1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

پھیلتے صحراؤں کو روکنے میں چین کی ابتدائی کامیابی

چین کا تقریباً ایک چوتھائی رقبہ صحراؤں سے ڈھکا ہوا ہے۔ سالہا سال تک موسمیاتی تبدیلیوں اور انسانوں اور جانوروں کی جانب سے سرسبز علاقوں کے بے تحاشا استعمال کے نتیجے میں صحرائی علاقے زیادہ سے زیادہ پھیلتے چلے گئے ہیں۔

default

خاص طور پر ملک کے شمالی اور شمال مغربی علاقے بے حد خشک ہیں۔ چین کروڑوں نئے درخت لگاتے ہوئے اور صحرائی علاقوں میں بڑی محنت سے سبزہ اگاتے ہوئے آگے بڑھتی ہوئی ریت کے آگے بند باندھنے اور پھر سے زرخیز زمینیں حاصل کرنے کی کوششیں کر رہا ہے۔

چین کا صحرائی رقبہ تقریباً 2.6 ملین مربع کلومیٹر یعنی جرمنی کے رقبے کا تقریباً سات گنا بنتا ہے۔ ریت کو آگے بڑھنے سے روکنے کی کوششیں چھوٹے چھوٹے مراحل میں آگے بڑھ رہی ہیں۔

گھاس پھونس کے گٹھے زمین کو اس حد تک مضبوط بنا دیتےہیں کہ اُن کے اوپر تازہ گھاس اُگانے کا عمل شروع کیا جا سکتا ہے

گھاس پھونس کے گٹھے زمین کو اس حد تک مضبوط بنا دیتےہیں کہ اُن کے اوپر تازہ گھاس اُگانے کا عمل شروع کیا جا سکتا ہے

یہ شاپوٹُو ہے، چین کے شمال مغربی صوبے نِنگ سیا کا وہ علاقہ، جہاں دور دور تک ریت کے سوا کچھ نظر نہیں آتا۔ صحرا کے کنارے پر گھاس پھونس کے چوکور شکل کے بے شمار گٹھے ہاتھوں سے ریت میں دبائے جا رہے ہیں تاکہ زمین کو مضبوط کیا جا سکے۔ ہر گٹھا ایک ضرب ایک میٹر سائز کا ہے۔

مقامی انتظامیہ کے ایک عہدیدار ژونگ سُو چَینگ کے مطابق یہ طریقہ ریت کو آگے بڑھنے سے روکنے کے سلسلے میں کامیاب ثابت ہوا ہے تاہم ساتھ ہی وہ یہ بھی کہتے ہیں:’’ریت کو زیادہ وسیع محاذ پر آگے بڑھنے سے روکنا بہت مشکل ہے۔ ہم محض صحراؤں کے کناروں پر، ریلوے لائن کی دونوں طرف، سڑکوں کے کنارے اور دیہات اور شہروں کے اردگرد ہی یہ طریقہ استعمال کر پا رہے ہیں۔ اس کے سوا کوئی اور چارہ نہیں ہے۔ ہم لوگوں کی بقا کو یقینی بنانے کے لیے ریت پر قابو پانے کی کوششیں کر رہے ہیں۔‘‘

گھاس پھونس کے گٹھے زمین کو اس حد تک مضبوط بنا دیتےہیں کہ اُن کے اوپر تازہ گھاس اُگانے کا عمل شروع کیا جا سکتا ہے۔ جب ایک بار گھاس اُگنے لگتی ہے تو پھر زیادہ بڑے پودوں کے لیے راہ ہموار ہو جاتی ہے۔ اسی طریقے پر عمل کرتے ہوئے شاپوٹُو کے اردگرد پھل دار درختوں کے باغات اور انگوروں کی بیلیں لگائی گئی ہیں۔ اس کے برعکس نِنگ سیا صوبے کے دیگر علاقوں میں لوگ صحرا کے خلاف اپنی جنگ ہار چکے ہیں۔

