1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پولیس ’احمقوں‘ کو ہلاک کر سکتی ہے، فلپائنی صدر

فلپائنی صدر روڈریگو ڈوٹیرٹے نے پیر کے روز ملکی پولیس اہلکاروں سے کہا ہے کہ وہ گرفتاری کے دوران مزاحمت کرنے والے ’احمقوں‘ کو ہلاک کر سکتے ہیں۔

ڈوٹیرٹے کا یہ بیان ایک ایسے موقع پر سامنے آیا ہے، جب سینکڑوں افراد نے ٹین ایجر کی آخری رسومات میں شرکت کی اور منشیات کے خلاف صدر ڈوٹیرٹے کے ’اعلان جنگ‘ پر احتجاج کیا۔

مزاحمت پر ہلاک کرنے سے متعلق یہ بات ڈوٹیرٹے نے ایک علاقائی پولیس سربراہ سے بات چیت میں کہی۔ اس جنوبی فلپائنی علاقے کا ایک میئر انسداد منشیات کے ایک چھاپے کے دوران مارا گیا تھا۔

ڈوٹیرٹے کا کہنا تھا، ’’آپ کی ذمہ داری ہے کہ گرفتاری میں مزاحمت کرنے والے پر آپ قابو پائیں اور اگر وہ پرتشدد ہوں، تو آپ ایسے احمقوں کو ہلاک کر سکتے ہیں۔ یہ آپ کے لیے میرے احکامات ہیں۔‘‘

انہوں نے تاہم کہا کہ پولیس کا قانون کی بالادستی قائم رکھنا ہو گی اور اس آڑ میں کے کسی بھی شخص کو بلاجواز قتل کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

Philippinen Polizeigewalt Beisetzung Kian Delos Santos (Reuters/E. De Castro)

نوجوان لڑکے کی ہلاکت کے بعد پہلی مرتبہ اس انداز کا مظاہرہ دیکھا گیا

واضح رہے کہ گزشتہ برس جون میں منصب صدارت سنبھالنے والے ڈوٹیرٹے نے برسراقتدار آتے ہیں منشیات کے خلاف جنگ کا اعلان کیا تھا اور تب سے اب تک ہزاروں افراد منشیات سے متعلقہ الزامات کے تحت ہلاک کئے جا چکے ہیں۔ فلپائن میں جاری اس سخت کریک ڈاؤن پر عالمی برادری اور انسانی حقوق کی تنظیموں کی جانب سے شدید تنقید بھی کی جا رہی ہے۔

یہ بات اہم ہے کہ فلپائن میں ڈوٹیرٹے حکومت کی اپوزیشن جماعتیں ان اقدامات پر مجموعی طور پر چپ سادھے رہی ہیں، تاہم کیان لوئڈ ڈیلوس سانتوس نامی ایک کم عمر لڑکے کی انسداد دہشت گردی اہکاروں کے ہاتھوں ہلاکت کے بعد عوامی سطح پر سخت ردعمل سامنے آیا ہے۔ اس لڑکے کو 16 اگست کو گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا تھا۔

ہفتے کو اس لڑکے کی آخری رسومات کے موقع پر ایک ہزار افراد جمع ہوئے، تاہم بعد میں یہ اجتماع ایک مظاہرے کی شکل اختیار کر گیا۔