1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

چلو دوستی کا ہاتھ بڑھاتے ہیں

بھارتی خارجہ سکریٹری نروپما راؤ اسلام آباد پہنچ گئی ہیں جہاں وہ اپنے پاکستانی ہم منصب سلمان بشیر کے ساتھ متعدد امور پر بات کریں گی اور اگلے ماہ بھارتی وزیر خارجہ ایس ایم کرشنا کے دورہ پاکستان کا ایجنڈہ بھی طے کریں گی۔

default

بھارت اور پاکستان کے مابین متعدد دیرینہ تنازعات کا حل ابھی باقی ہے

ان کے ساتھ داخلہ سکریٹری جی کے پلائی بھی اسلام آباد پہنچ گئے ہیں جو ہفتے کے روز شروع ہونے والی سارک ممالک کے وزرائے داخلہ کی وزارتی گروپ کی میٹنگ کا ایجنڈہ طے کریں گے۔

بھارت چاہتا ہے کہ ممبئی پر ہوئے دہشت گردانہ حملوں کے بعد پڑوسی ملک کے ساتھ جو تلخیاں پیدا ہوگئی تھیں اسے پس پشت ڈال کر اب آگے کا سفر طے کیا جائے۔ اس سلسلے میں وزات داخلہ پی چدمبرم کا دورہ بھی کافی اہم ہے جو ہفتے کو سارک ملکوں کے وزرائے داخلہ کی میٹنگ کے دوران اپنے پاکستانی ہم منصب رحمان ملک کے ساتھ باہمی امور پر تبادلہ خیال کریں گے۔ یہاں وزارت خارجہ کے ذرائع کا کہنا ہے کہ بھارت الزامات عائد کرنے کے بجائے امن اور دوستی کے نئے امکانات تلاش کرنے کی کوشش کرے گا ۔ وہ چاہتا ہے کہ اگر پاکستان چاہے تو 2006 میں امن مذاکرات کا جو آغاز ہوا تھا تعلقات کا نیاسرا وہیں سے دوبارہ قائم ہو۔ انہوں نے کہاکہ انہیں کشمیر کے مسئلے پر بات چیت کرنے میں کوئی پریشانی نہیں ہے۔ جامع مذاکرات کا نام دئے بغیر بھارت کشمیر‘ سیاچین‘ سرکریک‘ اور دیگر تمام امور پر بات چیت کرنے کے لئے تیار ہے ۔

Regenwasser Erntesystem in Pakistan

اسلام آباد میں نروپماراؤ کے ساتھ پاکستانی حکام کی بات چیت کو نہایت اہم قرار دیا جا رہا ہے

خارجہ سیکریٹری نروپما راؤ نے نامہ نگاروں سے بات چیت کرتے ہوئے اس تاثر کو بے بنیاد قرار دیا کہ نئی دہلی نے دہشت گردی کے معاملے پر اپنا موقف نرم کردیا ہے انہوں نے کہا کہ بھارت پاکستان کی سرزمین سے جاری دہشت گردی اور دہشت گردوں کا معاملہ ضرور اٹھائے گا۔ انہوں نے کہاکہ بھارت کو حافظ سعید کے بیانات سے کافی تشویش ہے اور وہ اسلام آباد سے کہے گا کہ ایسے عناصر کو نکیل ڈالی جائے۔ انہوں نے کہا کہ ”ہم ایک بار پھر پرزور دار طریقے سے یہ بات کہنا چاہتے ہیں کہ حافظ سعید جیسے لوگوں کی سرگرمیوں پر روک لگانے کی ضرورت ہے۔ ان لوگوں کی سرگرمیوں پر پابندی لگانے کی ضرورت ہے جو بھارت کے خلاف پرتشد د کارروائیوں کی حمایت کرتے ہیں۔ ایسے افراد کے خلاف موثر اقدامات کی ضرورت ہے۔ ہمیں یقین ہے کہ پاکستان میں انسداد دہشت گردی کے قوانین اور اس کے ضابطوں کے تحت اس طرح کے سخت اقدامات کی پوری گنجائش ہے اور ایسے اقدامات کئے جانے چاہئیں۔“

