1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

پہلی بڑی افغان ٹرین سروس کا آزمائشی سفر مکمل

افغانستان میں ریلوے کے پہلے بڑے منصوبے کے تحت چلائی جانے والی ٹرین آزمائشی سفر مکمل کرتے ہوئے بدھ کو اپنی منزل پر پہنچ گئی ہے۔ یہ سفر ازبکستان کے ساتھ ملنے والی افغان سرحد سے شروع ہوا تھا۔

default

یہ ریلوے لائن افغانستان کے شمالی علاقے میں بچھائی گئی ہے، جس سے امریکی فوج کے لیے رسد کی فراہمی میں سہولتوں کی اُمید بھی کی جا رہی ہے۔ ساتھ ہی مستقبل میں تجارتی مقاصد کے لیے اس کے استعمال کی اُمید بھی ہے۔

افغانستان کے نائب وزیر برائے پبلک ورکس نور گُل منگل کا کہنا ہے کہ یہ ٹرین پچہتر کلومیٹر کے ٹریک پر آزمائشی سفر کے بعد بدھ کو مزار شریف پہنچی۔

یہ ریلوے لائن افغانستان کو اس کے ہمسایہ ممالک کے وسیع تر ریل نیٹ ورک سے ملانے کے منصوبے کا پہلا مرحلہ ہے۔

ایشیائی ترقیاتی بینک (اے ڈی بی) کے ماہرِ اقتصادیات Juan Miranda کا کہنا ہے کہ اس منصوبے سے کارگو کی ترسیل کا عمل سہل ہو جائے گا۔

خبر رساں ادارے اے پی کے مطابق امریکی محکمہ دفاع کے ایک ترجمان کا کہنا ہے کہ ریلوے سے امریکی فوجیوں کے لیے رسد کی ترسیل کا نظام تیز تر ہو جائے گا۔

Schienen

افغانستان میں ریلوے کا نظام نہ ہونے کے برابر ہے

افغانستان کی وزارتِ کان کنی نے اکتوبر میں اعلان کیا تھا کہ چائنا ریلوے گروپ کابل سے پاکستان کی سرحد پر تورخم اور شمال سے مزار شریف تک نو سو اکیس کلومیٹر کے ریلوے ٹریک کے لیے ایک مطالعہ کرے گا۔ یہ اسٹڈی کان کنی کے لیے چین کی کمپنی ایم سی سی کی جانب سے کرائی جائے گی۔ اس کمپنی کو تانبے کے ذخائر تلاش کرنے کے اختیارات حاصل ہیں۔

اکتوبر ہی میں افغان پارلیمنٹ نے مزار شریف کے ریل منصوبے کے لیے بیس ملین ڈالر کی منظوری دی تھی۔ اس منصوبے کے لیے ایک سو پینسٹھ ملین ڈالر ایشیائی ترقیاتی بینک نے فراہم کیے۔ یہ بینک وزارتِ پبلک ورکس کے تحت ریلوے ڈیپارٹمنٹ کے قیام کے لیے بھی فنڈز فراہم کر رہا ہے۔ اس حوالے سے منصوبہ بندی کی نگرانی فی الحال وزارتِ کان کنی کر رہی ہے۔

واضح رہے کہ افغانستان مین انیسویں صدی سے ہی ریلوے نظام کی منصوبہ بندی ہوتی رہی ہے، جو کبھی تکمیل تک نہیں پہنچ سکی تھی۔

رپورٹ: ندیم گِل / خبر رساں ادارے

ادارت: امجد علی

DW.COM

ویب لنکس

ملتے جلتے مندرجات