1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

پہلے اور اب: بھارتی ’اقتصادی انقلاب‘ کے بیس سال

بیس سال پہلے اسی ہفتے بھارت میں اقتصادی اصلاحات رائج کی گئی تھیں۔ تب بھارت ایک ایسا ملک تھا، جہاں آپ مثلاً کوکا کولا نہیں خرید سکتے تھے، ٹیلی فون لائن لینے میں ایک سال لگ جاتا تھا اور ملک بھر میں صرف ایک ٹی وی چینل تھا۔

نئی دہلی میں انڈیا فیشن ویک

نئی دہلی میں انڈیا فیشن ویک

نئی دہلی کے ایک گیراج کے 56 سالہ مالک پرمود بھسین بتاتے ہیں کہ اقتصادی انقلاب کا آغاز 24 جولائی 1991ء کو منظور ہونے والے بجٹ کے ساتھ ہی ہو گیا تھا اور یہ کہ اُس تاریخ سے پہلے اور بعد کی زندگی میں اُنہیں زمین آسمان کا فرق نظر آتا ہے:’’شہر سے باہر فون کرنے کی ضرورت پڑتی تھی تو باقاعدہ کال بُک کروانا پڑتی تھی اور گھنٹوں انتظار کرنا پڑتا تھا۔ اسی طرح گھر پر ٹیلیفون لگوانا دفتر شاہی کے ساتھ ایک نہ ختم ہونے والی جنگ ہوا کرتی تھی۔‘‘

1991ء سے پہلے بھارت تقریباً ہر قسم کی بیرونی سرمایہ کاری کے خلاف تھا۔ ملکی قیادت کے سوشلسٹ اور قوم پرستانہ نظریات کے اثرات کے تحت ملک خود کفالت کی راہ پر گامزن ہونے کی کوشش میں رہتا تھا اور بین الاقوامی برانڈ خال خال نظر آتے تھے۔ تاہم یہ پابند معیشت رفتہ رفتہ ملکی معیشت کو تباہی کے دہانے پر لے آئی تھی۔

ماڈرن بھارتی خواتین شاپنگ کرتے ہوئے

ماڈرن بھارتی خواتین شاپنگ کرتے ہوئے

پرمود بھسین، جو آج 23 اور 18 سال کی عمروں کی فیشن کی دلدادہ دو بیٹیوں کے والد ہیں، بتاتے ہیں:’’اُس زمانے میں مصنوعات اور سروسز محدود تعداد میں دستیاب تھیں۔ لوگ بیرون ملک بسنے والے اپنے رشتہ داروں کی منتیں کیا کرتے تھے کہ وہ آتے ہوئے اُن کے لیے لیوی کی جینز یا پھر الیکٹرانک مصنوعات لیتے آئیں۔ ستر کے عشرے میں مَیں امریکہ میں رہا اور مَیں جانتا تھا کہ باہر کی دُنیا کیسی ہے۔ یہاں بھارت میں 95 فیصد مصنوعات بھارت کی بنی ہوتی تھیں اور محض چند گنی چُنی جگہوں پر ہی غیر ملکی مصنوعات فروخت ہوتی تھیں۔ ‘‘

پہلے بھارتی شہری شاذ ہی بیرونی ممالک کے سفر پر جاتے تھے، آج کل خوشحال بھارتی کسی قسم کی پریشانی کے بغیر ملائیشیا یا پھر تھائی لینڈ وغیرہ میں تعطیلات گزارنے جاتے ہیں۔ اب براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری پر سے بھی پابندی ختم ہو چکی ہے ۔ اب اپنا کاروبار شروع کرنے والوں کو دفتر شاہی کی رکاوٹوں کا بھی اتنا زیادہ سامنا نہیں کرنا پڑتا۔

ایک بھارتی بزنس مین اپنے کمپیوٹر کے سامنے پوجا کرتے ہوئے

ایک بھارتی بزنس مین اپنے کمپیوٹر کے سامنے پوجا کرتے ہوئے

کوکا کولا اور پیپسی کی غیر موجودگی میں سن 1977ء میں بھارت میں تھمبز اَپ نامی مشروب متعارف کروایا گیا تھا۔ 1991ء میں منڈیوں کے دروازے کھلے تو کوکا کولا کمپنی نے تھمبز اَپ کو خرید لیا۔ ملکی سطح کا یہ مشروب آج بھی کروڑوں بھارتیوں کی پسند ہے اور سب سے زیادہ فروخت ہوتا ہے۔

اب بھارت کی سڑکوں پر ایمبیسیڈر ہی نہیں بلکہ غیر ملکی برانڈز کی کاریں بھی نظر آتی ہیں جبکہ صرف دور درشن کی بجائے ٹی وی چینلز کی بھی بھرمار ہے۔ بھارتی عوام کی اکثریت اس اقتصادی انقلاب کو سراہتی ہے تاہم اُن کے خیال میں اس انقلاب کو اِس سے کہیں آگے تک جانا چاہیے تھا۔ مزید یہ کہ اس انقلاب کے روحِ رواں من موہن سنگھ وزیر اعظم کے طور پر معاشی میدان میں اُتنے مؤثر نہیں رہے ہیں، جتنے کہ وہ وزیر خزانہ کے طور پر تھے، جب ان اقتصادی اصلاحات کی داغ بیل ڈالی گئی تھی۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: عدنان اسحاق

DW.COM

ویب لنکس