1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

چھبیس جنوری: بھارت کا یومِ جمہوریہ، کشمیریوں کا یومِ سیاہ

بھارت کے یومِ جمہوریہ کے موقع پر پاکستان اور اس کے زیرِ انتظام کشمیر میں سیاسی و مذہبی جماعتوں نے یومِ سیاہ منایا۔ اسلام آباد میں دفاعِ پاکستان کونسل کے رہنماؤں نے ایک کانفرنس کا بھی اہتمام کیا۔

Pakistan Islamabad Proteste gegen indischen Tag der Republik (DW/A. Sattar)

اسلام آباد میں حقِ خود ارادیت کے لیے کشمیریوں کی جدوجہد کے حامی حلقے بینرز اٹھائے ’یومِ سیاہ‘ منا رہے ہیں

اسلام آباد میں آل پارٹیزحریت کانفرنس کی طرف سے بھارت کے خلاف ایک مظاہر ہ کیا گیا، جس میں غلام محمد صفی، رفیق ڈار اور طاہر مسعود سمیت کئی کشمیری رہنماؤں نے شرکت کی۔ اس موقع پر مظاہرین نے’کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں بند کرو، کشمیر میں معصوم انسانوں کا قتلِ عام بند کرو، اقوام متحدہ! کشمیر آپ کی توجہ چاہتا ہے، ہمیں آزادی چاہیے اور بھارت کی نام نہاد جمہوریت مردہ باد‘ جیسے نعرے لگائے۔

ڈوئچے ویلے سے بات چیت کرتے ہوئے ڈیموکریٹک مسلم لیگ کے رہنما شیخ عبدالمتین نے کہا، ’’بھارت خود تو یومِ جمہوریہ مناتا ہے لیکن آزادی، جو جمہوریت کا سب سے بڑا تحفہ ہے، اس سے بھارت نے لاکھوں کشمیریوں کو محروم کیا ہوا ہے اور ہمارے وطن پر اس نے غاصبانہ قبضہ کیا ہوا ہے۔ آج بھی مقبوضہ کشمیر میں کرفیو جیسا سماں ہے۔ بھارت وہاں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں کر رہا ہے۔ ہم بھارتی جمہوریت کو نہیں مانتے۔ اسی لیے پوری دنیا میں آج کشمیری یوم سیاہ منا رہے ہیں۔‘‘

Pakistan Islamabad Proteste gegen indischen Tag der Republik (DW/A. Sattar)

اسلام آباد میں دفاعِ پاکستان کونسل کے زیر اہتمام منعقدہ ایک کانفرنس میں جماعتِ اسلامی کے امیر سراج الحق اور عوامی مسلم لیگ کے شیخ رشید بھی شریک ہوئے

اسلام آباد میں دفاعِ پاکستان کونسل کے رہنماؤں نے ایک کانفرنس میں کشمیر میں ہونے والی انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی بھر پور مذمت کی۔ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے حافظ سعید نے کہا، ’’نواز شریف اپنی ذمہ داریوں کا احساس کریں اور کشمیر میں شہید ہونے والوں کے گھرانوں کو فی کس پانچ لاکھ روپے دینے کا اعلان کریں۔ کشمیری پاکستانی ہیں، اگر یہاں دہشت گردی کے شکار ہونے والوں کے ورثاء کی مالی معاونت کی جاتی ہے تو کشمیریوں کی کیوں نہیں۔ انہوں نے وزیرِ اعظم نواز شریف کو مخاطب کرتے ہوئے کہا، میاں صاحب، آپ مودی اور ڈونلڈ ٹرمپ کو راضی نہیں کر سکتے، آپ کشمیریوں کے ساتھ کھڑیں ہوں۔‘‘

انہوں نے تجویز پیش کی کہ جو ملک بھی سی پیک میں شمولیت اختیار کرے، اس شمولیت کو اس بات سے مشروط کیا جائے کہ وہ ملک کشمیر کے مسئلے پر پاکستان کی حمایت کرے۔انہوں نے دعویٰ کیا کہ پاکستان میں کشمیر کے مسئلے پر ساری سیاسی جماعتیں متحد ہیں۔

کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے معروف کشمیری رہنما غلام محمد صفی نے کہا، ’’کشمیر پر باتیں کرنے والی پارٹیاں پہلے اپنے منشور میں دیکھیں، اگر اس میں انہوں نے کشمیر کے حوالے سے کچھ نہیں لکھا تو وہ پھر ڈرامے بازی بند کریں۔ کشمیر حکومتِ پاکستان اور ساری تنظیموں کی ترجیح ہونا چاہیے۔ صرف تقاریر سے مسائل حل نہیں ہوں گے بلکہ کشمیر کی آزادی کے لیے عملی جدوجہد کرنا ضروری ہے۔‘‘

امیرِجماعتِ اسلامی سراج الحق نے کہا، ’’مودی نے کشمیر میں خون بہانے کے ساتھ ساتھ پاکستان کا پانی بند کرنے کا بھی اعلان کیا ہے۔ ماضی میں بھی کشمیریوں کی قربانیوں کی وجہ سے بھارت مقبوضہ کشمیر میں ڈیم و بیراج نہیں بنا سکا، ورنہ پنجاب بنجر ہوچکا ہوتا۔ بھارت سرحد پر حملے اور کشمیر میں قتلِ عام کر رہا ہے لیکن ایک طبقہ پاکستان میں بھارتی فلموں کی نمائش کے لیے فکر مند ہے۔ بھارت کے ساتھ کشمیر کو چھوڑ کر کسی اور موضوع پر مذاکرات کرنا، کشمیریوں کی جدوجہد کو سبوتاژکرنے کے مترادف ہے۔‘‘

اس موقع پر ایک مشترکہ اعلامیہ بھی جاری کیا گیا، جس میں 2017ء کو کشمیر کے نام کرنے کا اعلان کیا گیا اور چھبیس جنوری سے لے کر پانچ فروری تک عشرہٴِ کشمیرمنانے کا بھی اعلان کیا گیا۔