ایک چینی باشندہ صحرا کو آگے بڑھنے سے روکنے کے لیے گھاس بچھا رہا ہے

ایک چینی باشندہ صحرا کو آگے بڑھنے سے روکنے کے لیے گھاس بچھا رہا ہے

نئے مکانات پر مشتمل اِس بستی میں ما ڈَینگ پَینگ اپنے گھر کے پچھواڑے میں بھیڑوں کو چارہ ڈال رہا ہے۔ وہ رضاکارانہ طور پر یہاں نہیں رہ رہا بلکہ وہ اور اُس کا خاندان صحرا کے ڈر سے بھاگے ہیں اور حکومت نے اُنہیں اِس نئی آبادی میں لا کر بسایا ہے۔ وہ بتاتا ہے:’’جب ریت آتی تھی تو وہ سیاہ ہوا کی طرح دکھائی دیتی تھی۔ اُسے روکنا ناممکن ہوتا تھا۔ ہم اپنے اپنے گھروں میں چھپنے پر مجبور ہو جاتے تھے اور باہر نکل ہی نہیں سکتے تھے۔‘‘

نِنگ سیا کا صوبہ ہمیشہ سے ایسا نہیں تھا۔ شمالی چین کا یہ علاقہ بے حد سرسبز ہوا کرتا تھا تاہم موسمیاتی تبدیلیوں اور پانی کے غیر ذمہ دارانہ استعمال کے باعث اب بہت کچھ غائب ہو چکا ہے۔ اس صورتحال کی ایک بڑی وجہ 70ء کے عشرے کی زرعی اصلاحات بھی ہیں، جن کے بعد مویشیوں کی تعداد پر سرکاری کنٹرول ختم ہو گیا اور ہر کنبے نے پانی اور گھاس پر دباؤ کی پروا کیے بغیر اپنی اپنی بھیڑوں اور بکریوں کی تعداد بڑھانا شروع کر دی۔ یوں سبزہ غائب ہونا شروع ہو گیا اور زرخیز زمین بالآخر صحراؤں میں تبدیل ہوتی گئی۔

epa02735890 (13/24) A fallen tree lies in the Taminchagan desert of Kunlun Qi, in the Inner Mongolia Autonomous Region of China, 24 April 2011. Inner Mongolia, Chinaâ€_s third largest province, is fighting severe desertification, much like the provinces of Xinjiang, Gansu, Qinghai, Ningxia, Shaanxi, Heilongjiang and Hebei. Over-grazing, logging, expanding farms and population pressure, along with droughts have steadily turned once fertile grasslands into sandy plains. China has adopted measures to stop the land degradation such as reforestation, resettling nomadic Mongolians from grasslands to urban areas and restricting grazing areas. Tree planting has become a key government effort to fight desertification. Many non-governmental organizations (NGOs) are supporting the governmentâ€_s reforestation endeavors. The NGO Shanghai Roots and Shoots launched the Million Tree Project in 2007 in Kulun Qi witht the aim to plant its first million trees by 2014 to slow the expantion of the desert. To-date, they have planted more than 600,000 trees. EPA/HOW HWEE YOUNG ***PLEASE REFER TO THE ADVISORY NOTICE (epa02735877) FOR COMPLETE FEATURE TEXT*** +++(c) dpa - Bildfunk+++

چین میں صحرائی علاقے کا ایک منظر

اب حکومت نے چرواہوں کو اپنی بھیڑ بکریاں باہر کھلی فضا میں چرانے سے منع کر دیا ہے۔ ساتھ ساتھ پورے شمالی چین میں کروڑوں درخت لگا کر ایک طرح کی سبز دیوار بنائی جا رہی ہے۔ یہاں جس طرح سے صحرائی زمین پر پھر سے سبزہ اگایا گیا ہے، وہ دیگر بہت سے علاقوں کے لیے مثالی حیثیت رکھتا ہے۔ سرکاری اندازوں کے مطابق چین اس طرح کے طریقوں کے ذریعے اپنے صحرائی رقبے کا بیس فیصد حصہ واپَس حاصل کر سکتا ہے لیکن اس سارے عمل میں تقریباً 300 سال لگ جائیں گے۔

رپورٹ: رُوتھ کرشنر (بیجنگ) / امجد علی

ادارت: کشور مصطفیٰ

DW.COM

ویب لنکس