1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پیرس حملے، پاکستانیوں کی مشکلات میں اضافے کا خدشہ

پیرس حملوں کے بعد جہاں پاکستان میں متاثرین کے ساتھ حکومتی اور عوامی سطح پر ہمدردی کا اظہار کیا جا رہا ہے، وہیں یورپ میں مقیم پاکستانیوں کے لیے ممکنہ مشکلات کے حوالے سے بھی خدشات میں اضافہ ہوا ہے۔

اس ضمن میں پاکستانی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے اپنے ایک تازہ بیان میں کہا ہے کہ فرانس اور دنیا میں دہشت گردی کے حالیہ واقعات سے بیرونِ ملک بالخصوص یورپ میں رہنے والے پاکستانیوں کے لیے مشکلات اور مسائل میں اضافہ ہو گا۔

اتوار کی شام جاری کیے گئے ایک بیان میں چوہدری نثار علی خان نے کہا، ’’بیرونی ممالک میں رہنے والے ہم وطن پاکستان کا اثاثہ ہیں اور انہیں بلاوجہ کی مشکلات اور مسائل سے بچانا ہم سب کی ذمہ داری ہے۔‘‘

انہوں نے کہا کہ دنیا کے مختلف ممالک میں پاکستانی سفارت خانوں کو ہدایات جاری کی گئی ہیں کہ موجودہ حالات میں پاکستانیوں کو تمام ممکنہ قانونی معاونت فراہم کی جائے۔

چوہدری نثار کا کہنا تھا کہ اس سلسلے میں وزارت داخلہ، وزارت خارجہ اور ایف آئی اے کے حکام کو ایک ایسی پالیسی اور لائحہ عمل وضع کرنا چاہیے جس سے بیرون ملک بسنے والے پاکستانیوں سے کسی غیر قانونی سلوک پر ان کی مدد کی جا سکے۔

چوہدری نثار علی خان کا کہنا تھا کہ کہ دہشت گردوں کے بعد انسانی اسمگلرز بیرون ملک سب سے زیادہ پاکستان کی بدنامی کا باعث ہیں اور اس کی روک تھام کے لیے ہنگامی اقدامات ناگزیر ہیں۔

اُنھوں نے کہا کہ انسانی اسمگلنگ میں ملوث افراد انسانیت اور پاکستانیت کے نام پر دھبہ ہیں۔ اُنہوں نے ایف آئی اے کو غیر قانونی انسانی اسمگلنگ کی روک تھام کے لیے اقدامات تیز کرنے کے ساتھ ساتھ اگلے دو روز میں ایک واضح لائحہ عمل وزارت داخلہ کو پیش کرنے کا حکم دیا، جس کی روشنی میں انسانی اسمگلنگ میں ملوث افراد کے بارے میں پالیسی کو مزید سخت کیا جائے گا۔

خیال رہے کہ پیرس حملوں کے بعد اس طرح کے خدشات کا صرف حکومتی سطح پر ہی اظہار نہیں کیا جارہا بلکہ یورپ میں رہنے والے پاکستانی شہریوں کے اہل خانہ، رشتے دار اور عزیز واقارب بھی پریشان ہیں۔

فرانس کے دارالحکومت پیر س میں مقیم سجاد (فرضی نام) کے بھائی سہیل نے اسلام آباد میں ڈی ڈبلیو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ان کا چھوٹا بھائی روز گار کے سلسلے میں گزشتہ تیرہ سال سے پیرس میں رہائش پذیر ہے۔ سہیل کا کہنا ہے کہ ماضی میں جب بھی فرانس میں انتہا پسندی یا دہشتگردی کا کوئی انفرادی واقعہ رونما ہویا پھر پیغمبر اسلام کے خاکوں کی اشاعت کے بعد ہونے والے حملے، انہیں ہمیشہ اپنے بھائی کی سلامتی کا خدشہ لاحق رہتا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ’’اب بھی جو حملے ہوئے ہیں تو ہمارے سارے خاندان اور دوستوں کے فون آرہے ہیں، وہ بھائی کی خیریت کا پوچھ رہے ہیں، میں نے اسے فون کیا تو وہ مجھے حوصلہ دے رہا تھا کہ سب ٹھیک ہے لیکن میں سمجھ سکتا ہوں کہ وہ اندر سے پریشان تھا۔‘‘

سہیل کا کہنا تھا کہ وہ اپنے بھائی کو واپس اپنے ملک پاکستان آ جانے کا مشورہ دینا چاہتے تھے لیکن پھر وہ پاکستان میں دہشت گردی کے واقعات کو دیکھتے ہوئے ایسا نہیں کر سکے۔