1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

پھیلتے شہر اور خوراک کا ضیاع

ایک نئی رپورٹ کے مطابق جس طرح شہر پھیل رہے ہیں ویسے ہی خوراک کے ضائع ہونے میں اضافہ ہوا ہے۔ حکومتوں اور سماجی تنظیموں سے کہا گیا ہے کہ وہ فوڈ ویسٹ کے عمل پر توجہ دیں اور عام لوگوں کے لیے معلوماتی پروگرام شروع کیے جائیں۔

ایک اندازے کے مطابق دنیا بھر کے انسانوں کے لیے تیار کی گئی خوراک کا ایک تہائی حصہ ضائع ہو جاتا ہے۔ اس ضائع ہو جانے والی خواراک کا سالانہ حجم 1.3 بلین ٹن لگایا گیا ہے۔ اقوام متحدہ کے ذیلی ادارے فوڈ اینڈ ایگریکلچرل آرگنائزیشن کی ایک رپورٹ کے مطابق دنیا کی کل آبادی کا 54 فیصد شہروں میں آباد ہے اور شہر مسلسل پھیل رہے ہیں۔ ایک بین الاقوامی ادارے ’سَسٹین ایبل گلوبل ریسورسز‘ کے ڈائریکر میرون جونز کا کہنا ہے کہ سن 2050 میں شہری آبادی میں مزید 12 فیصد اضافہ ہونے سے اس کا حجم 66 فیصد ہو جائے گا۔

اقوام متحدہ کے ادارے کی رپورٹ سنگا پور میں صاف توانائی کی سمٹ سے قبل جاری کی گئی ہے۔ ’کلین اینویرو سمٹ‘ گیارہ سے تیرہ جولائی تک جاری رہے گی۔ اِس سمٹ کا اہتمام سنگا پور میں ’انٹرنیشنل واٹر ویک‘ کے دوران کیا گیا ہے۔ اسی ویک میں ’ورلڈ سِیٹیز سمٹ‘ کا انعقاد بھی کیا جا رہا ہے۔ ان دونوں بین الاقوامی کانفرنسوں میں شہروں کے ترقیاتی معاملات کے ساتھ جڑے انتظامی چیلنجز کو زیرِ بحث لایا جائے گا۔

Frankreich Lebensmittelverschwendung

برطانیہ میں ’خوراک سے پیار، ضائع کرنا ناپسندیدہ عمل‘ نامی مہم شروع ہے

اقوام متحدہ کے خوراک و زراعت کے ادارے (FAO) کے ایک ریسرچر برائن لپنسکی کا کہنا ہے کہ جس انداز میں شہروں کی حدیں پھیل رہی ہیں، اس کے مطابق سن 2050 میں شہروں کی سکونت اختیار کرنے والوں کو 60 فیصد زیادہ کیلوریز درکار ہوں گی اور اِس کے لیے سبز مکانی گیسوں کے بےپناہ اخراج کے ساتھ ساتھ شہروں میں کوڑا کرکٹ بھی زیادہ پیدا ہو گا۔ اندازہ لگایا گیا ہے کہ سن 2050 تک زمین پر انسانی آبادی نو ارب سے تجاوز کر جائے گی اور اتنی بڑی آبادی کے لیے خوراک کی فراہمی بذات خود ایک بہت بڑا چیلنج ہو گی۔ لپنسکی کے مطابق فصلوں کی کاشت زیادہ ہونے کے ساتھ اُن کی کٹائی کے لیے مشینوں کا استعمال فضا میں کاربن کے زائد اخراج کا سبب بنے گا۔

شہروں میں خوراک کی مناسب تقسیم کے لیے جنوبی افریقی فوڈ بینک کا ماڈل سامنے لایا گیا ہے۔ جنوبی افریقی فوڈ بینک اشیائے خور و نوش کے ڈیلروں اور پرچون فروشوں سے اضافی خوراک کا سامان خرید کر باقاعدہ خوراک تیار کرتا ہے اور پھر اِسے مستحق افراد میں تقسیم کیا جاتا ہے۔ فوڈ بینک نے گزشتہ برس 3350 ٹن خوراک مستحقین میں تقسیم کی تھی۔جنوبی کوریا نے اپنے شہریوں پر خوراک پھینکنے کی اضافی فیس عائد کر دی ہے تاکہ خوراک کے ضیاع کی حوصلہ شکنی ہو سکے۔ اسی طرح برطانیہ میں ’خوراک سے پیار، ضائع کرنا ناپسندیدہ عمل‘ نامی مہم شروع کی گئی ہے۔

DW.COM