1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

پندرہ کھیل حکومت کی سر پرستی میں

حکومتِ پاکستان نےمستقبل میں صرف پندرہ منتخب کھیلوں کی سرپرستی کرنے کا اعلان کیا ہے۔ یہ فیصلہ پاکستان نے ایتھلیٹس کی عالمی سطح پر مسلسل غیر معیاری کارکردگی کے بعد کیا ہے۔

default

پاکستانی ہاکی ٹیم نے منظور جو نیئر کی قیادت میں آخری بارانیس سو چوراسی میں لاس اینجلس میں اولمپک ٹائٹل اپنے نام کیا تھا

ملک میں کھیلوں کو چلانے والے سب بڑے حکومتی ادارے پاکستان سپورٹس بورڈ نے فیفا فٹبال ہاؤس لاہور میں دو روز تک جاری رہنے والے اہم اجلاس میں عالمی اعزازت کی واپسی کے لیے جو ایکشن پلان تیار کےا ہے اس کے مطابق سرکاری سطح پر صرف پندرہ منتخب کھیلوں کی حوصلہ افزائی کی جائے گی جن میں قومی کھیل ہاکی کے علاوہ،فٹبال ، اسکواش، ٹینس، ایتھلیٹکس ،جوڈو،کبڈی،کراٹے ،ٹیبل ٹینس، تائیکوانڈو، ویٹ لفٹنگ، ریسلنگ، ووشو، باکسنگ اور اسنوکر شامل ہیں۔

پاکستان اسپورٹس بورڈ کے ڈائریکٹر جنرل سیدامیر حمزہ گیلانی نے ڈوئچے ویلے کو بتایا کہ اس وقت چالیس کھیلوں کی فیڈریشنز کا اسپورٹس بورڈ سے الحاق ہے مگر مستقبل میں صرف انہی کھیلوں کی سرپرستی کی جائے گی جن سے عالمی مقابلوں میں میڈل جیتنے کی توقع ہے۔

امیر حمزہ گیلانی کا کہنا تھا کہ چالیس فیڈریشنز میں سرکاری فنڈز کی تقسیم کا کوئی فائدہ نہیں ہو رہا تھا بلکہ بعض ایسے بھی کھیل ہیں جن کی فیڈیشنز گرانٹ تو برابر حاصل کر رہی تھیں مگر وہ مقامی سطح پر مقابلوں کا انعقاد تک کرنا گوارہ نہ کرتی تھیں۔ پیسے کے ضیاع کی روک تھام کے لیے ہم نے کٹیگری کا طریقہ کار متعارف کرایا جس کے لیے کارکردگی کو بنیاد بنایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ابتدائی طور پر یہ تجربہ ایک سال کے لئے کیا جا رہا ہے۔

واضح رہے کہ پاکستانی حکومت کی جانب سے کھیلوں کا سالانہ بجٹ پینتیس کروڑ روپے مختص کیا گیا ہے مگر حیران کن طور پر ساٹھ فیصد بجٹ اسپورٹس بورڈ کے ملازمین کی تنخواہوں اور انفراسٹرکچر پر ہی خرچ ہو جاتا ہے اور باقی چالیس فیصد قسطوں کی صورت میں کھلاڑیوں ، ایونٹس کی تیاریوں اور فیڈیشنوں تک پہنچتا ہے۔

اسپورٹس بورڈ کی طرف سے سب سے زیادہ سالانہ گرانٹ پندرہ لاکھ روپے کی صورت میں پاکستان فٹبال فیڈیشن کو ملتی ہے۔ باکسنگ اور ایتھلیٹکس فیڈیشنوں کو بارہ بارہ لاکھ جبکہ ہاکی فیڈریشن کے حصے میں صرف آٹھ لاکھ روپے کی سرکاری اعانت آتی ہے۔

ایک زمانہ تھا کہ پاکستان کا ہاکی سمیت کئی کھیلوں میں طوطی بولتا تھا ۔نوّے کے عشرے میں پاکستان چار کھیلوں کرکٹ ، ہاکی ، اسکواش اور اسنوکر میں عالمی چمپئن تھا مگر اس کے بعد کی حکومتوں کی عدم دلچسی، فنڈز کی کمی اور منتظمین کے غیر پیشہ ورانہ رویّے کی وجہ سے تمام اعزازت ایک ایک کرکے چھن گئے۔ آج یہ عالم ہے کہ پاکستان کو اولمپکس میں طلائی تمغہ جیتے پچیس برس بیت چکے ہیں ۔ پاکستانی ہاکی ٹیم نے منظور جو نیئر کی قیادت میں آخری بار انیس سو چوراسی میں لاس اینجلس میں اولمپک ٹائٹل اپنے نام کیا تھا جبکہ دو ہزار دومیں باکسر مہراللہ نے آخری مرتبہ بوسان میں پاکستان کو ایشیائی گولڈ میڈل کا حق دار بنوایا تھا۔

اب حکومت کویقین ہے کہ مختص بجٹ منتخب کھیلوں پر خرچ کرنے سے اس سال دسمبر میں بنگلہ دیش میں ہونے والے جنوبی ایشا ئی کھیلوں (ساف گیمز) میں پاکستانی کھلاڑی عمدہ کاکردگی کا مظاہرہ کرسکیں گے۔