1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

چين اپنی کرنسی کی قيمت گھٹائے، يورپ کا مطالبہ

برسلز ميں يورپی ايشيائی سربراہ کانفرنس جاری ہے، جس ميں يورپی ممالک نے چين سے يہ مطالبہ بھی کيا ہے کہ وہ اپنی مصنوعات کو سستے داموں فروخت کرنے کے لئے اپنی کرنسی کی قيمت کو جان بوجھ کر کم رکھنے کا سلسلہ بند کردے۔

default

برسلز ميں يورپی ايشيائی سربراہ کانفرنس

برسلز ميں يورپی ممالک کے نمائندوں نے چين پر اپنے اس دباؤ ميں اضافہ کرديا ہے کہ وہ اپنی کرنسی يوآن کی قيمت کو بڑھا دے۔ ايشيا کے اقتصادی طور پر طاقتور ممالک اور يورپ کے درميان کرنسی کے تبادلے کی شرحوں کے بارے ميں ايک عالمی تنازعہ پيدا ہونے کا انديشہ ہے۔

Asem Gipfel Brüssel 2010

کانفرنس ميں شريک فرانسيسی صدر، جرمن چانسلر اور روماينہ کے صدر،پہلی صف میں

چينی وزيراعظم وين جياباؤ نے برسلزميں 16 رکنی یورو زون کے رہنماؤں کے ساتھ چين اور دوسرے ملکوں پر ان شدت اختيار کرتے ہوئے الزامات کے بارے ميں تبادلہء خيال کيا ہے کہ وہ اپنی تجارت ميں اضافے کے لئے جان بوجھ کر اپنی کرنسی کی قيمت کو کم رکھ رہے ہيں۔

يورو زون کے وزرائے ماليات کے رہنما ژاں کلود يُنکر، يورپی مرکزی بينک کے سربراہ ژاں کلود تريشے اور اقتصادی امور کے یورپی کمشنر اَولی ريہن نے چينی وزير اعظم وين جيا باؤ کو بتايا کہ کہ اب چينی کرنسی کی شرح کے قدرتی طور پر متعين ہونے کا وقت آن پہنچا ہے۔

يُنکر نے 46 يورپی اور ايشيائی ممالک کی سال ميں دومرتبہ ہونے والی اس سربراہ کانفرنس کے دوران چينی وزير اعظم سے کہا کہ چينی کرنسی کی شرح تبادلہ مارکیٹ ميں اُس کی حقيقی قيمت سے کہیں کم ہے۔

Asem Gipfel Brüssel 2010

سربراہ کانفرنس کے شرکا

يُنکر نے يہ بھی کہا کہ چينی کرنسی کی وسيع سطح پر قيمت کے تعين سے خود چین اور عالمی معيشت کو بھی فائدہ ہوگا۔ تاہم چين کا کہنا ہے کہ يوآن کی قیمت ميں زیادہ اضافے سے چین ميں سماجی بے چينی کا ناقابل اندازہ خطرہ پيدا ہوسکتا ہے۔

اُدھر برازيل کے وزير ماليات مانٹيگا نے کہا کہ دنيا ابھی سے کرنسی کی ايک عالمی جنگ کا سامنا کر رہی ہے۔ حال ہی ميں کولمبيا سے لے کر سنگاپور تک بہت سے ملکوں نے اعتراف کيا ہے کہ وہ اپنی برآمدات ميں اضافے کے لئے اپنی اپنی کرنسی کی قيمتوں کو کم رکھنے کے طريقے اپنائے ہوئے ہیں۔

فرانسیسی صدر نکولا سارکوزی نے کہا کہ ہم کسی مالياتی نظام کے بغير ہی 21 ويں صدی ميں رہ رہے ہيں اور دنيا ميں کوئی جگہ ايسی نہيں، جہاں جملہ مالیاتی مسائل یکدم حل کئے جا سکيں۔

رپورٹ: شہاب احمد صدیقی

ادارت: مقبول ملک

DW.COM