1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پيرس ميں ’ليبيا کے دوستوں کی کانفرنس‘

فرانسيسی صدر سارکوزی نے بين الاقوامی نمائندوں کو ايک کانفرنس ميں شرکت کی دعوت دی ہےجسے اُنہوں نے’’ ليبيا کے دوستوں کی کانفرنس‘‘ کا نام ديا ہے۔ کانفرنس کا مرکزی موضوع ليبيا کے جنگ سے تباہ شدہ اقتصادی ڈھانچے کی تعمير ہے۔

صدر نکولا سارکوزی

صدر نکولا سارکوزی

نکولا سارکوزی نے پيرس ميں آج يکم ستمبر کو ہونے والی اس کانفرنس کی تاريخ کا چناؤ سوچ سمجھ کر کيا ہے۔ اسی دن معمر القذافی اپنے اقتدار سنبھالنے کا سالانہ جشن منايا کرتے تھے۔ اب مستقبل ميں اسے ليبيا ميں جمہوريت کے رائج ہونے کا دن قرار ديا جائے گا۔

ليبيا کے خلاف کارروائی ميں سب سے زيادہ پيش پيش فرانسيسی صدرسارکوزی نے 60 سے زائد ملکوں کے نمائندوں کو اس کانفرنس ميں شرکت کی دعوت دی ہے۔ وہ سب مل کر يہ غور کريں گے کہ جنگ اور نيٹو کی بمباری سے تباہ ہونے والے شہروں اور مختلف قسم کے عوامی مقامات کی تعمير نو کس طرح کی جائے اور خصوصاً مغربی ممالک ميں منجمد کی جانے والی ليبيا کی رقوم کو کس قدر جلد رسائی کے قابل بنايا جا سکتا ہے۔ اس کے علاوہ قذافی پر نيٹو اور باغيوں کی فتح کی کچھ خوشی منانا بھی اس کانفرنس کا مقصد ہے۔

ليبيا کے باغی جاری لڑائی ميں ايک وقفے کے دوران

ليبيا کے باغی جاری لڑائی ميں ايک وقفے کے دوران

    ليبيا ميں جنگ کی شديد تباہی کے بعد آبی فراہمی، بجلی کی سپلائی اور ٹيلی فون کی تنصيبات کی تعمير نو کے ليے غيرملکی کمپنيوں کو بڑے بڑے ٹھيکے ديے جائيں گے۔

اس کانفرنس کا پيرس ميں منعقد ہونا قذافی کے خلاف جنگ ميں فرانس کے قائدانہ کردار سے مربوط ہے۔ فرانس نے برطانيہ کے ساتھ مل کر ليبيا پر سب سے زيادہ فضائی حملے کيے اور اُس نے دوسرے تمام ممالک سے پہلے ليبيا کے باغيوں کی قومی عبوری کونسل کو ملک کی واحد جائز نمائندہ کے طور پر تسليم کيا۔ سارکوزی کے مطابق نيٹو کی ليبيا کے خلاف کارروائی يورپ کے ليے بھی ايک تاريخی اقدام تھا: ’’يورپيوں نے پہلی مرتبہ يہ ثبوت ديا ہے کہ وہ اپنے دروازے کے سامنے برپا کسی تنازعے ميں فيصلہ کن مداخلت کی صلاحيت رکھتے ہيں۔ ليبيا بحيرہ روم کے علاقے ميں ہے اور بحيرہ روم پہلے يورپ اور اس کے بعد امريکہ کا معاملہ ہے۔‘‘

قذافی اپنی اہليہ کے ساتھ، 1997

قذافی اپنی اہليہ کے ساتھ، 1997

آج پيرس کی يہ کانفرنس ليبيا کو مالی مدد فراہم کرنے والے ممالک کی کانفرنس نہيں ہے۔ اس پر جرمن حکومتی ترجمان نے بھی زور ديا۔ گذشتہ دنوں کے دوران کئی اطراف سے يہ کہا جا چکا ہے کہ ليبيا ايک امير ملک ہے۔ کانفرنس ميں ليبيا ميں بين الاقوامی امن فوج کی تعيناتی پر بھی غور نہيں ہو گا۔ اس طرح اس کی نوعيت علامتی ہی سمجھی جا سکتی ہے۔

رپورٹ: ڈانئيلا يُنگ ہانس، پيرس / شہاب احمد صديقی

ادارت: عابد حسین   

 

DW.COM