Der indische Innenminister P Chidamabaram in Neu Delhi

بھارتی وزیر داخلہ پی چدمبرم نئی دہلی میں

بھارت چاہتا ہے کہ اعتماد قائم کرنے کے لئے کچھ چھوٹے چھوٹے اقدامات کئے جائیں۔امید ہے کہ خارجہ سیکریٹری کی سطح کی اس میٹنگ میں بھارت اعتماد بحال کرنے کے لئے جن امور پر کچھ اقدامات کے اعلانات چاہے گا ان میں باہمی تجارت کو زیادہ سے زیادہ فروغ دینے‘ دونوں ملکوں کی کامرس کی وزارت کی میٹنگ جلد از جلد کرنے جیسے اقدامات شامل ہے۔ اس کے علاوہ بھارت کا خیال ہے کہ اگر پاکستان اسے افغانستان جانے کے لئے راہداری فراہم کرتا ہے تو یہ اعتماد کے قیام کے سلسلے میں ایک بہت بڑا قدم ثابت ہوسکتا ہے۔ اس کے علاوہ قیدیوں کے عرضیوں پر غوروخوض کے لئے دونوں ملکوں کی مشترکہ عدالتی کمیٹی کی میٹنگ جلد از جلد منعقد کرانے اور ریاست جموں کشمیر میں لائن آف کنٹرول کے دونوں طرف تجارت کو مزید مستحکم کرنے جیسے امور شامل ہیں۔

بھارتی خارجہ سیکریٹری نے گوکہ اعتراف کیا کہ پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف کچھ اقدامات ضرور کئے ہیں لیکن کہا کہ یہ ناکافی ہیں اوراسے ایسے موثر اقدامات کرنا ہوں گے جن سے دہشت گردی کا خاتمہ ہوسکے۔کیوں کہ جب تک دہشت گردی بند نہیں ہوتی ہے اس وقت تک دیگر امور میں پیش رفت کافی مشکل ہے۔ انہوں نے کہا کہ ”پاکستان نے جو اقدامات کئے ہیں ہم انہیں تسلیم کرتے ہیں۔ لیکن ممبئی پر ہوئے دہشت گردانہ حملوں کے قصورواروں کو سزا دلانے کے لئے یہ ناکافی ہیں۔یہ اقدامات ممبئی حملوں کے پس پشت اصل مقاصداور پوری سازش کو بے نقاب کرنے کے لئے کافی نہیں ہیں۔ یہ اقدامات مجرموں کو مثالی سزا دلانے کے لئے ناکافی ہیں۔ راؤ نے کہا ’میں اس بات کو اجاگر کروں گی کہ پاکستان کو ان امور پرتیز ی سے کام کرنے کی ضرورت ہے۔اور امریکہ میں مقیم ہیڈلی اور تہور حسین رانا کی گرفتاری اور ان سے پوچھ گچھ سے جو باتیں سامنے آئیں ہیں ان کی بنیاد پر آگے کام کرنے کی ضرورت ہے‘۔

Ajmal Qasab Mumbai Terror

اجمل قصاب کیس کے بعد سے پاک بھارت تعلقات مزیدہ کشیدہ ہوگئے

اس دوران یہاں پاکستان کے ہائی کمشنر شاہد ملک نے ڈوئچے ویلے سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان چاہتا ہے کہ بھارت سمجھوتہ ایکسپریس میں ہوئے بم دھماکے کی تفتیش کے سلسلے میں اسے آگاہ کرے۔ فروری 2007میں ہوئے اس دھماکے میں تقریباً70پاکستانی شہری جاں بحق ہوگئے تھے اور درجنوں دیگر زخمی ہوئے تھے۔ شاہد ملک نے کہا کہ اجمیر اور مالیگاوں میں ہوئے بم دھماکوں کے سلسلے میں جن لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے اس سے یہ اندازہ ہوتا ہے کہ سمجھوتہ ایکیسپرس میں ہوئے بم دھماکوں میں ہندودہشت گرد تنظیموں کا ہاتھ ہے انہوں نے کہا ”بھارتی حکومت نے ہم سے وعدہ کیا تھا کہ سمجھوتہ ایکسپریس میں ہوئے بم دھماکے کے متعلق تفتیش سے پاکستان کو آگاہ کیا جائے گا۔ ہم اس بات چیت کے دوران اس معاملہ کو اٹھائیں گے ۔ ہم امید کرتے ہیں کہ اس معاملے کی تفتیش کے سلسلے میں جو پیش رفت ہوئی ہے بھارت ہمیں اس سے آگاہ کرے گا۔“

