1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پونے بم دھماکے میں لشکر طیبہ ملوث ہو سکتی ہے، بھارتی حکام

بھارتی حکام نے پونے بم دھماکے میں ملوث گروپ کے بارے میں جزوی معلومات کا عندیہ دیا ہے۔ خبررساں ادارے روئٹرز نے ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ حکام لشکر طیبہ کے ملوث ہونے کے پہلو پر بھی غور کر رہے ہیں۔ تحقیقات جاری ہیں۔

default

دوسری جانب قوم پرستوں نے پونے بم دھماکے میں پاکستان کے ملوث ہونے کا الزام عائد کیا ہے۔ انہوں نے اپنی حکومت پر زور دیا ہے کہ پاکستان کے ساتھ 25 فروری کو ہونے والے مذاکرات منسوخ کر دیے جائیں۔ بھارتیہ جنتا پارٹی نے بھی کہا ہے کہ حکومت پاکستان کے ساتھ آئندہ ہفتے کے مذاکرات پر سنجیدگی سے غور کرے۔

تاہم پاکستانی وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی نے پونے بم دھماکے کی مذمت کی ہے۔ انہوں نے اتوار کو جاری کئے گئے ایک بیان میں بھارت کے ساتھ امن مذاکرات کی بحالی کے لئے اپنی حکومت کی سنجیدگی کا اعادہ بھی کیا۔ نئ دہلی حکام نے پاکستان کے ساتھ مذاکراتی عمل جاری رکھنے کا عندیہ دیا ہے۔

Explosion in Pune, Indien

ممبئی حملوں کے بعد پہلا بڑا دہشت گردانہ حملہ ہے

ہفتہ کی شام پونے میں سیاحوں میں مقبول ایک علاقے میں جرمن بیکری میں ایک بم دھماکہ ہوا، جس کے نتیجے میں نو افراد ہلاک اور 57 زخمی ہوئے۔ ہلاک ہونے والوں میں دو غیر ملکی بھی شامل ہیں، جن میں ایک ایرانی اور ایک اطالوی ہے۔ زخمیوں میں بھی 12غیرملکی ہیں۔

’جرمن بیکری‘ اوشو آشرم کے قریب واقع ہے جبکہ اس کے قریب ہی ایک یہودی عبادت گاہ بھی ہے۔ یہ علاقہ غیرملکیوں میں مقبول ہے۔

یہ دھماکہ نومبر 2008ء میں ممبئی میں ہونے والے حملوں کے بعد بھارت میں ہونے والا پہلا بڑا دہشت گردانہ حملہ ہے۔ ممبئی میں اس وقت دو فائیو اسٹار ہوٹلوں سمیت مختلف مقامات پر حملوں میں 166 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

اِدھر یورپ میں فرانس نے بھی پونے بم دھماکے کی مذمت کی ہے۔

رپورٹ: ندیم گِل/ خبررساں ادارے

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات