1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

چین میں مقید پاکستانیوں کے لواحقین کا احتجاج

چین کی مختلف جیلوں میں قید پاکستانیوں کے لواحقین نے حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ چینی حکام کے ساتھ کئے گئے مجرمان کے تبادلے کے معاہدے کے تحت ان قیدیوں کو وطن واپس لائے۔

default

اسلام آباد میں پارلیمنٹ کے باہر مظاہرہ

مختلف الزامات کے تحت چین کی جیلوں میں قید افراد کے لواحقین نے بدھ کے روز دارالحکومت اسلام آباد میں پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر مظاہرہ بھی کیا ۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ اس وقت سولہ خواتین سمیت تین سو پچاس افراد چینی جیلوں میں قید ہیں۔ اور مناسب سفارتی معاونت نہ ملنے کے سبب ان کی مشکلات میں اضافہ ہوا ہے۔ گلگت بلتستان کے ایک تاجر عترت حسین کے بھائی وجاہت علی نے ڈوئچے ویلے کو بتایا کہ ان کے بھائی گزشتہ بارہ سال سے شاہراہ قراقرم کے ذریعے چین سے تجارت کر رہے تھے لیکن انہیں چار سال قبل ایک ممنوعہ کیمیکل رکھنے کے الزام میں چینی حکام نے گرفتار کیا تھا اور بہت مشکلوں کے بعد انہیں اپنے بھائی کی گرفتاری سے متعلق معلومات حاصل ہوئیں۔ انہوں نے کہا ’’ وہاں پر پاکستانی سفارتخانہ کچھ نہیں کر رہا ، دفتر خارجہ نے بھی کوئی مدد نہیں کی سب مل کر پاکستانی ٹیکس گزاروں کا پیسہ کھا رہے ہیں اور حالت یہ ہے کہ دس لاکھ روپے خرچ کرنے کے بعد مجھے معلوم ہو سکا کہ میرے بھائی کہاں ہیں‘‘۔

Buddah in Taiyuan China

چین کی جیلوں میں تین سو سے زائد پاکستانی مقید ہیں

مظاہرے میں شریک ابرار حیدر کا کہنا تھا کہ ایک پاکستانی شہری ڈاکٹر عافیہ کی امریکہ سے رہائی کے لئے اتنی کوششیں کی گئیں لیکن چین میں قید سولہ پاکستانی بیٹیوں کی رہائی کی کوشش کیوں نہیں کی جا رہی ۔ اس موقع پر گلگت بلتستان کونسل کے رکن امجد حسین کا کہنا تھا کہ چین اور پاکستان کے درمیان دسمبر دو ہزار سات میں مجرمان کے تبادلے کا ایک معاہدہ کیا گیا تھا اور گلگت بلتستان کی حکومت کوشش کر رہی ہے کہ وہ وفاقی وزارت داخلہ کے ذریعے اپنے قیدیوں کو واپس لا سکے"۔

واضح رہے کہ پاکستانی دفتر خارجہ کے اعداد و شمار کے مطابق اس وقت سات ہزار سے زائد پاکستانی شہری دنیا کے مختلف ممالک کی قید میں ہیں اور حکومت ان کی رہائی کے لیے کوششیں کر رہی ہے ۔ لاپتہ افراد اور بیرون ملک قید پاکستانیوں کی رہائی کے لیے کام کرنے والی تنظیم ڈیفنس آف ہیومن رائٹس کی چیئرپرسن آمنہ مسعود کا کہنا ہے کہ یہ حکومت کی آئینی ذمہ داری ہے کہ وہ بیرون ملک اپنے قیدیوں کی رہائی کے لیے اقدامات کرے۔

Pakistan Demonstration gegen die USA

اسلام آباد میں عافیہ صدیقی کی رہائی کے لئے بھی متعدد مظاہرے ہو چُکے ہیں

انہوں نے کہا کہ افغانستان کی بگرام جیل میں ستائیس سے زائد جبکہ تھائی لینڈ میں ایک سو تین پاکستانی قیدی تھے جن میں سے آٹھ کو وطن واپس لایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا مقصد ہے کہ بیرون ملک قید پاکستانیوں کو وطن واپس لا کر قانونی معاونت فراہم کی جائے تا کہ انہیں رہائی نصیب ہو۔

معروف قانون دان بیرسٹر ظفر اللہ خان کا کہنا ہے کہ پاکستانی پاسپورٹ کے حامل ہر شخص کی بیرون ملک تحفظ کی ضمانت صدر پاکستان کی جانب سے دی جاتی ہے اس لیے یہ ضروری ہے کہ امریکہ برطانیہ اور دیگر یورپی ممالک کی طرح پاکستان بھی بیرون ملک قید اپنے شہریوں کو سفارتخانوں کے ذریعے ہر طرح کی امداد مہیا کرے۔

رپورٹ: شکور رحیم اسلام آباد

ادارت: کشور مصطفیٰ

DW.COM

ویب لنکس