1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پیپلزپارٹی اور مسلم لیگ نواز کے درمیان مفاہمت کی کوششوں میں عالمی رہنما بھی شامل

شریف برادران کی نا اہلی کے عدالتی فیصلے کے بعد سے بڑھتی ہوئی سیاسی محاذ آرائی پر قابو پانے کے لئے کھلی اور درپردہ مفاہمت کی کوششیں کی جا رہی ہیں۔ اور اب ان کوششوں میں کئی عالمی رہنما بھی شامل ہو گئے ہیں ۔

default

میاں نواز شریف اور صدر آصف زرداری

شریف برادران کی نا اہلی کے عدالتی فیصلے کے بعد سے بڑھتی ہوئی سیاسی محاذ آرائی پر قابو پانے کے لئے کھلی اور درپردہ مفاہمت کی جو کوششیں کی جا رہی ہیں ان میں پیپلز پارٹی کے بعض رہنمائوں کے علاوہ برطانیہ، امریکہ اوریورپی ممالک کے سفارت کار بھی پیش پیش ہیں۔

London kritisiert Moskaus Vorgehen gegen Kultureinrichtung

مفاہمت کی کوششوں میں برطانوی وزیرِ خارجہ ڈیوڈ ملی بینڈ بھی شریک ہیں

اس ضمن میں برطانوی وزیر خارجہ ڈیویڈ ملی بینڈ نے ہفتے کے روز صدر آصف علی زرداری کے ساتھ ٹیلی فون پر بات کی اور انہیں پاکستان میں جمہوری نظام کی مضبوطی کے لئے ہر طرح کے تعاون کی پیش کش کی جب کہ دوسری طرف برطانوی ہائی کمشنر ڈیوڈ برینکلے نے بھی رائیونڈ میں میاں شہباز شریف سے جبکہ قائم مقام امریکی سفیر نے اسلام آباد میں قائد حزب اختلاف چوہدری نثار علی خان سے ملاقاتیں کیں۔

ان رابطوں کے دوران امریکہ، برطانیہ اور یورپی یونین کے سفارت کاروں نے اس امید کا اظہار کیا کہ موجودہ صورتحال دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی کاوشوں کو نقصان پہنچانے کا سبب نہیں بنے گی۔

Pakistan der frühere Ministerpräsident Nawaz Sharif kehrt zurück

شریف برادران کی نا اہلی پر ملک بھر میں مظاہرے بھی کیے جا رہے ہیں

ادھر پیپلز پارٹی کے رہنما اوربلوچستان کے وزیر اعلیٰ اسلم رئیسانی نے مسلم لیگ نواز اور پیپلز پارٹی کے درمیان اختلافات کے خاتمے کے لئے صدر زرداری اور وزیراعظم یوسف رضا گیلانی سے ملاقات کے بعد میاں برادران سے بھی ٹیلی فون پر رابطہ کیا ہے اور توقع کی جا رہی ہے کہ وہ جلد ہی ان سے ملاقات بھی کریں گے۔ اس حوالے سے پیپلز پارٹی کے رہنما اور وفاقی وزیر نبیل گبول نے مفاہمت کی ان کی کوششوں کا اعتراف کرتے ہوئے بتایا کہ’’ مفاہمت کے لئے ہمارے اور بھی دوست بیچ میں شامل ہوئے ہیں۔ ان میں ہمارے غیر ملکی دوست بھی ہیں۔ انہوں نے ہم سے اور میاں برادران سے بھی مفاہمت کے لئے رابطے کئے ہیں۔ ہم بھی چاہتے ہیں کہ مفاہمت کا کوئی راستہ نکل آئے کیونکہ جو سیاست شریف برادران اور مسلم لیگ والے کر رہے ہیں ہم جانتے ہیں کہ اس کا نقصان جمہوریت کو پہنچ سکتا ہے‘

Pakistan Anwälte Demonstration in Islamabad

بارہ مارچ سے پاکستانی وکلاء بحالیِ عدلیہ کے لیے لانگ مارچ کر رہے ہیں جس کو نواز شریف کی حمایت حاصل ہے


ادھر سیاسی تجزیہ نگاروں کے خیال میں موجودہ صورتحال میں مسلم لیگ نواز کے برعکس حکمران پیپلز پارٹی کو زیادہ مفاہمانہ رویہ اپنانے کی ضرورت ہے اور اس سلسلے کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لئے اسے کچھ ہنگامی اقدامات بھی کرنا ہوںگے۔ اس بارے میں وضاحت کرتے ہوئے سیاسی تجزیہ نگار شفقت محمود کہتے ہیں:’’ یہ ناممکن نہیں ہے کہ مسلم لیگ نواز اور پیپلز پارٹی کے درمیان پھر سے مفاہمت ہو جائے ۔ میرے خیال میں اس کے لئے اس وقت سپریم کورٹ کا جو فیصلہ ہے اس کو واپس لینے کا کوئی طریقہ ڈھونڈنا پڑے گا ورنہ بات چیت بغیر کسی مقصد کے ہی ختم ہو گی۔‘‘

وکلاء کی طرف سے عدلیہ بحالی کےلئے 12مارچ سے لانگ مارچ کے آغاز کے اعلان اور شریف برادران کی طرف سے مرکزی حکومت خصوصاً صدر آصف علی زرداری کے خلاف اپنایا ہوا انتہائی سخت رویہ اس بات کا عکاس ہے کہ مارچ کا مہینہ پاکستانی سیاست اور ملک کے مستقبل کے تعین میں انتہائی اہم ثابت ہوگا