1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’چین عالمی سربراہ کی ذمہ داری سنبھال سکتا ہے‘

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے اپنے پہلے خطاب میں ’’سب سے پہلے امریکا‘‘ کا نعرہ لگانے کے بعد ایک چینی سفارت کار نے کہا ہے کہ چین عالمی سربراہ کی ذمہ داری سنبھال سکتا ہے، گو وہ اس کا خواہشمند نہیں ہے۔

چین کی وزارت خارجہ کے انٹرنیشنل اکنامک ڈیپارٹمنٹ کے ڈائریکٹر جنرل ژینگ جُن کی جانب سے یہ بات غیر ملکی صحافیوں کو ایک بریفنگ کے دوران کہی گئی جو چینی صدر شی جِن پِنگ کے گزشتہ ہفتے کے دورہ سوئٹزرلینڈ کے حوالے سے تھی۔

داووس میں ہونے والے ورلڈ اکنامک فورم کے دوران چینی صدر نے خود کو ایک ایسی عالمگیر دنیا کا رہنما ثابت کیا تھا جس کے تمام مسائل بین الاقوامی تعاون کے ذریعے ہی حل کیے جا سکتے ہیں۔ ٹرمپ کے عہدہ صدارت سنبھالنے سے کئی روز قبل کی جانے والی اپنی اس تقریر میں شی جن پنگ نے ممالک پر زور دیا تھا کہ وہ الگ تھلگ کیے جانے کے خلاف مزاحمت کریں جو ایک طرح سے یہ اشارہ تھا کہ بیجنگ بین الاقوامی اسٹیج پر بڑا کردار ادا کرنے کو تیار ہے۔

ژینگ جُن کا کہنا تھا کہ چین کا عالمی رہنمائی حاصل کرنے کا کوئی ارادہ نہیں ہے: ’’اگر کوئی کہتا ہے کہ چین دنیا میں رہنما کا کردار ادا کر رہا ہے تو میں کہوں گا کہ یہ چین نہیں ہے جو آگے بڑھنے کی کوشش کر رہا ہے بلکہ رہنمائی کرنے والوں نے خود کو پیچھے کر لیا ہے اور وہ جگہ چین کے لیے خالی کی ہے۔‘‘

USA Amtsübernahme Trump Rede (Reuters/C. Barria)

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے اپنے پہلے خطاب میں ’’سب سے پہلے امریکا‘‘ کا نعرہ لگایا تھا

چین کی وزارت خارجہ کے انٹرنیشنل اکنامک ڈیپارٹمنٹ کے ڈائریکٹر جنرل کا مزید کہنا تھا، ’’اگر چین کو بین الاقوامی رہنمائی کا کردار ادا کرنا پڑا تو چین یہ ذمہ داریاں پوری کرے گا۔‘‘ ژینگ جُن کے مطابق چین دنیا کی دوسری بڑی معیشت ہے اور اپنی معاشی ترقی کے لیے دیگر اس پر انحصار کرتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا، ’’ہم اب بھی امید کرتے ہیں کہ امریکا اور دیگر مغربی معیشتیں دنیا کی معیشت کو دوبارہ بہتر کرنے کے لیے بڑا کردار ادا کر سکتی ہیں۔ ہم نے ٹرمپ کو کہتے سنا ہے کہ امریکا چار فیصد کی معاشی نمو کا ہدف حاصل کر لے گا اور ہم اس پر بہت خوش ہیں۔‘‘

تاہم ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ اگر ڈونلڈ ٹرمپ تجارتی جنگوں میں مصروف ہو گئے تو پھر معاشی نمو کا یہ ہدف حاصل کرنا ان کے لیے مشکل ہو گا: ’’ایک تجارتی جنگ یا کرنسی کی شرح تبادلہ کی جنگ کسی بھی ملک کے حق میں نہیں ہو گی۔‘‘