1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’چمن کے قریب گولہ باری ’دہلی، کابل‘ گٹھ جوڑ کا نتیجہ ہے‘

پاکستان کے وزیر دفاع خواجہ آصف نے گزشتہ روز پاک افغان مغربی سرحد پر گولہ باری کو ’دہلی، کابل گٹھ جوڑ‘ کا نام دیا ہے۔ خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ افغانستان ایسی کارروائیاں اپنے اندرونی حالات سے توجہ ہٹانے کے لیے کر رہا ہے۔

Pakistan Verteidigungsminister Khawaja Muhammad Asif (picture-alliance/Anadolu Agency)

وزیر دفاع خواجہ آصف نے یہ بھی کہا کہ افغانستان اور پاکستان دونوں دہشت گردی کے خلاف جنگ میں فرنٹ لائن ریاستیں ہیں

پاکستانی وزیر دفاع نے آج میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ مغربی سرحد پر بھارت اور افغانستان کے گٹھ جوڑ سے محاذ آرائی کی جا رہی ہے۔ خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ اسلام آباد کابل کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے تیار ہے لیکن ہماری کوششوں کا کوئی مثبت جواب نہیں دیا جا رہا۔ پاکستانی وزیر دفاع نے گزشتہ روز کے حملوں کی مذمت کرتے ہوئے مزید کہا کہ سرحدی خلاف ورزیوں اور حملوں کا بھرپور جواب دیا جائے گا۔

پاکستانی فوج کی طرف سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق افغان فورسز نے پاکستانی فوجیوں پر اُس وقت فائر کھول دیے، جب وہ مردم شماری کرنے والی ایک ٹیم کے ہمراہ تھے۔ اس کے برعکس افغان ذرائع کا کہنا ہے کہ مردم شماری کرنے والی پاکستانی ٹیم افغان سرحد میں واقع گاؤں میں داخل ہو کر کام کر رہی تھی۔

گزشتہ روز پاکستان میں قلعہ عبداللہ کے ہسپتال کے ڈاکٹر نسیم اللہ کا جرمن نیوز ایجنسی ڈی پی اے سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ پاکستان میں دو خواتین سمیت نو شہری ہلاک ہوئے ہیں۔

دوسری جانب افغان پولیس کے سربراہ کی جانب سے گزشتہ روز جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا تھا کہ اس واقعے میں اُن کے چار سکیورٹی اہلکار اور دو شہری ہلاک ہوئے ہیں۔

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے شہر سیالکوٹ میں میڈیا سے گفتگو کے دوران وزیر دفاع خواجہ آصف نے یہ بھی کہا کہ افغانستان اور پاکستان دونوں دہشت گردی کے خلاف جنگ میں فرنٹ لائن ریاستیں ہیں اور ہماری حکومت چاہتی ہے کہ شدت پسندی کے خلاف یہ جنگ دونوں ممالک مل کر لڑیں۔

پاکستانی حکومت نے گزشتہ روز اسلام آباد میں افغان سفیر کو طلب کر کے اس واقعے پر شدید احتجاج بھی ریکارڈ کروایا تھا۔

Audios and videos on the topic