1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پیرس: پینشن اصلاحات کے خلاف عوامی احتجاج جاری

فرانس کے دارالحکومت پیرس میں بدھ کے روز بھی حکومت کی جانب سے پینشن اصلاحات میں ترمیم پر احتجاج جاری۔

default

فرانسیسی صدر نیکو لا سارکوزی کی طرف سے پینشن کی اصلاحات کو اس ہفتے سینٹ میں ووٹینگ کے لئے پیش کیا جوئے گا۔ مگر فرانسیسی عوام ان اصلاحات پر خوش نہیں ہیں اور گزشتہ کئی ماہ سے ان اصلاحات کے خلاف فرانس بھر میں مزدوروں کی تنظیموں کی طرف سے مظاہرے اور ہڑتالیں بھی کی جارہی ہیں ،تیل کمپنی کے کارکنوں کی طرف سے ہڑتال کے بعد ملک بھر میں ایندھن کی کمی بھی ہوگئی تھی۔مگر صدر سارکوزی جن کو 18 ماہ بعد انتخابات بھی لڑنے ہیں،ابھی تک اس تمام تر دباؤ کے باوجود پینشن کی اصلاحات سے دست بردار نہیں ہوئے ہیں اور ان کو سنیٹ میں منطوری کے لئے پیش کریں گے۔

منگل کو فرانس بھر میں تقریبا ایک ملین افراد نے ایک اور مظاہرہ کیا ،یہ مظاہرہ جون سے اب تک ملک گیر سطح پر ہونے والا چھٹا قومی احتجاج ہے اور عوام کی طرف سے معاشی بہران زدہ یورپ میں نئ اصلاحات کے خلاف حکومتوں کے لئے ایک مستقل چیلنج بن گیا ہے۔

انہیں مظاہروں کے دوران کہیں کہیں مظاہرین میں آپس میں فسادات بھی پھوٹ پڑے خاص طور پر جنوب مشرقی شہر Lyon میں ایسے واقعات دیکھنے میں آئے جو کہ حکام کے لئے لمحہ فکریہ تھے کیونکہ یہ فسادات اس امر کی نشاندائی کرتے ہیں کہ کچھ شر پسند عناصر ان پرامن مظاہروں کو ہائیجیک کرنے کی کوشیش کر رہے ہیں۔

EU Anti Terror Konferenz in London Nicholas Sarkozy

فرانسیسی صدر نیکو لا سارکوزی

سیاسی ماہرین کا کہنا ہے کہ اصلاحات پر قوانین بن جائیں گے اور وقت کے ساتھ عوام کی مخالفت بھی ختم ہوجائے گی۔منگل کو ریل اور پروازوں کی ہڑتال کے بعد بدھ کو ہونےو الے مظاہروں کے بارے میں عام خیال یہی تھا کہ وہ زیادہ شدید نہیں ہونگے مگر ایندھن کی کمی کی وجہ سے شہریوں کو کافی پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔

ملک کے ساڑھے بارہ ہزار پیٹرول پمپوں میں سے تقریبا ہر تین میں سے ایک کا کاربار ایندھن کی کمی کی وجہ سے ٹھپ پڑ گیا ہے۔ فرانسیسی ٹیلیوژن کو ایک انٹرویو دیتے ہوئے ایک ٹیکسی ڈرائیور نے کہا: " ایندھن نہ ہونے کا مطلب ہے کہ ہمارا کام بند اور کام بند ہونے کا مطلب کھانے پینے کی اشیاء کی کمی اور یہ اچھی بات نہیں ہے۔"

فرانسیسی وزیر اعظم فرانکوئس فیلیون کا کہنا ہے کہ ایندھن کی سپلائے کچھ دنوں میں نارمل ہوجائے گی۔

رپورٹ: سمن جعفری

ادارت: کشور مصطفیٰ

DW.COM