1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

چینی جوڑے کا قتل، داعش کے دعوے کی تحقیقات جاری

چینی اور پاکستانی حکام کے مطابق وہ کوئٹہ سے اغوا ہونے والے چینی جوڑے کو قتل کر دیے جانے کے دعوے کی تحقیقات کر رہے ہیں۔ شدت پسند تنثیم داعش نے دعویٰ کیا ہے کہ اغوا ہونے والے چینی شہریوں کو قتل کر دیا گیا ہے۔

نیوز ایجنسی اے پی کی رپورٹ کے مطابق چینی وزارت خارجہ کی ترجمان ہوا چنیوئنگ کا کہنا ہے کہ چینی حکومت اغوا ہونے والے چینی جوڑے کے بارے میں معلومات حاصل کرنے کے لیے پاکستانی انتظامیہ کے ساتھ رابطے میں ہے۔ اسلام آباد میں دو سکیورٹی افسران کا کہنا ہے کہ وہ داعش کے اس دعوے کی تحقیقات کر رہے ہیں کہ چینی جوڑے کو قتل کر دیا گیا ہے۔ ان سکیورٹی اہلکاروں کا کہنا ہے کہ ابھی تک انہیں لاشیں نہیں ملی ہیں۔

چینی وزارت خارجہ کی ترجمان کا کہنا تھا،’’ہمیں پاکستان میں اغوا ہونے والے چینی شہریوں کے بارے میں رپورٹس موصول ہوئی ہیں۔ ہم انہیں بازیاب کروانے کی کوشش کر رہے ہیں۔‘‘

Pakistan Soldaten (Picture alliance/Photoshot/Asad)

24 مئی کو اغوا کاروں نے چینی جوڑے کی گاڑی کو روک کرنہیں اغوا کر لیا تھا

پاکستانی فوج کے شعبہء تعلقات عامہ کے مطابق فوج نے بلوچستان میں کارروائی کر کے ’اسلامک اسٹیٹ‘ کے اڈے کو تباہ کر دیا اور اس تنظیم کے بارہ عسکریت پسندوں کو بھی ہلاک کر دیا ہے۔ پاکستانی فوج کے اس بیان کے بعد ہی داعش کی جانب سے یہ دعویٰ کیا گیاکہ انہوں نے کوئٹہ سے اغوا ہونے والے چینی جوڑے کو قتل کر دیا ہے۔

یہ چینی شہری ایک نجی ادارے میں چینی زبان کے اساتذہ تھے۔ اس سال 24 مئی کو اغوا کاروں نے جنہوں نے پولیس یونیفارم پہنا ہوا تھا، ان کی گاڑی کو روک کر اس چینی جوڑے کو اغوا کر لیا تھا۔ کئی ہزار چینی شہری کام کی غرض سے پاکستان میں رہائش پذیر ہیں۔ چین پاکستان کا اہم ترین اتحادی ملک ہے اور پاک چین اقتصادی منصوبے کے تحت یہ پاکستان میں کئی بجلی گھروں اور سٹرکوں کی تعمیر سمیت کئی دیگر منصوبوں پر کام کر رہا ہے۔

DW.COM