1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

چمن: پاک افغان سرحد پر گولہ باری، 15 ہلاک، 80 زخمی

پاکستان اور افغانستان کی سکیورٹی فورسز کے مابین چمن کی سرحدی گزرگاہ پر ہونے ہونے والی گولہ باری کے نتیجے میں کم از کم پندرہ افراد ہلاک اور اسّی کے قریب زخمی ہو گئے ہیں۔اس واقعے کے بعد دو طرفہ کشیدگی میں اضافے کا خدشہ ہے۔

پاکستان میں قلعہ عبداللہ کے ہسپتال کے ڈاکٹر نسیم اللہ کا جرمن نیوز ایجنسی ڈی پی اے سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ابھی تک پاکستان میں نو شہریوں کی ہلاکت ہو چکی ہے اور ان میں دو خواتین بھی شامل ہیں۔ انہوں نے یہ بتایا گیا کہ پاکستان کی طرف زخمیوں کی تعداد پنتالیس ہے اور ان میں پاکستان کے چھ سکیورٹی اہلکار بھی شامل ہیں۔

دوسری جانب افغان پولیس کے سربراہ نے بتایا ہے کہ اس واقعے میں ان کے چار سکیورٹی اہلکار اور دو شہری ہلاک ہوئے ہیں۔

 افغانستان کی طرف زخمی ہونے والوں کی تعداد میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ افغان میڈیا کی ابتدائی رپورٹوں کے مطابق 14 افغان سرحدی اہلکار اور 23 سویلین زخمی ہوئے ہیں جبکہ دیگر ذرائع نے زخمیوں کی تعداد 26 بتائی ہے۔

ان دو طرفہ جھڑپوں کا آغاز آج صبح سویرے ہوا اور فریقین کے اتفاق کے بعد ان کا اختتام گیارہ گھنٹے بعد ہوا۔ پاکستان اور افغانستان نے فائرنگ کرنے میں پہل کرنے کا الزام ایک دوسرے پر عائد کیا ہے۔

پاکستانی فوج کی طرف سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق افغان فورسز نے پاکستانی فوجیوں پر اُس وقت فائر کھول دیے، جب وہ مردم شماری کرنے والی ایک ٹیم کے ہمراہ تھے۔ افغان ذرائع کا کہنا ہے کہ مردم شماری کرنے والی پاکستانی ٹیم افغان سرحد میں واقع گاؤں میں داخل ہو کر کام کر رہی تھی۔

پاکستانی وزیر اعظم کی طرف سے جاری ہونے والے ایک بیان میں فائرنگ کے اس واقعے کو ’بدقسمتی‘ قرار دیا گیا ہے۔ وزیراعظم نواز شریف نے کابل حکومت سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا  کہ سرحد پار سے ہونے والے حملوں کا خاتمہ کیا جائے کیوں کہ یہ دونوں ملکوں کے مابین قائم امن کے لیے خطرہ ہیں۔

پاکستانی وزارت خارجہ کے ترجمان نفیس ذکریا کے مطابق جس وقت افغان فورسز نے فائرنگ کا سلسلہ شروع کیا، مردم شماری کرنے والی ٹیم پاکستانی سرحد کے اندر ہی تھی۔

اسلام آباد میں افغان سفیر کو طلب کرتے ہوئے اس واقعے پر شدید احتجاج ریکارڈ کروایا گیا ہے۔