھنے میں نہیں آئی۔ لندن سے رائل بینک آف اسکاٹ لینڈ کےجاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق ملک میں بیروزگاری میں اضافے سے ظاہر ہوتا ہے کہ برطانوی معیشت کمزوری کا شکار ہے اور یہ رجحان مذید کچھ عرصے تک جاری رہ سکتا ہے۔

EU USA Dollar und Euro

فیڈرل بینک کی جانب سے شرح سود میں ریکارڈ کمی کے بعد ڈالر کے مقابلے میں پاؤنڈ کی قیمت میں اضافہ دیکھا گیا۔

خبر رساں ادارے رائٹرز کے مطابق بدھ کے روز یورو کے مقابلے میں پاؤنڈ کی شرح تبادلہ دو اعشاریہ ایک فیصد کمی کا شکار ہوئی اور یورو، پاؤنڈ کے مقابلے میں آج جزوی طور پر 0.9206 پاؤنڈ تک بھی جا پہنچا۔

برطانوی اعداد و شمار میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ اوپن مارکیٹ میں کئی جگہوں پر سروس چارجز اور دیگر کٹوتیوں کے بعد پاؤنڈ بیچ کر یورو خریدنے والوں کو دو سو پاؤنڈ کے بدلے ایک سو ستانوے یورو تک بھی فروخت کئے گئے۔

Aufwertung Währung China Kursliste

نیویارک کے بازارِ حصص وال سٹریٹ پر شرحِ سُود میں اِس غیر متوقع اور نمایاں کمی کے مثبت اثرات مرتب ہوئے ہیں۔


ادھر ڈالر کے مقابلے میں پاؤنڈ مضبوط دکھائی دیا۔ امریکہ کے فیڈرل بینک کی جانب سے شرح سود میں ریکارڈ کمی کے بعد ڈالر کے مقابلے میں پاؤنڈ کی قیمت میں اضافہ دیکھا گیا۔

معیشی ماہرین کا خیال ہے کہ عالمی مالیاتی بحران کے اثرات اب واضح طور پر دنیا کی بڑی معیشتوں پر دیکھے جا سکتے ہیں۔ تاہم ماہرین کا یہ بھی کہنا ہے کہ شرح سود میں کمی کے علاوہ اس بحران سے نکلنے کا فوری طور پر کوئی اور طریقہ دستیاب بھی نہیں ہے۔

Schwacher Dollar starker Euro Geld Scheine

اوپن مارکیٹ میں بھی ڈالر اور پاؤنڈ شدید دباؤ کا شکار ہیں

قبل ازیں امریکہ کے سنٹرل بینک کی جانب سے شرحِ سُود ایک اعشاریہ صفر سے کم کر کے صفر اعشاریہ دو پانچ فیصد کر دی گئی۔ اِس کا جواز بتاتے ہوئے بینک کا کہنا تھا کہ امریکی معیشت کی آئندہ ممکنہ صورتِ حال اور بھی خراب دکھائی دے رہی ہے۔ نیویارک کے بازارِ حصص وال سٹریٹ پر شرحِ سُود میں اِس غیر متوقع اور نمایاں کمی کے مثبت اثرات مرتب ہوئے ہیں۔ ڈاؤ جونز انڈیکس میں چار فیصد سے زیادہ کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