1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

’پینسٹھ ملین مہاجرین کو جرمنی میں نہیں بسایا جا سکتا‘

جرمنی کے پارلیمانی انتخابات کی مہم میں مہاجرین کا معاملہ پھر سے شدت کے ساتھ سر اٹھانے لگا ہے۔ الیکشن کے انعقاد میں اب دو ماہ سے کم کا عرصہ باقی رہ گیا ہے۔

جرمن شہر ٹُیوبنگن کے پینتالیس سالہ میئر بورس پالمر کا کہنا ہے کہ دنیا بھر کے پینسٹھ لاکھ تارکین وطن کو صرف جرمنی میں آباد نہیں کیا جا سکتا۔ پالمر کا تعلق جرمنی میں بائیں بازو کی جانب جھکاؤ رکھنے والی سیاسی جماعت گرینز پارٹی سے ہے۔

نئی ٹیکنالوجی: اب مہاجرین دوہری مراعات نہیں لے پائیں گے

’مہاجرین کو متبادل سفری دستاویزات کے ذریعے ملک بدر کیا جائے‘

کیا میرکل کی مہاجرین پالیسی ان کی شکست کا سبب بن سکتی ہے؟

ان خیالات کا اظہار انہوں نے اپنی جرمن زبان میں لکھی گئی کتاب Wir können nicht allen helfen میں کیا ہے۔ کتاب کے سرنامے کا ترجمہ یوں بھی کیا جا سکتا ہے: ’’ہم ہر کسی کی مدد نہیں کر سکتے۔‘‘ پالمر کی اس کتاب کا اجراء جرمنی میں پارلیمانی انتخابات کے انعقاد سے تقریباً سات ہفتے قبل کیا گیا ہے۔ کتاب کی تقریبِ رونمائی جرمن دارالحکومت برلن میں منعقد ہوئی۔

پالمر مہاجرین کے بحران پر فیس بک کے علاوہ ملکی ذرائع ابلاغ میں بھی اپنے خیالات کا اظہار مختلف انٹرویوز میں یا مضامین لکھ کر کرتے رہتے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ مہاجرین کے بحران کی وجہ سے جرمنی میں ایک واضح تقسیم نظر آتی ہے اور تقسیم کا یہی عمل جرمن معاشرے میں بہت سے خاندانوں میں بھی دیکھا جا رہا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ لوگ اپنی گفتگو میں اس معاملے پر بحث کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہیں۔

Trump Merkel (Picture alliance/AP Photo/M. Schreiber)

میرکل کے نزدیک میں مہاجرین کی انتہائی حد سالانہ بنیادوں پر دو لاکھ خیال کی جاتی ہے۔

جرمنی کی مرکزی اپوزیشن جماعت سوشل ڈیموکریٹک پارٹی بھی واضح کر چکی ہے کہ یہ بحران اب سنگین ہو چکا ہے۔ اسی طرح جرمن چانسلر انگیلا میرکل کی اتحادی ایک چھوٹی حکومتی جماعت کرسچین سوشل یونین کے سربراہ اور باویریا صوبے کے وزیر اعلیٰ ہورسٹ زےہوفر بھی مہاجرین کی زیادہ سے زیادہ ممکنہ حد کے تعین کا مطالبہ کر چکے ہیں۔ زےہوفر کے مطابق لامحدود تعداد میں مہاجرین کی آمد سے معاشرہ تناؤ کا شکار ہو کر رہ گیا ہے۔ انہوں نے واضح طور پر کہا ہے کہ مہاجرین کی تعداد کو محدود کیا جائے تا کہ اُن کا مناسب سماجی انضمام ممکن ہو سکے۔

موجودہ مخلوط جرمن حکومت میں شامل بڑی پارٹی اور چانسلر میرکل کی جماعت کرسچین ڈیموکریٹک یونین کے متعدد رہنماؤں کے نزدیک ملک میں مہاجرین کی انتہائی حد سالانہ بنیادوں پر دو لاکھ خیال کی جاتی ہے۔ میرکل کی سیاسی پارٹی کے ایک اہم رکن تھوماس اشٹروئبل کا خیال ہے کہ رواں برس کی انتخابی مہم میں مہاجرین کے مسئلے کے باعث عوامی منظر نامہ کشیدہ دکھائی دیتا ہے۔

DW.COM