شاہد ملک نے کہا کہ خارجہ سیکریٹری سطح کے مذاکرات کے دوران پاکستان مسئلہ کشمیر‘ کشمیر میں حقوق انسانی کی خلاف ورزیوں اور عسکریت پسندی سے نمٹنے کے لئے استعمال ہونے والے سخت قوانین کا معاملہ بھی اٹھائے گا ۔پاکستان کے ہائی کمشنر نے کہا کہ پاکستان کو کشمیر میں حقوق انسانی کی خلاف ورزیوں پر شدید تشویش ہے دوسری طرف بھارتی وزارت داخلہ کے ذرائع نے پاکستان کے اس مطالبے کو مسترد کردیا ہے کہ کشمیر سے آرمڈ فورسز اسپیشل پاور ایکٹ کو ختم کیا جائے ۔ ذرائع نے کہا کہ اس معاملے سے پاکستان کا کوئی تعلق نہیں بنتا ہے کیوں کہ یہ بھارت کا داخلی معاملہ ہے۔

Bhutan - Yousuf Raza Gilani und Manmohan Singh

یوسف رضا گیلانی اور من موہن سنگھ گزشتہ اپریل منعقدہ سارک سمٹ کے موقع پر

دریں اثنا بھارتی وزیر داخلہ پی چدمبرم بھی جمعہ کے روز پاکستان پہنچ رہے ہیں ۔ وہ سارک وزرائے داخلہ کانفرنس میں شرکت کے لئے اسلام آباد جارہے ہیں۔ اپنے قیام کے دوران وہ پاکستانی وزیر داخلہ رحمان ملک سے بھی ملاقات کریں گے۔ تمام لوگوں کی نگاہیں اس میٹنگ پر بھی لگی ہیں۔ حال ہی میں پاکستان نے بھارت کو جو ڈوزیر دیا تھا اس میں اجمل عامر قصاب کی حوالگی کا بھی مطالبہ کیا تھا۔ کیوں کہ پاکستان نے جو دستاویزات دئے تھے ان میں پاکستان کی ایک عدالت کی طرف سے جار ی کردہ گرفتاری کے وارنٹ کے کاغذات بھی شامل تھے۔تاہم بھارتی وزارت داخلہ کے ذرائع نے کہا کہ ممبئی حملوں میں زندہ بچ جانے والے واحد مجرم اجمل عامر قصاب کو پاکستان کے حوالے نہیں کیا جاسکتا کیوں کہ اس میں ضروری قانونی طریقہ کار نہیں اپنایا گیا ہے اور نہ ہی پاکستان کی کسی تفتیشی ایجنسی نے اس سلسلے میں پاکستان کی کسی عدالت میں درخواست دی ہے۔ پاکستان نے اجمل عامر قصاب کو سزا دینے والے بھارتی جج کو بھی گواہ کے طور پر پیش کرنے کا مطالبہ کیا ہے تاہم بھارت نے اس مطالبے کو بھی ٹھکرا دیا ہے اور کہا کہ اس کی کوئی ضرورت نہیں ہے کیوں کہ بھارت نے جو ڈوزیر پاکستان کو پیش کیا ہے اس میں تمام ضروری دستاویزات موجود ہیں۔ بھارتی وزیر خارجہ ایس ایم کرشنا اگلے ماہ پندرہ تاریخ کو پاکستان کے دورے پر جائیں گے۔

افتخار گیلانی نئی دہلی

ادارت کشور مصطفیٰ

DW.COM