1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پونے دو لاکھ انسانوں کا معاون قاتل: عمر 94 برس، سزا پانچ سال

نازی جرمن دور میں آؤشوِٹس کے اذیتی کیمپ کے ایک سابق محافظ اور قریب پونے دو لاکھ انسانوں کے اس وقت چورانوے سالہ معاون قاتل کو پانچ سال قید کی سزا سنا دی گئی ہے۔ سزا یافتہ مجرم کا نام رائن ہولڈ ہیننِگ ہے۔

Deutschland Detmold Prozess gegen Reinhold Hanning früherer Auschwitz-Wachmann

رائن ہولڈ ہینِنگ کی یہ تصویر عدالت کی طرف سے سزا سنائے جانے کے وقت لی گئی

جرمن شہر ڈَیٹمولڈ سے جمعہ سترہ جون کو ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق یہ سابق نازی فوجی ہٹلر دور کے ایس ایس دستوں کا ایک گارڈ تھا۔ آج جمعے کے روز ایک عدالت نے اسے آؤشوِٹس کے اذیتی کیمپ میں قتل عام کے طویل عرصے تک رونما ہونے والے بہت سے واقعات کا معاون مجرم قرار دیتے ہوئے یہ سزائے قید سنائی۔

آؤشوِٹس (Auschwitz) کا اذیتی کیمپ نازیوں نے مقبوضہ پولینڈ میں قائم کر رکھا تھا جہاں مجموعی طور پر لاکھوں انسانوں کو موت کے گھاٹ اتارا گیا تھا۔ اِس وقت 94 سالہ رائن ہولڈ ہیننِگ کو یہ سزا اسی کیمپ میں ایک لاکھ ستر ہزار انسانوں کا معاون قاتل ثابت ہو جانے پر سنائی گئی ہے۔

اے ایف پی کے مطابق آج جب کہ دوسری عالمی جنگ کو ختم ہوئے سات عشروں سے بھی زائد کا وقت گزر چکا ہے، مجرم ہیننِگ کے خلاف اپنے اختتام کو پہنچ جانے والا یہ مقدمہ شاید دنیا میں اپنی نوعیت کی وہ آخری عدالتی کارروائی ثابت ہو جس کا مقصد ہولوکاسٹ کے مرتکب کسی مجرم کو سزا دلوانا ہو۔

ڈَیٹمولڈ کی عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا، ’’170000 واقعات میں قتل کے عمل میں معاون ثابت ہونے پر ملزم کو پانچ سال قید کی سزا سنائی جاتی ہے۔ ملزم اس امر سے باخبر تھا کہ آؤشوِٹس کے کیمپ میں ہر روز معصوم انسانوں کو گیس چیمبروں میں قتل کیا جاتا تھا۔‘‘

اس مقدمے کی چار ماہ تک جاری رہنے والی سماعت کے دوران متعدد گواہوں کی طرف سے کئی ایسے ہولناک واقعات کی تفصیلات بیان کی گئی تھیں، جو عشروں پہلے اسی نازی اذیتی کیمپ میں قید رہ چکے تھے۔ اب تک زندہ ان سابقہ قیدیوں نے گواہوں کے طور پر اپنے بیانات میں رقت طاری کر دینے والی جزئیات کے ساتھ عدالت کو بتایا تھا کہ کس طرح دوسری عالمی جنگ کے دور میں اسی کیمپ میں قیدیوں کے طور پر وہ ’جیتے جاگتے ایک جہنم سے گزرے‘ تھے۔

Timeline 2er Weltkrieg Auschwitz wird befreit

آؤشوِٹس کیمپ کے قیدی، یہ تصویر 1945 میں اس کیمپ کی آزادی کے فوراﹰ بعد لی گئی تھی

اس مقدمے میں اب مجرم ثابت ہو جانے والے ملزم ہیننِگ کے خلاف اپنے دستاویزی شواہد میں استغاثہ نے عدالت کو بتایا تھا کہ کس طرح ایس ایس کے ایک نوجوان گارڈ کے طور پر یہ محافظ آؤشوِٹس کیمپ میں اس عمل کی نگرانی کرتا تھا کہ وہاں قیدیوں میں سے کون کون اتنا صحت مند تھا کہ اس سے جبری مشقت لی جاتی اور کس کس کو گیس چیمبرز میں بھیجا جانا ہوتا تھا۔

استغاثہ نے ہیننِگ کے لیے اس کی ضعیف العمری کی وجہ سے چھ سال کی سزائے قید کا مطالبہ کیا تھا جبکہ وکیل صفائی کا موقف تھا کہ ہیننِگ کو بری کیا جانا چاہیے کیونکہ اس نے خود کسی کو کبھی ’نہ قتل کیا تھا، نہ پیٹا تھا اور نہ ہی کسی کا استحصال کیا تھا‘۔

عدالت نے ہیننِگ کو اس کی بزرگی کی وجہ سے پانچ سال کی قید سنائی جبکہ کئی ماہرین کا کہنا ہے کہ سزائے قید کی مدت سے زیادہ اہم بات یہ ہے کہ ہولوکاسٹ کے ایک اور شریک مجرم کو سزا سنا دی گئی ہے اور لاکھوں مقتولین کو پس مرگ اور علامتی طور پر ہی سہی لیکن انصاف مل گیا ہے۔

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات